ایک مجلس میں تین طلاقیں اور اُس کا شرعی حل(492#)

حافظ صلاح الدین یوسف
مکتبہ دار الحدیث لاہور
241
7230 (PKR)
7 MB

خاندان اسلامی معاشرے کی ایک بنیادی اکائی شمار ہوتا ہے۔ اگر خاندان کا ادارہ مضبوط ہو گا تو اس پر قائم اسلامی معاشرہ بھی قوی اور مستحکم ہو گا اور اگر خاندان کا ادارہ ہی کمزور ہو تو اس پر قائم معاشرہ بھی کمزور ہو گا۔نکاح وطلاق خاندان کے قیام و انتشار کے دو پہلو ہیں۔ شریعت اسلامیہ میں نکاح وطلاق کے مسائل کو تفصیل سے بیان کیا گیاہے۔ پاکستان میں ا س فقہ حنفی اور اہل الحدیث کے نام سے دو مکاتب فکر پائے جاتے ہیں۔ یہ ایک امر واقعہ ہے کہ فقہ حنفی میں نکاح وطلاق کے اکثر مسائل شریعت اسلامیہ کی صریح نصوص کے خلاف تو ہیں ہی، علاوہ ازیں عقل ومنطق سے بھی بالاتر ہیں جیسا کہ بغیر ولی کے نکاح کو جائز قرار دینا، پہلے سے طے شدہ حلالہ کو جائز قرار دینا، مفقود الخبر کی بیوی کا تقریبا ایک صدی تک اپنے شوہر کا انتظار کرنا، عورت کا خاوند کے طلاق دیے بغیر خلع حاصل نہ کر سکنا اورایک مجلس کی تین طلاقوں کوتین شمار کرنا وغیرہ۔اہل الحدیث کے نزدیک ایک مجلس کی تین طلاقیں ایک ہی شمار ہوتی ہیں جبکہ حنفی مفتیان کرام  ایک مجلس کی تین طلاقوں کا حل حلالہ بتلاتے ہیں جس کے لیے کئی ایک حنفی جامعات اور دارالعلوم اپنی خدمات اس معاشرے میں پیش کر رہے ہیں ۔

بعض حنفی علماء نے حلالہ کی اس قبیح رسم کی بجائے حنفی علماء اور عوام کو اس مسئلے میں اہل الحدیث کے مسلک پر عمل کرنے کا مشورہ دیا ہے کیونکہ وہ کتاب وسنت کے دلائل پر مبنی ہے ۔ حنفی علماء میں سے مولانا سعید احمد اکبر آبادی، مولانا عبد الحلیم قاسمی، مولانا پیر کرم شاہ ازہری اور مولانا حسین علی واں وغیرہ کاموقف یہ ہے کہ ایک مجلس کی تین طلاقوں کو ایک ہی شمار کرنا چاہیے۔ علاوہ ازیں عالم عرب کے جید علماء میں سے سید رشید رضا، شیخ جمال الدین قاسمی، ڈاکٹر وہبہ الزحیلی، ڈاکٹر یوسف القرضاوی، شیخ الأزہر محمود شلتوت اور  سید سابق مصری وغیرہ کا بھی یہی موقف ہے۔بلکہ کئی ایک مسلمان ممالک میں تو تین طلاقوں کو ایک طلاق شمار کرنے کے بارے قوانین بھی نافذ ہوئے ہیں مثلاًمصر میں ۱۹۲۹ء ، سوڈان میں ۱۹۳۵ء، اردن میں ۱۹۵۱ء، شام میں ۱۹۵۳ء، مراکش میں ۱۹۵۸ء، پاکستان میں ۱۹۶۱ء اور عراق میں ۱۹۰۹ء اس بارے کچھ قوانین نافذ ہوئے ہیں۔بعض حنفی علماء یہ دعوی کرتے ہیں کہ ایک مجلس کی تین طلاقوں کو تین ہی شمار کرنے پر اجماع ہے۔ اس اعتراض کا جواب بھی تفصیل سے اس کتاب میں دیاگیا ہے۔ یہ بات درست ہے کہ جمہور علماء کا موقف یہی رہا ہے کہ ایک مجلس کی تین طلاقیں تین ہی شمار ہوں گی لیکن صحابہ، تابعین، تبع تابعین اور ائمہ سلف کے دور میں ہر صدی میں ایسے جید علماء اور فقہاء موجود رہے ہیں جو ایک مجلس کی تین طلاقوں کوایک ہی شمار کرتے رہے ہیں۔ اس کتاب میں مولانا صلاح الدین یوسف حفظہ اللہ تعالیٰ نے نہایت خوبصورتی سے اس مسئلے کا شرعی حل اور اس پر کیے جانے والے اعتراضات کا جواب دیا ہے۔امر واقعہ یہ ہے کہ اب حنفی عوام اپنے مفتیان کرام پر چیخ رہے ہیں اور ببانگ دہل یہ کہتے نظر آتے ہیں کہ حلالے کا حل بتلانے سے بہتر ہے ہمارا سر پھوڑ دو لیکن خدا راہ ہمیں حلالے کی طرف نہ ڈالو۔ ایسے میں اس طرح کے پریشان حنفی عوام کے سامنے کتاب وسنت کی روشنی پر مبنی یہ تحقیقات رکھنی چاہییں تاکہ وہ اپنی زندگی کتاب وسنت کے مطابق کر تے ہوئے فقہی جمود پر مبنی بوجھوں سے اپنی گردنیں آزاد کروا سکیں۔

عناوین

 

صفحہ نمبر

عرض ناشر

 

12

عرض مؤلف

 

17

مردکا حق طلاق اور اس کے آداب

 

20

عورت کے ساتھ نباہ کرنے کا طریقہ

 

20

عورت کی ایک فطری کمزوری کا لحاظ رکھنے کا ہدایت

 

22

وعظ و نصیحت،علیحدگی اور کچھ گوشمالی

 

23

حکمین (دو ثالث) مقرر کرنے کی تلقین

 

24

طلاق دینے کے آداب

 

25

ایک طلاق کے فوائد

 

26

مروجہ حلالہ قطعاً حرام اور ناجائز ہے

 

26

بیک وقت تین طلاقیں دینے کے نقصانات

 

30

طلاق مرد کا حق ہے

 

31

عورت کو اللہ نے طلاق کا حق نہیں دیا

 

31

مسئلہ طلاق ثلاثہ اور اس کی نوعیت

 

34

صحیح طریقہ طلاق اختیار کا فائدہ

 

34

قرآنی دلیل

 

36

احادیث سے استدلال

 

37

متعدد حنفی علماء کے اعترافات

 

38

مسئلہ طلاق ثلاثہ میں بعض حضرات کے دعاوی اور ان کی حقیقت

 

41

دعویٰ: 1

 

43

’’ایک مجلس میں دی گئی تین طلاقوں کو تین ہی شمار کرنے کا فتویٰ حضرت عمر نے دیا تھا‘‘

 

 

حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا فتویٰ

 

43

فتاویٰ فاروقیہ کی حقیقت

 

44

حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا اظہار ندامت

 

49

حقیقت دعوائے اجماع

 

49

ایک طلاق پراجماع قدیم

 

50

دعویٰ: 2

 

54

کسی صحابی و تابعی نے حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے فتوے سے اختلاف کیا ہو۔ احناف کا دعویٰ یہ ہے کہ ایسا نہیں ہوا، کسی کا اختلاف ہمارے علم میں نہیں۔

 

 

صحابہ و تابعین کے فتوے

 

54

شیخ الاسلام امام ابن تیمیہ رحمہ اللہ

 

54

حافظ ابن القیم رحمہ اللہ

 

55

علامہ ابوحیان اندلسی

 

55

امام نظام الدین قمی نیشاپوری

 

56

حافظ ابن حجر رحمہ اللہ

 

56

امام عینی حنفی رحمہ اللہ

 

58

امام نووی رحمہ اللہ

 

58

امام طحاوی حنفی

 

59

مولانا عبدالحئ حنفی

 

60

امام قرطبی رحمہ اللہ

 

60

امام رازی رحمہ اللہ

 

61

قاضی ثناء اللہ حنفی پانی پتی

 

61

علامہ آلوسی بغدادی

 

62

امام شوکانی

 

62

ابن رُشد

 

65

عصر حاضر کے علمائے عرب:

 

68

علامہ سید رشید رضا مصری رحمہ اللہ

 

70

شیخ جمال الدین قاسمی رحمہ اللہ

 

71

ڈاکٹر وہبہ زحیلی (شام)

 

72

سید سابق مصری رحمہ اللہ

 

75

علامہ شیخ محمود شلتوت ، شیخ الازہر (مصر)

 

75

ہند کے علمائے احناف

 

76

سیمینار (مذاکرہ علمیہ) کے چار سوالات

 

77

مولانا شمس پیرزادہ (بمبئی)

 

78

مولانا سید احمد عروج قادری (ایڈیٹر ماہنامہ ’’زندگی‘‘ رام پور، بھارت)

 

81

مولانا محفوظ الرحمٰن قاسمی، فاضل دیوبند

 

83

مولانا سعید احمد اکبر آبادی (مدیر ’’برہان‘‘ دہلی)

 

98

مولانا سید حامد علی (سیکرٹری جماعت اسلامی،ہند)

 

104

مولانا مفتی عتیق الرحمٰن عثمانی (صدر آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت)

 

107

مولانا مفتی کفایت اللہ دہلوی رحمہ اللہ

 

110

مدرسہ امینیہ دہلی کا ایک اور فتویٰ

 

111

مولانا عبدالحئ لکھنوی رحمہ اللہ

 

112

مولانا وحید الدین خان کا تجویز کردہ حل

 

112

مولانا سید سلمان الحسینی الندوی (لکھنؤ بھارت)

 

114

اسلام کا قانون طلاق  ...... از الطاف احمد اعظمی (بھارت)

 

117

نکاح کی حیثیت

 

118

تحفظ نکاح

 

120

قبل طلاق کے مراحل

 

124

قانون طلاق

 

127

طلاق ثلاثہ (تین طلاقیں)

 

134

صحیح طریقہ طلاق

 

139

ایک غلط فہمی کا ازالہ

 

140

سنت کی طرف واپسی

 

141

مسئلہ تطلیقات ثلاثہ فی مجلس واحد ..... از مولانا ابوالحسنات ندوی، رفیق دارالمصنفین

 

146

تصریحات احادیث نبوی

 

154

دوسرے گروہ کے دلائل او ران کاتجزیہ

 

160

پاکستانی علمائے احناف

 

175

مولانا پیر کرم شاہ ازہری (حنفی بریلوی)

 

175

مولانا عبدالحلیم قاسمی

 

179

مکتوب بنام ’’الاعتصام‘‘ بسلسلہ ’’ایک مجلس کی تین طلاق‘‘

 

179

مکتوب ملتان نمبر 1

 

181

مکتوب ملتان نمبر 2

 

184

مولانا حسین علی ، واں بھچراں

 

185

فتویٰ مولانا حسین علی،  واں بھچراں

 

187

مکتوب حافظ حسین احمد قاسمی (جامعہ حنفیہ گلبرگ، لاہور)

 

188

مولانا احمد الرحمٰن (اسلام آباد)

 

189

پروفیسر محمد اکرم ورک (گورنمنٹ کالج، قلعہ دیدار سنگھ)

 

191

ڈاکٹر رضوان علی ندوی (کراچی)

 

199

ڈاکٹر مفتی غلام سرور قادری

 

200

مسئلہ تین طلاق

 

201

فقہی تشدد کے مہلک نتائج

 

203

حکومت کو مشورہ

 

204

قرآن و سنت پر عمل

 

206

عوام کا کوئی مذہب نہیں

 

206

عوام کافائدہ

 

207

علماء کے لیے ہدایات

 

208

مجتہدین کی وسیع الظرفی

 

209

امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ کے قول سے رہنمائی

 

210

مذاہب اربعہ کا متفقہ مؤقف... تاکید کے طور پر تین طلاقیں، ایک ہی طلاق ہے

 

 

فقہ مالکی کا فتویٰ

 

212

فقہ حنبلی کا فتویٰ

 

213

فقہ  شافعی کا فتویٰ

 

214

فقہ حنفی  کا فتویٰ

 

214

مولانا مجیب اللہ ندوی

 

214

مفتی مہدی حسن (سابق صدر مفتی دارالعلوم دیوبند)

 

215

مولاناخالد سیف اللہ رحمانی

 

215

مسلم ممالک میں طلاق کا قانون

 

219

مولانا اشرف علی تھانوی صاحب کا طرزعمل، علمائے احناف کے لیے دعوت غوروفکر

 

220

گزشتہ مباحث کا خلاصہ

 

222

دعویٰ:3

 

224

مسئلہ طلاق ثلاثہ میں احناف کا مذہب ائمہ اربعہ کا مذہب ہے جو اجماع اُمت کے مترادف ہے

 

 

دعویٰ:4

 

232

مسئلہ طلاق ثلاثہ میں اہل حدیث اجماع اُمت سے ہٹ کر شیعوں کے نقش قدم پر ہیں

 

 

حکومت سے گزارش!

 

236

اس مصنف کی دیگر تصانیف

اس ناشر کی دیگر مطبوعات

ایڈوانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین: 2176
  • اس ہفتے کے قارئین: 6333
  • اس ماہ کے قارئین: 30861
  • کل قارئین : 47100812

موضوعاتی فہرست

ای میل سبسکرپشن

محدث لائبریری کی اپ ڈیٹس بذریعہ ای میل وصول کرنے کے لئے ای میل درج کر کے سبسکرائب کے بٹن پر کلک کیجئے۔

رجسٹرڈ اراکین

ایڈریس

        99--جے ماڈل ٹاؤن،
        نزد کلمہ چوک،
        لاہور، 54700 پاکستان

       0092-42-35866396، 35866476، 35839404

       0092-423-5836016، 5837311

       library@mohaddis.com

       بنک تفصیلات کے لیے یہاں کلک کریں