ایک مجلس کی تین طلاقیں اور ان کا شرعی حل(اسلامیہ)(147#)

عبد الرحمن کیلانی
مکتبۃ السلام، وسن پورہ، لاہور
110
2200 (PKR)
2 MB

ایک مجلس کی تین طلاقوں کا مسئلہ ایک معرکۃ الآراء مسئلہ ہے –احناف  کے نزدیک مجلس واحد میں تين مرتبه کہا گیا  لفظ طلاق موثر سمجھا جاتا ہے جس کے بعد زوجین کے درمیان مستقل علیحدگی کرا دی جاتی ہے اور پھر اس کے بعد ان کو اکٹھا ہونے کے لیے ایک حل دیا جاتا ہے جس کا نام حلالہ ہے-ایک شرعی چیز کو غیر شرعی چیز کے ذریعے حلال کرنے کا ایک غیر شرعی اور ناجائز طریقہ ہے جس کو اب احناف بھی تسلیم کرنے سے عاری ہیں اور ایسے مسائل کے لیے پھر ایسے لوگوں کی طرف رجو ع کیا جاتا ہے جو اس غیر شرعی امر کو حرام سمجھتے ہیں-مصنف نے اس کتاب میں طلاق کے حوالے سے تمام مسائل کو بالدلائل واضح کر دیا ہے جس پر کوئی عالم بھی قدغن نہیں لگا سکتا-جس میں رسول اللہﷺکے دور میں طلاق کی صورت،مجلس واحد میںتین طلاقوں کا حکم، بعد میں صحابہ کرام کا عمل اور حضرت عمر کے بارے میں بیان کیے جانے والے مختلف واقعات کی اصلیت کی نشاندہی اور مجلس واحد کی تین طلاقوں کے موثر ہونے کے دلائل کی وضاحت کرتے ہوئے قرآن وسنت کی روشنی میں ان کا جواب تحریر کیا گیا ہے-تطلیق ثلاثہ کے بارے میں پائے جانے والے چار گروہوں کا تذکرہ،انکار اور تسلیم کرنے والے علماء کے دلائل کا تذکرہ،تطلیق ثلاثہ سے متعلق  ایک سوال کی وضاحت،مسائل میں باہمی اختلاف کی شدت کی وجہ تقلید کو بھی بڑی وضاحت سے بیان کیا گیا ہے-
 

عناوین

 

صفحہ نمبر

فہرست

 

5

عرض ناشر

 

7

مقدمہ از الشیخ مبشر احمد ربانی صاحب

 

9

عرض مؤلف

 

20

حضرت عمر کا فیصلہ سیاسی تھا یا شرعی

 

23

حضرت عمر کے اس فیصلہ پر پیر کرم شاہ

 

23

حضرت عمر کے اس فیصلے کو سیاسی قرار دینے والے دیگر حضرات

 

24

فیصلہ کی شرعی حثیت کی تعیین میں اختلافات

 

27

قرآنی آیات سے قاری عبدالحفیظ کا استدال

 

30

فائے تعقیب اور ثم کی بحث

 

30

طلاق کی مختلف شکالیں اور ان کے احکام

 

32

عدت کے احکام و مسائل

 

33

عدت کا مقصد

 

34

کوئی عورت عدت کے اندر نکاح کرے تو وہ نکاح باطل ہو گا

 

34

خاوند کا حق رجوع

 

34

طلاق کی شرائط

 

35

احناف کے ہاں طلاق کی اقسام

 

38

امام مالک کے ہاں طلاق کی اقسام

 

40

امام احمد بن حنبل

 

40

امام شافعی

 

40

قاری صاحب کے ہاں طلاق کی صورت

 

41

یک بارگی تین طلاق کی کراہت و حرمت کے قرآنی دلائل

 

41

ایسی حدیث جو ایک مجلس کی تین طلاق کے ایک واقع ہونے پر نص قطعی ہے

 

64

پہلا اعتراض یہ حدیث منسوخ ہے

 

48

دوسرا اعتراض , یہ حکم غیر مدخولہ کا ہے

 

48

تیسرا اعتراض , اس حدیث میں کوئی حکم نہیں بلکہ یہ محض اطلاع ہے

 

49

چوتھا اعتراض , تین طلاقیں کہنے سے مراد محض ایک کی تاکید تھی

 

49

پانچویں اعتراض یہ حدیث غیر مشہور ہے

 

50

چھٹا اعتراض یہ حدیث موقوف ہے

 

51

ساتویں اعتراض , راوی کا فتوی راویت کے خلاف ہے

 

51

آٹھواں اعتراض , یہ حدیث بخاری میں مزکور کیوں نہیں

 

52

نواں اعتراض سنت کی مخالفت اور سیدنا عمر

 

52

دسواں اعتراض اجماع امت

 

53

حدیث رکانہ (مسند احمد ) اور اس پر اعتراضات

 

53

تطبیق ثلاثہ کے ثبوت میں قاری صاحب کی پیش کردہ احادیث

 

56

امام ابن تیمیہ کا فتوی

 

57

لعان کے بعد کی طلاقیں

 

58

لعان جدائی کی شدید تر قسم ہے

 

59

مجوزین تطلیق ثلاثہ کے مزید دلائل اور ان کا حل

 

60

حضرت عمر کا کارنامہ

 

75

تطلیق ثلاثہ کے متعلق چار گروہ

 

76

تطلیق ثلاثہ میں اختلاف کرنے والے اور اختلاف کو تسلیم کرنے والے علماء

 

78

سنت اور جائز کا مسئلہ

 

88

مسلک کی حمایت

 

89

تقلید کی برکات

 

91

طلاق یا بندوق کی گولی

 

92

کچھ آپس کی باتیں

 

93

اختلاف کا اعتراف

 

93

طلاقیں کے درمیان وقف

 

94

دوسرے مسلک پر عمل

 

95

افسوس ناک پہلو

 

97

اختلافات ختم نہ ہونے کی وجہ محض تقلید ہے

 

98

ایک مجلس میں تین طلاقیں دینے والے کی سزا

 

100

سزا کا مستوجب کون ؟

 

102

سزا کیا ہو ؟

 

103

معصیت کو قائم رکھنا بھی معصیت ہےٍ

 

105

حضرت عمر کی ندامت

 

105

تطلیق ثلاثہ کے سلسہ میں ایک سوال اور اس کا جواب

 

105

اس مصنف کی دیگر تصانیف

اس ناشر کی دیگر مطبوعات

ایڈوانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین: 865
  • اس ہفتے کے قارئین: 7034
  • اس ماہ کے قارئین: 46602
  • کل قارئین : 47264960

موضوعاتی فہرست

ای میل سبسکرپشن

محدث لائبریری کی اپ ڈیٹس بذریعہ ای میل وصول کرنے کے لئے ای میل درج کر کے سبسکرائب کے بٹن پر کلک کیجئے۔

رجسٹرڈ اراکین

ایڈریس

        99--جے ماڈل ٹاؤن،
        نزد کلمہ چوک،
        لاہور، 54700 پاکستان

       0092-42-35866396، 35866476، 35839404

       0092-423-5836016، 5837311

       library@mohaddis.com

       بنک تفصیلات کے لیے یہاں کلک کریں