کل کتب 83

دکھائیں
کتب
  • 81 #609.01

    مصنف : حبیب الرحمن

    مشاہدات : 42400

    پسندیدہ اخلاق۔2(مطالعہ حدیث کورس)

    (اتوار 03 فروری 2013ء) ناشر : دعوۃ اکیڈمی بین الاقوامی یونیورسٹی، اسلام آباد

    انیسویں اور بیسویں صدی میں غیر مسلم مستشرقین Goldzehar اور Guillau me وغیرہ نے دین اسلام کے دو بنیادی ماخذ میں سے ایک کو موضوع تحقیق بناتے ہوئے مغربی ذرائع علم اور اپنے زیر تربیت مسلم محققین کو بڑی حد تک یہ بات باور کرا دی کہ حدیث کی حیثیت ایک غیر معتبر تاریخی بلکہ قیاسی بیان کی سی ہے، اس میں مختلف محرکات کے سبب تعریفی و توصیفی بیانات کو شامل کر لیا گیا ہے اور بہت سی گردش کرنے والی افواہوں کو جگہ دے دی گئی ہے۔ اس سب کے پیچھے یہ مقصد کار فرما تھا کہ دینی علوم سے غیر متعارف ذہن اس نہج پر سوچنا شروع کر دے کہ ایک مسلمان کے لیے زیادہ محفوظ یہی ہے کہ وہ قرآن کریم پر اکتفا کر لے اور حدیث کے معاملہ میں پڑ کر بلاوجہ اپنے آپ کو پریشان نہ کرے۔ اس غلط فکر کی اصلاح الحمد للہ امت مسلمہ کے اہل علم نے بروقت کی اور اعلیٰ تحقیقی و علمی سطح پر ان شکوک و شبہات کا مدلل، تاریخی اور عقلی جواب فراہم کیا۔ دعوۃ اکیڈمی اسلام آباد کی جانب سے مطالعہ حدیث کورس ایک ایسی کوشش ہے جس میں مستند اور تحقیقی مواد کو سادہ اور مختصر انداز سے 24 دروس میں مرتب کیا گیا ہے۔ اس وقت آپ کے سامنے مطالعہ حدیث کورس کا چودھواں یونٹ ہے۔ جس کا موضوع پسندیدہ اخلاق ہے۔ اس میں احادیث کی روشنی میں وہ اجتماعی محاسن اور خوبیاں بیان کی گئی ہیں جو ایک مثالی اسلامی معاشرے کے قیام کے لیے ناگزیر ہیں۔ یہ تعلیمات مسلمانوں کی ایک عالمگیر برادری قائم کرتی ہیں۔ یہ اس کی برکت ہے کہ کسی بھی دوسرے دین یا نظریہ کے پیروں سے بڑھ کر اخوت و محبت اور اجتماعیت مسلمانوں کے درمیان پائی جاتی ہے۔(ع۔م)
     

  • 82 #3668

    مصنف : ابو یاسر عبد اللہ بن بشیر

    مشاہدات : 6911

    کامل ابواب الصرف

    (جمعہ 16 اکتوبر 2015ء) ناشر : مکتبہ احیاء الشریعہ سیالکوٹ

    اللہ تعالی کاکلام اور  نبی کریم ﷺکی احادیث مبارکہ عربی زبان میں  ہیں اسی وجہ  سے اسلام اور مسلمانوں سے  عربی کا رشتہ مضبوط ومستحکم ہے  عربی اسلام کی سرکاری زبان ہے ۔شریعت اسلامی  کے بنیادی مآخد اسی زبان میں ہیں  لہذا قرآن وسنت اور  شریعت اسلامیہ پر عبور حاصل  کرنےکا واحد ذریعہ عربی زبان ہے  اس لحاظ سے عربی سیکھنا اور  سکھانا   امت مسلمہ  کا اولین فریضہ ہے ۔عربی زبان  سیکھنے کےلیے نحو  وصرف کو بنیادی حیثیت حاصل ہے۔فن صرف علم نحو ہی کی  ایک شاخ ہے  شروع  میں اس کے مسائل  نحو کے تحت  ہی بیان کیےجاتے تھے معاذ بن مسلم ہرّاء  یاابو عثمان بکر بن محمدمزنی  نے  علم صرف کو علم النحو سے الگ کرکے مستقل فن کی حیثیت مرتب ومدون کیا۔ صرف ونحوصرف کی کتابوں کی تدوین وتصنیف میں علماء عرب کےساتھ ساتھ  عجمی علماء بھی   پیش پیش رہے  ۔جب یہ تسلیم کرلیا گیا کہ  تعلیم وتدریس میں  علم وفن کاپہلا تعارف طالب علم کی مادری زبان میں  ہی ہوناچاہیے تو مختلف علاقوں کے  اہل علم  نے  اپنی  اپنی مقامی زبان میں اس فن پر  کئی  کتب تصنیف کیں ۔تاریخ اسلام کا یہ باب  کس قدر عظیم ہے کہ  عربی زبان کی صحیح تدوین وترویج  کا اعزاز عجمی علماء اور بالخصوص کبار علمائے  ہندکے  حصے میں آیا  ہندوستان اور مغل حکمرانوں کی سرکاری زبان فارسی  ہونےکی وجہ سے  ہندی علماء   نے صرف ونحو کی کتب فارسی زبان میں ہی تصنیف کیں پھر رفتہ رفتہ   برصغیر کے باشندوں کے لیے فارسی زبان  بھی اجنبی  ہونے لگی توبرصغیر کے فضلا ءنےاردو میں نحووصرف  کے موضوع پرکتاب النحو، کتاب الصرف،عربی کا معلم کے علاوہ  متعدد کتب لکھیں ان  علماء کرام  کااردو زبان میں صر ف ونحو پر کتابیں لکھنےکا مقصد عربی وزبان وادب کی تفہیم وتسہیل اور اشاعت وترویج ہی تھا کیوں کہ  اگر ابتدائی  طور پرکوئی مضمون  مادری زبان میں ذہن نشین ہوجائے تو پھر اس زبان  میں تفصیل واضافہ کو بخوبی پڑھا  اورسمجھا جاسکتاہے  ۔مدارس میں پڑھنے والے طلباء صرف گردانیں یاد کرنے کےلیے ابواب الصرف کتاب پڑھتے ہیں بعض کتب میں مصادر کاترجمہ فارسی زبان میں  ہے  چونکہ اب فارسی زبان کی طرف قوم کا رجحان  بہت کم  ہوگیا ہے لہذا   طلباء کے لیے معانی  میں مشکل ہوتی ہے ۔ بعض کتب میں لازم  کے ابواب کی  مجہول گرادنوں کی متعدی باب کی مانند لکھ دیاگیا ہے جو کہ صرفی طور غلط ہے ۔ محترم جناب  ابو یاسر عبد اللہ بن بشیر ﷾ نے  زیر تبصرہ کتاب’’ کامل ابواب الصرف‘‘ مرتب کی ہے جس میں انہوں نے  طلباء کی سہولت  وبہتری کےلیے  زیادہ ترمادے قرآن اور حدیث سے لیے ہیں تاکہ قرآ ن وحدیث کے زیادہ سے زیادہ الفاظ کا ذخیرہ جمع ہوسکے ۔قرآن وحدیث  سے اخذ کیے ہوئے مادے کے ساتھ آیت وحدیث کا ٹکڑا لکھا  ہے۔تمام ابواب کی  گردانیں مکمل کیں ہیں۔ مرکبات سےتقریباً  ہر قسم کاباب بنایا ہے۔ہر مصدر کا  ترجمہ اردو زبان میں کیاہے۔ مہموز ، مضاعف اور معتل کےقواعد لکھے  اور صیغوں کی تعلیلات کیں ہیں الغرض یہ کتاب ابواب الصرف اورعلم الصرف کی گردانیں بنانے کے طریقے ،مہموز، مضاعف اورمعتل کےقواعد اور صیغوں کی تعلیل کرنے  کےطریقوں کوجمع کرنےوالی ہے۔اللہ تعالیٰ مصنف کی اس کاوش کو  قبول فرمائے اور اسے  طلبہ وطالبات دینیہ کےلیے نفع بخش بنائے (آمین) (م۔ا)

  • 83 #1081

    مصنف : عبد الستار خاں

    مشاہدات : 20508

    کلید جدید برائے عربی کا معلم - حصہ اوّل

    dsa (بدھ 18 جنوری 2012ء) ناشر : قدیمی کتب خانہ، کراچی

    ’’کلید جدید‘‘اور ’’عربی کا معلم‘‘ ہر دو کتابچے مولوی عبدالستار خان کی تصنیفی مساعی میں سے ہیں اول الذکر کتابچہ چار مختصر  اجزاء پر مشتمل ہے جو ثانی الذکر کے چار اجزاء کی توضیح اور تحلیل ہے۔ جس طرح مقفل چیز کو کھولنے کے لیے کنجی کی ضرورت ہوتی ہے بعینہ جو شخص عربی کے معلم سے کماحقہ استفادے کا خواہش مند ہے اس کے پاس کلید جدید کا ہونا بہت ضروری ہے ۔خاص طور پر وہ شائقین جو بطور خود عربی سیکھنا چاہتے ہوں یا مدارس میں تعلیم پانے والے وہ ذہین اور شائق طلبہ جو اپنا مطالعہ مدرسہ کی محدود تعلیم سے آگے بڑھانا چاہتے ہوں ہر دو گروہوں کے پاس کلید جدید کا ہونا از بس لازمی ہے ۔عربی کے معلم (چار اجزاء)میں جو مشقیں عربی سے اردو اور اردو سے عربی بنانے کے لیے پیش کی گئی ہیں ان کو ’’کلید جدید‘‘کے چاروں اجزاء میں حل کردیا گیا ہے ۔نیز بعض مشکل سوالات کے جوابات اور مختلف مضامین ، خطوط اور مشکل اقتباسات کا ترجمہ بھی اس میں لکھ دیا گیا ہے ۔تاکہ طالبین اور شائقین اپنے کام کی صحت او رغلطی کو جانچ سکیں۔’’کلید جدید‘‘عربی زبان وادب کے شائقین میں تفہیم عربی کی استعداد پیدا کرنے کے لیے ایک مفید تر اور معاون کتابچہ ہے جس سے صرف نظر برتنا بہر حال مبتدی طلبہ کے لیے کسی طور پر ٹھیک نہیں ہے۔(آ۔ہ)
     

< 1 2 3 4 5 6 7 8 9 >

ایڈ وانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین 1865
  • اس ہفتے کے قارئین 13562
  • اس ماہ کے قارئین 51956
  • کل قارئین49428008

موضوعاتی فہرست