تیرتی قبر ؟(3642#)

ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر
دار السلام، لاہور
50
1000 (PKR)
4.2 MB

سیدنا یونس اللہ کے نبی تھے۔ آپ کے نام پر قرآن پاک میں پوری ایک سورت ہے۔ آپ کی قوم نہایت سرکش تھی۔ سالوں کی تبلیغ کے باوجود جب آپ کی قوم نے اللہ کی وحدانیت کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا تو آپ نے اُن کو اللہ کی طرف سے سخت عذاب کی نوید دی، جس پر اُس قوم کے سرکش لوگوں نے حضرت یونس کی باتوں کا مذاق اُڑاتے ہوئے کہا کہ “اگر تمہارے خدا کی طرف سے عذاب آنے والا تو تم ہمیں اُس کا وقت بتاؤ، جس پر حضرت یونس نے اُنہیں چالیس دن کے بعد عذابِ الٰہی کی خبر دی جوکہ اللہ کو ناگوار گزری کیونکہ اللہ نے اُس قوم کو عذاب سے ڈرانے کے لئے ہدایت کی تھی نہ کہ عذاب نازل کرنے کا وقت بتانے کی۔ دوسرے نادانی اُس وقت ہوئی کہ جب حضرت یونس عذاب کی نوید دینے کے بعد اُس وطن کو ترک کرکے چلے گئے اس دوران آپ کو اندازہ ہوگیا کہ رب تعالٰی کسی بات پر آپ سے ناراض ہوگیا ہے۔ جب آپ ایک کشتی میں سوار ہوئے تو کشتی کو طوفان نے گھیر لیا۔ اُس وقت کے رواج کے مطابق کشتی کے ملاح اور دوسرے مسافر اس نتیجے پر پہنچے کہ اس کشتی میں کوئی اللہ کا نافرمان بندہ سوار ہے، جس کی وجہ سے تمام کشتی والوں کو اس طوفان کا سامنا ہے۔ جس پر حضرت یونس نے اُن سے کہا کہ مجھے دریا میں پھینک دو، تم کو اس طوفان سے نجات مل جائے گی لیکن کشتی والوں نے کہا کہ آپ تو اللہ کے نبی اور نیک بندے ہیں، آپ کو کیسے دریا بُرد کیا جاسکتا ہے۔ آخر سب اس نتیجے پر پہنچے کہ قرعہ کرلیتے ہیں، جس کا نام نکل آئے گا، اُس کو دریا بُرد کردیا جائیگا۔ قرعہ کے نتیجے میں بھی حضرت یونس کا نام نکلا، دوبارہ قرعہ نکالا گیا، پھر حضرت یونس کا نام نکلا، بالآخر جب تیسری بار بھی قرعہ میں حضرت یونس کا نام نکلا تو حضرت یونس نے اُن سے اصرار کیا کہ اُنہیں دریا بُرد کردیا جائے۔ بالآخر آپ کو دریامیں ڈال دیا گیا۔ دریا میں آپ کو ایک عظیم القامت مچھلی نے نگل لیا اور آپ تقریباً چالیس روز تک اُس مچھلی کے پیٹ میں رہے۔ چالیس دن کے بعد آپ نے رب تعالٰی سے یہ کلمات پڑھ کر لا اله الا أنت سبحانك اني كنت من الظالمين معافی مانگی۔جب حضرت یونس نے مندرجہ بالا کلمات پڑھ کر رب سے معافی مانگی تو آپ کی معافی قبول کرلی گئی اور اُس مچھلی نے آپ کو ساحل پر اُگل دیا لیکن مچھلی کے پیٹ میں رہنے کے سبب، بہت کمزور اور ناتواں ہوگئے تھے۔ ۔ اللہ تبارک و تعالٰی کے حکم سےآپ کے رزق کے لئے وہاں ایک بیل اُگ گئی ۔ زیر تبصرہ کتاب’’ تیرتی قبر‘‘ ڈاکٹر محمد افتخار کھوکھر کی کاوش ہے۔جس میں انہوں نے مچھلیوں کے متعلق اہم معلومات اوران کی اقسام اور مچھلیوں کے حوالے مختلف تاریخی واقعات بالخصوص سیدنا یونس کا واقعہ کہ جب وہ اپنی قوم سےناراض ہوکر چلے گئے تو انہیں چالیس روز تک مچھلی کے پیٹ میں رہنا پڑا۔ مصنف نےاس واقعہ کو ایک دلچسپ کہانی کی صورت میں بیان کیا ہے۔(م۔ا)

عناوین

 

صفحہ نمبر

دیباچہ

 

5

اس مصنف کی دیگر تصانیف

اس ناشر کی دیگر مطبوعات

ایڈوانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین: 543
  • اس ہفتے کے قارئین: 4720
  • اس ماہ کے قارئین: 24013
  • کل قارئین : 47703971

موضوعاتی فہرست

ای میل سبسکرپشن

محدث لائبریری کی اپ ڈیٹس بذریعہ ای میل وصول کرنے کے لئے ای میل درج کر کے سبسکرائب کے بٹن پر کلک کیجئے۔

رجسٹرڈ اراکین

ایڈریس

        99--جے ماڈل ٹاؤن،
        نزد کلمہ چوک،
        لاہور، 54700 پاکستان

       0092-42-35866396، 35866476، 35839404

       0092-423-5836016، 5837311

       library@mohaddis.com

       بنک تفصیلات کے لیے یہاں کلک کریں