#2489.01

مصنف : قاضی زین العابدین سجاد میرٹھی

مشاہدات : 5087

تاریخ ملت جلد دوم

  • صفحات: 955
  • یونیکوڈ کنورژن کا خرچہ: 23875 (PKR)
(اتوار 26 اپریل 2015ء) ناشر : ادارہ اسلامیات لاہور۔کراچی

تاریخ  ایک  ضروری اور مفید علم  ہے  اس  سے ہم کو دنیا کی تمام نئی اور پرانی قوموں کےحالات معلوم ہوتے ہیں او رہم ان کی ترقی اورتنزلی کےاسباب سے واقف ہوجاتے ہیں ہم جان  جاتے ہیں کہ کس طرح ایک قوم عزت کےآسمان کا ستارہ  بن کر چکمی اور دوسری قوم ذلت کے میدان کی گرد بن کر منتشر ہوگئی۔اور مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ  دنیا میں مذہب اسلام کی ابتداء انسان کی پیدائش کے ساتھ  ہوئی ۔ دنیا میں جس قدر پیغمبر آئے ان  سب نے  اپنی  امت کو اسلام ہی کاپیغام سنایا۔یہ ضرور ہے کہ خدا  کایہ پیغام دنیا کے ابتدائی زمانہ میں اس وقت کی ضرورتوں ہی کے  مطابق تھا جب دنیا نے ترقی کی منزل میں قدم رکھا  اور اس کی ضرورتوں میں اضافہ ہوا تو اللہ تعالیٰ کے آخری نبی محمد عربی ﷺ اس پیغام  کو مکمل صورت میں لے کر آئے۔ عام طور پر اللہ تعالیٰ کے اس مکمل پیغام کو ہی اسلام کہا جاتاہے ۔ اس لیے  تاریخ ِاسلام سے اس گروہ کی تاریخ مراد لی جاتی ہے جس نے اللہ  تعالیٰ کے آخری پیغمبر  حضرت  محمد مصطفیٰﷺ  کے ذریعے اللہ تعالیٰ کے اس  مکمل اسلام کو قبول کیا ۔دنیا  کی اکثر قوموں کی تاریخ ، کہانیوں اور قصوں کی صورت میں  ملتی ہے  ۔ مگر اسلام کی تاریخ  میں یہ بات نہیں ہے ۔ اور مسلمانوں  نے شروع ہی سے اپنی تاریخ کو مستند طور پر لکھا  ہے اور ہر بات کا حوالہ دےدیا ہے  ۔یہی وجہ  ہے کہ دنیا کی تاریخ میں ’’ تاریخ اسلام‘‘ ایک خاص امتیاز رکھتی ہے ۔اسلام کا ماضی اس قدر شاندار ہے کہ دنیا کی کوئی ملت اس کی نظیر پیش نہیں کرسکتی ۔ تاریخ اسلام کے ایک ایک باب میں   حق پرستی، صداقت شعاری ، عدل گستری او رمعارف پروری کی ہزاروں داستانیں پنہاں ہیں ۔ مسلمان بچوں کواگر پچپن ہی سے اپنے اسلاف کےان زریں کارناموں سےواقف کرادیا جائے تووہ  اپنے لیے اور ملک وملت کےلیے  بہت  مفید ثابت ہوسکتے ہیں ۔ زیر نظر کتاب ’’تاریخ ملت ‘‘ تین جلدوں پر مشتمل  جناب مفتی  زین  العابدین سجاد میرٹھی اور مفتی انتظام اللہ شہابی اکبر آبادی  کی تصنیف ہے ۔اس کتاب میں تاریخ عالم  قبل اسلام سے لے کر مغلیہ سنطنت کے آخری تاجدار اور بہادر شاہ ظفر تک ملت اسلامیہ کی تیرہ سوسالہ مکمل تاریخ  ہے ۔ افراد او راقوام کےنشیب  وفراز اور عروج وزوال کی دستانوں پر مشتمل  مفید عام کتاب ہے  جو تاریخ  اسلام کی  بے شمار کتب  سے بے نیاز کردیتی ہے ۔ سلیس زبان عام فہم اور آسان طرزِ بیان، مدارس،سکولوں ، کالجوں اور جامعات کے استاتذہ وطلباء کےلیے یکساں فائدہ مند ہے ۔ہر اچھی لائبریری اور  پڑھے لکھے گھرانے میں رکھنے لائق ہے ۔(م۔ا)
 

عناوین

 

صفحہ نمبر

(5) خلافت عباسیہ

 

27

دعوت بنی عباس

 

28

امامت

 

30

امام ابو ابراہیم محمد عباسی

 

31

نام و نسب

 

31

خاندانی حالات

 

31

ابو ابراہیم محمد کی سوانح حیات

 

32

جانشینی

 

32

ولادت ابو العباس

 

34

نقیب میسرہ کا انتقال

35

فتنہ عمار

 

38

امام ابراہیم عباسی

 

40

وفات بکیر بن ماہان

 

41

ابو مسلم

 

42

ظل وسحاب

 

44

سیاہ لباس

 

45

آغاز جنگ

 

45

خراسان کی سیاسی حالت

 

46

ابن کرمانی و نصر بن سیار

 

47

نصر اور خلیفہ مروان

 

47

خراسان کا انتظام

 

48

جرجان

 

50

افشائے راز

 

51

گرفتاری امام

 

52

جانشینی

 

52

شہادت

 

53

فتنہ ابو مسلم

 

53

امام ابراہیم کی سیرت

 

53

خلیفہ ابو العباس السفاح

 

54

نسب نامہ والدہ سباح

 

55

تعلیم

 

55

سفاح کا ورود کوفہ میں

 

56

سازش

 

56

تخت پرجلوس

 

58

خطبہ

 

59

بیعت خلافت

 

65

انتظام کوفہ

 

65

دمشق کی فتح

 

66

آل مروان سے سیلوک

 

66

ابومسلم کی فتوحات

 

67

وزارت

 

68

واقعہ قتل ابو سلمہ

 

68

عمال سفاح

 

68

بنی امیہ کا قتل عام

 

69

نقباء آل محمد کا قتل

 

71

تحریک رایات ابیض

 

71

سندھ

 

72

محبان اہلبیت کی شورش

 

72

خوارج

 

72

قیصر روم

 

73

فتوحات

 

73

دارالخلافہ

 

74

امن و امان

 

74

انتظام سلطنت

 

75

آثار خیر

 

75

ولی عہدی

 

75

ایک واقعہ

 

76

وفات

 

77

حلیہ

 

78

علمی مذاق

 

78

خلیفہ ابو جعفر عبد اللہ منصور

 

79

ولادت

 

79

والدہ

 

79

تعلیم و تربیت

 

79

خلافت

 

80

بیعت خلافت

 

80

ورود انبار

 

80

خروج عبداللہ بن علی عباسی

 

81

ابومسلم کی باغیانہ روش

 

81

قتل ابو مسلم

 

87

حقیقت حال

 

90

فتنہ سنباد

 

91

عبد اللہ کی موت

 

91

عیسیٰ پر عتاب

 

92

فتنہ راوندیلہ

 

93

بغاوت خراسان

 

93

واقعات سندھ

 

94

اصبہند کا طبرستانیوں پر ظلم

 

95

دعوت آل ہاشم

 

95

ظہور

 

99

منصور کا خط نفس ذکیہ کےنام

 

100

نفس ذکیہ کا جواب

 

101

جوا ب الجواب منجانب منصور عباسی

 

104

قیام حکمرانی

 

110

رزم و پیکار

 

111

امام مالک بن انس پر ظلم و جور

 

112

ابراہیم بن عبد اللہ حسنی کا ظہور

 

113

امام اعظم ابو حنیفہ کی اعانت

 

114

امام ابوحنیفہ 

 

116

بغداد کی بنا و تاسیس

 

117

خوارج کی شوریدہ سری

 

119

مدعی نبویت کی فتنہ انگیزی

 

120

ولی عہد

 

120

منصور کی وفات

 

120

منصور کا نظام مملکت

 

120

دار الخلافہ

 

122

ملکی نظام

 

123

انتخاب قاضی

 

123

فوجی تنظیم

 

124

دفاتر

 

125

محکمہ جاسوسی

 

126

محکمہ برید

 

126

بیدار مغزی

 

127

خبروں کاانتظام

 

128

نظام جاگیرداری

 

128

نظام مالیات

 

128

ترقی زراعت

 

128

اصول حکمرانی

 

128

معمولات

 

129

کتب احادیث وفقہ کی تدوین

 

131

فارسی کتب کے تراجم

 

132

تراجم

 

133

قدر دانی

135

علم انشاء کی ایجاد

 

136

سیرت

 

136

زہد و ورع

 

136

انصاف پسندی

 

137

ایک قابل ذکر واقعہ

 

138

معدلت گستری

 

139

عفو و ضبط و تحمل

 

141

ضبط وتحمل

 

141

سخت گیری

 

142

زہد و قناعت

 

146

عطا و بخشش

 

147

لہو ولہب سےنفرت

 

149

سلامت طبع

 

149

سادگی

 

150

عہد منصور کےجلیل القدر علماء

 

150

خلیفہ ابو عبداللہ محمد مہدی

 

152

تعلیم و تربیت

 

152

سوانح

 

153

بیعت خلافت

 

154

نظم مملکت

 

154

رفاہ عام کے کام

 

154

محکمہ برید

 

154

بیدار مغزی

 

155

محکمہ حساب

 

155

وقف

 

155

قیدیوں کےعیال کی خبر گیری

 

156

فتنہ زنادقہ

 

157

جنگیں

 

158

ہند پر حملہ

 

159

وزارت

 

159

سیرت مہدی

 

160

حج

 

161

فتنہ وضع حدیث

 

161

تصنیف وتالیف کا سلسلہ

 

164

علم الکلام

 

164

ولی عہد

 

164

وفات

 

165

اولاد

 

165

اتہام

 

166

علماءو عہد

 

166

خلیفہ الہادی ابومحمد موسیٰ

 

167

تعلیم وتربیت

 

167

ولی عہدی

 

167

بیعت خلافت

 

167

حسین بن علی کا ظہور

 

168

حمزہ بن مالک خارجی کی بغاوت

 

169

رومیوں سےمعرکہ

 

169

سیرت

 

169

نظام مملکت

 

170

رعایا نوازی

 

170

شعر وشاعری

 

170

صلہ گستری

 

171

اوصاف

 

171

فیاضی

 

171

ملحدوں کا دشمن

 

171

خلیفہ ہادی کی حریصانہ مساعی

 

172

ہادی کی موت

 

173

شہنشاہ اعظم ابو جعفر

 

174

ہارون الرشید

 

174

نام و نسب

 

174

ولادت

 

174

تعلیم و تربیت

 

174

شاعری

 

175

ولی عہدی

 

175

ہارون الرشید کی خلافت

 

175

والیان صوبہ جات

 

177

مکہ معظمہ

 

177

مدینہ منورہ

 

178

کوفہ

 

178

بصرہ

 

178

خراسان

 

178

افریقہ

 

178

سندھ

 

178

امین و مامون کی ولی عہدی

 

178

ملکی بغاوتیں

 

179

فتنہ خوارج

 

180

فتوحات

 

180

وقائع

 

183

وسعت سلطنت

 

183

خراج

 

184

عسکری قوت

 

184

فوجیوں سے سلوک

 

184

جزیہ

 

185

بغداد

 

185

وزارت عظمیٰ

 

186

محفل عیش و طرب

 

188

وفات

 

192

اثاثہ

 

192

مرثیہ

 

193

سیرت

 

193

مذہبیت

 

194

خیرات و مبرات

 

194

بزرگان دین سے عقیدت

 

195

ہارون اور سفیان ثوری

 

195

جواب

 

195

خلیفہ ہارون الرشید اور ابن سماک

 

196

رقت قلبی

 

197

رسول اللہ ﷺسے عشق

 

198

خلق قرآن

 

198

علماء کی قدر دانی

 

199

شجاعت و تہور

 

199

اخلاقی حالت

 

199

ایک قابل ذکر واقعہ

 

200

امین و مامون

 

200

تادب

 

201

بیت الحکمت

 

201

کتب خانہ

 

202

علم لغت

 

203

علم متن لغت

 

203

علم عروض

 

203

شعر و شاعری

 

205

موسیقی

 

205

محکمہ جات

 

206

دفاتر

 

206

صوبہ ثفور

 

206

لگان

 

207

رعایا کی خبر گیری

 

207

عہد ہارون الرشید کے علماء

 

207

چند مشاہیر کے مختصر حالات

 

208

حکمائے ہنود

 

209

خلیفہ محمد امین ابو عبد اللہ

 

211

نام

 

211

تعلیم وتربیت

 

211

وقائع

 

211

موسیٰ کی ولی عہدی

 

212

خانہ جنگی

 

212

قتل امین

 

217

سیرت امین

 

218

حسب ذیل علماء نے اس کے زمانےمیں وفات پائی

 

219

محدثین و فقہاء

 

219

خلیفہ عبد اللہ المامون عباسی

 

222

نام ونسب

 

222

ولادت

 

222

ولی عہدی

 

223

خلافت

 

223

ابن طباطبا کا ظہور

 

224

واقعہ قتل ہرثمہ

 

226

خلافت ابراہیم عباسی

 

228

عام حالات اور سوانح

 

229

مامون کا داخلہ بغداد

 

230

جنرل طاہر بن حسین

 

231

بغاوت زط

 

232

بغاوت افریقہ

 

233

بغاوت مصر و اسکندریہ

 

234

موصل

 

235

فتوحات ملکی

 

236

روم پر حملے

 

237

فتوحات

 

238

نظم مملکت

 

239

وسعت سلطنت

 

239

خراج

 

239

ممالک

 

240

فوجی نظام

 

240

فوج متطوعہ

 

241

دربار

 

241

وزارت عظمیٰ

 

242

فضل بن سہل

 

242

حسن بن سہل

 

243

ثابت بن یحییٰ

 

244

ابن سوید

 

244

کاتب

 

244

معدل

 

245

محکمہ احتساب

 

246

قیام عدل

 

247

سیرت و اخلاق

 

249

حلم و عفو

 

250

تواضح و خاکساری

 

252

سخاوت

 

253

عیش وعشرت

 

254

راسخ الاعتقادی

 

255

اعتزال

 

256

مامون کا علمی ذوق وشوق

 

256

فقہ وحدیث پر نظر

 

259

مامون کا حافظہ

 

260

ادبیت

 

261

نثر

 

261

بیت الحکمت

 

262

مترجمین بیت الحکمت

 

262

ریاضی وہئیت داں

 

265

جغرافیہ

 

267

رصد خانہ

 

267

علمی دربار

 

268

شعراء

 

271

ادباء

 

271

بعض دیگر مشاہیر

 

271

مسئلہ خلق قرآن اور مامون

 

273

خلیفہ المعتصم باللہ عباسی

 

282

تعلیم و تربیت

 

282

خلافت

 

282

انہدام طوانہ

 

283

بابک خری کا انجام

 

284

منکجور باغی کا انجام

 

288

بغاوت مبرقع

 

289

فتوحات

 

290

فتح عموریہ

 

290

عباس بن مامون کی بغاوت اور اس کی موت

 

295

اولاد مامون سے سلوک

 

297

عروج اتراک

 

297

تعمیر سامرا

 

297

نظام مملکت

 

297

فوج کانظم

 

299

ایک واقعہ

 

300

محاصل

 

300

زراعت کی ترقی

 

301

علمی ترقی

 

301

معتصم کے معاصر علماء

 

301

شعر گوئی

 

302

سخاوت

 

302

وزرائے عظام

 

302

فضل بن مروان

 

302

احمد بن عمار

 

303

محمد بن عبدالملک الزیات

 

304

قاضی القضاۃ احمد بن داؤد

 

305

ایتاخ

 

306

اشناس

 

306

ولی عہدی

 

307

وفات

 

307

اقوال

 

308

سیرت و اخلاق

 

308

اوصاف

 

308

قوت وشجاعت

 

308

فصاحت و شجاعت

 

308

سادگی اور بے تکلفی

 

309

حسن و خلق

 

309

معتصم اور لکڑ ہارا

 

309

حلیہ

 

310

فتنہ خلق قرآن

 

310

دیگر مشاہیر

 

314

خلیفہ ہارون الواثق باللہ

 

316

نام و نسب

 

316

تعلیم و تربیت

 

316

خلافت

 

316

تخت و تاج

 

316

ترکوں پرنظر عنایت

 

317

قبسیوں کی بغاوت

 

317

ایک قابل ذکر واقعہ

 

318

گورنروں کاتقرر

 

318

اعراب حجاز کی شورش

 

319

بغاوت بنو نمیر

 

320

محدث احمد بن نصر کا خروج

 

321

مختلف واقعات

 

323

جہاد

 

324

خوارج کا فتنہ

 

325

اصفہان کےکرد

 

325

فتوحات

 

325

وزارت

 

325

رفاہ عام

 

326

خیرات و مبرات

 

326

خلق و تواضع

 

326

قدر دانی وصلہ گستری

 

326

علمی مجلس

 

327

فن موسیقی سےلگاؤ

 

327

آزاد خیالی

 

328

مسئلہ خلق قرآن

 

328

قاضی ابی داؤد کا زوال

 

328

وفات

 

329

حلیہ

 

329

آثار و اثق

 

330

بیمارستان

 

330

علمی ترقی

 

330

فتنہ وضع حدیث

 

331

اسماء الرجال کی پہلی تصنیف

 

333

علوم عقلیہ

 

333

المسالک و الممالک

 

334

مؤرخین

 

334

ہمعصر علماء

 

335

(6) خلافت بنی عباس

 

337

خلیفہ المتوکل علی اللہ جعفر

 

338

نام ونسب

 

338

تعلیم وتربیت

 

338

خلافت

 

338

نظام عمال

 

339

احیاء سنت

 

339

ہلاکت ابن زیات

 

340

ابن بعیث کی بغاوت

 

340

فتنہ محمود بن فرخ نیشاپوری

 

341

دولت یعفریہ

 

342

رومیوں کا حملہ مصر پر

 

343

اہل حمص کی بغاوت

 

343

مسلمان قیدیوں کا تبادلہ

 

344

فتوحات

 

345

فتح قصر یانہ

 

346

سندھ

 

348

ولی عہدی کا مسئلہ

 

348

علوئین

 

349

متوکل کا واقعہ قتل

 

350

سیرت

 

350

مذہب

 

351

عیش وعشرت

 

351

سخاوت

 

352

فیاضی میں اعتدال

 

352

مسلمان قیدیوں کاتبادلہ

 

352

نظم مملکت

 

353

عمال کی تفصیل

 

353

پولیس

 

353

وزارت

 

353

قاضی القضاۃ

 

353

نظام مالیات

 

354

رعایا سے سلوک

 

354

عدل

 

355

روا داری

 

355

ملک کی آسودہ حالی

 

355

رشوت ستانی

 

356

رفاہ عام

 

356

خزانہ

 

356

فوج

 

357

سامرہ

 

357

جعفریہ کی تعمیر

 

357

خلق قرآن

 

358

علمی ترقی

 

359

اشاعت علوم دینی

 

360

علوم عقلیہ کی ترقی

 

362

حکیم

 

362

علم تاریخ

 

362

جغرافیہ

 

362

حیاتیات

 

363

کتب خانہ

 

363

بیت الحکمت

 

363

علماء معاصرین

 

364

محدث وفقہاء

 

364

ملوک طاہریہ

 

365

دولت ہباریہ

 

367

خلیفہ محمد بن جعفر الملقب بہ منتصر باللہ

 

368

نام و نسب

 

368

بیعت خلافت

 

368

وقائع

 

368

فتوحات

 

369

وزارت

 

369

منصب قضاۃ

 

369

صفات منتصر

 

370

حلیہ

 

370

واقعہ عبرت

 

370

باپ کے قتل کا غم

 

371

وفات

 

371

خلیفہ مستعین باللہ

 

372

نام ونسب

 

372

بیعت خلافت

 

372

علوئین

 

372

رومی سرحد

 

373

نظم مملکت

 

374

وزراء

 

374

قضاۃ

 

374

وقائع

 

374

مستعین کی معزولی

 

375

قتل مستعین

 

376

حلیہ

 

376

اوصاف

 

376

علماء معاصر

 

377

خلیفہ ابو عبداللہ

 

378

نام ونسب

 

378

تعلیم و تربیت

 

378

وزارت

 

378

علوئین

 

378

نائب سلطنت

 

379

مغاربہ اور اتراک

آن لائن مطالعہ وقتی طور پر موجود نہیں ہے - ان شاءالله بہت جلد بحال کر دیا جائے گا

اس کتاب کی دیگر جلدیں

اس مصنف کی دیگر تصانیف

اس ناشر کی دیگر مطبوعات

ایڈ وانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین 2479
  • اس ہفتے کے قارئین 17049
  • اس ماہ کے قارئین 31111
  • کل قارئین65947685

موضوعاتی فہرست