حافظ عمران ایوب لاہوری

1 1 1 1 1 1 1 1 1 1
حافظ عمران ایوب لاہوری
    title-pages-200-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    ایک واعظ اور خطیب کی ذمہ داری ہے کہ وہ احادیث صحیحہ کا التزام کرے اور ضعیف احادیث سےاستدلال نہ کرے۔ لیکن ہمارے ہاں تو بہت سے فرقوں کا مدار ہی ضعیف اور موضوع روایات پر ہے۔ حافظ عمران ایوب لاہوری نے مشہور ضعیف احادیث کو عوام و خواس کے سامنے کتابی شکل میں پیش کرنے کا جو سلسلہ شروع کیا ہے، یہ کتابچہ اس سلسلہ کا دوسرا حصہ ہے جس میں 200 مشہور ضعیف احادیث کی نشاندہی کی گئی ہے۔ کتاب کو مرتب کرتے ہوئے محض متن حدیث اور حوالہ نقل کرنے پر ہی اکتفا کیا گیا ہے تاکہ ضعیف احادیث کو ذہن نشین کرنا آسان رہے۔ البتہ حوالہ جات رقم کرتے ہوئے متقدم ائمہ محدثین کی مختلف کتب سے استفادہ کر کے ان کے تحقیقی اقوال بھی نقل کر دئیے ہیں تاکہ کوئی یہ نہ کہے کہ روایات کو ضعیف قرار دینا کوئی نیا کام ہے بلکہ درحقیقت یہ کام پہلے ائمہ سلف کر چکے ہیں۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-300-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    ایک واعظ اور خطیب کی ذمہ داری ہے کہ وہ احادیث صحیحہ کا التزام کرے اور ضعیف احادیث سےاستدلال نہ کرے۔ لیکن ہمارے ہاں تو بہت سے فرقوں کا مدار ہی ضعیف اور موضوع روایات پر ہے۔ حافظ عمران ایوب لاہوری نے مشہور ضعیف احادیث کو عوام و خواس کے سامنے کتابی شکل میں پیش کرنے کا جو سلسلہ شروع کیا ہے، یہ کتابچہ اس سلسلہ کا تیسرا حصہ ہے جس میں 300 مشہور ضعیف احادیث کی نشاندہی کی گئی ہے۔ کتاب کو مرتب کرتے ہوئے محض متن حدیث اور حوالہ نقل کرنے پر ہی اکتفا کیا گیا ہے تاکہ ضعیف احادیث کو ذہن نشین کرنا آسان رہے۔ البتہ حوالہ جات رقم کرتے ہوئے متقدم ائمہ محدثین کی مختلف کتب سے استفادہ کر کے ان کے تحقیقی اقوال بھی نقل کر دئیے ہیں تاکہ کوئی یہ نہ کہے کہ روایات کو ضعیف قرار دینا کوئی نیا کام ہے بلکہ درحقیقت یہ کام پہلے ائمہ سلف کر چکے ہیں۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-400-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    ایک واعظ اور خطیب کی ذمہ داری ہے کہ وہ احادیث صحیحہ کا التزام کرے اور ضعیف احادیث سےاستدلال نہ کرے۔ لیکن ہمارے ہاں تو بہت سے فرقوں کا مدار ہی ضعیف اور موضوع روایات پر ہے۔ حافظ عمران ایوب لاہوری نے مشہور ضعیف احادیث کو عوام و خواس کے سامنے کتابی شکل میں پیش کرنے کا جو سلسلہ شروع کیا ہے، یہ کتابچہ اس سلسلہ کا چوتھا حصہ ہے جس میں 400 مشہور ضعیف احادیث کی نشاندہی کی گئی ہے۔ کتاب کو مرتب کرتے ہوئے محض متن حدیث اور حوالہ نقل کرنے پر ہی اکتفا کیا گیا ہے تاکہ ضعیف احادیث کو ذہن نشین کرنا آسان رہے۔ البتہ حوالہ جات رقم کرتے ہوئے متقدم ائمہ محدثین کی مختلف کتب سے استفادہ کر کے ان کے تحقیقی اقوال بھی نقل کر دئیے ہیں تاکہ کوئی یہ نہ کہے کہ روایات کو ضعیف قرار دینا کوئی نیا کام ہے بلکہ درحقیقت یہ کام پہلے ائمہ سلف کر چکے ہیں۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-500-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    حافظ ابن الصلاح رحمۃ اللہ علیہ  کے نزدیک مجموعہ احادیث میں سے صرف ایک حدیث ایسی ہے جس کو قولی تواتر حاصل ہے جس حدیث کا مفہوم ہے کہ جس نے نبی کریمﷺ پر جان بوجھ کر جھوٹ باندھا وہ اپنا ٹھکانہ جہنم میں بنا لے۔ فلہٰذا خطبا اور واعظین حضرات کو چاہیئےکہ وہ اللہ کے رسولﷺ کی طرف کسی بات کی نسبت کرتے وقت حد درجہ حزم و احتیاط کا مظاہرہ کریں۔ لیکن بہت سے واعظین حضرات ضعیف اور موضوع احادیث سے استنباط و استدلال کرتے ہیں اور مزے لے لے کر ان کو بیان کرتے ہیں۔ اسی کے پیش نظر حافظ عمران ایوب لاہوری نے عام فہم انداز میں ضعیف احادیث کی نشاندہی کا سلسلہ شروع کیا ہے یہ اس سلسلے کی پانچویں کتاب ہے۔ جس میں 500 ضعیف احادیث کو جمع کیا گیا ہے۔ تاکہ عوام و خواص کو ان سے آگاہی حاصل ہو۔ احادیث پر حکم کے لیے امام ابن تیمیہ، ابن قیم، ابن حجر اور شیخ البانی رحمہم اللہ وغیرہ کے کام سے مدد لی گئی ہے۔ (ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں


    title-pages-akhrit-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    اُخروی زندگی ہی ابدی زندگی ہے جو وہاں کامیاب ہوگیا وہ ہمیشہ جنت کی نعمتوں سے لطف اندوز ہوتا رہےگا او ر جو وہاں ناکام ہوا  وہ دوخ میں جلےگا۔ اگرچہ دنیا میں اللہ کاقانون مختلف ہے اور وہ کافرومومن سب کو زندگی کے آخری لمحہ  تک روزی پہنچاتا ہے  لیکن موت کے بعد  دونوں کے  احوال مختلف ہوجائیں گے  جس کا مقصدِ حیات صرف دنیا طلبی ہوگا اسے جہنم کا ایندھن بنادیا   جائے گا اورجو  آخرت کا طلب گار ہوگا اسے جنت کا وارث بنادیا جائے گا۔ اس لیے دنیا میں رہتے ہوئے ہمیشہ اپنی  آخرت ،موت اور حساب کتاب کویادرکھنا چاہیے  اور اسی فکر میں رہنا چاہیے کہ میں نے جہنم  سے بچاؤ اور جنت میں داخلے کے لیے  کیا عمل کیے  ہیں ۔ زیر نظر کتاب ’’آخرت کی کتاب‘‘ فاضل نوجوان ڈاکٹر حافظ  عمران ایوب لاہوری  ﷾کی تصنیف ہے۔موصوف اسکے علاوہ  بھی کئی کتب  کےمصنف ہے ہیں ۔ اس کتاب میں  موصوف نے نفخِ صور ، روز جزا حساب کتاب، قصاصِ مظالم ،نامہ اعمال ،میزان،شفاعت، حوضِ کوثر،پل صراط جنت کی صفات ، جنت کی نعمتیں،جنت میں لے جانےوالے اعمال، عذابِ جہنم ،جہنم کے اوصاف اور آتشِ جہنم سےبچانے والے اعمال جیسے مضامین کو موضوع بحث بنایا ہے۔ اس کتاب کی ایک  اہم  خوبی یہ ہے کہ  اس میں تخریج وتحقیق کا  خصوصی اہتمام کیا گیا ہے اور تمام دلائل کو حوالہ جات کےساتھ مزین کیاگیا ہے اور شیخ البانی کی تحقیق سے بھی خوب استفادہ کیا گیا ہے۔اللہ تعالیٰ مصنف کی اس کاوش  کو  قبول فرمائے اور یہ کتاب  امت مسلمہ کےلیےاپنی آخرت کو بہتر بنانےکا مفید ذریعہ ثابت ہو۔(آمین) (م۔ا)

    title-pages-aulaad-aur-waaledain-ki-kitaab
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    اللہ تعالیٰ نے اولاد و والدین کے حقوق و فرائض الگ الگ متعین فرما دئیے ہیں۔ جن کو پیش نظر رکھا جائے تو گھرانہ امن و سکون اور راحت و آرام کا گہوارہ بن جاتا ہے۔ پیش نظر کتاب میں حافظ عمران ایوب لاہوری نے اولاد و والدین کے موضوع پر تفصیلاً نگارشات پیش کرتے ہوئے دونوں کے حقوق و فرائض کا بھی تذکرہ کیا ہے۔ اولاد کی طلب اور دعا سے لے کر ان کے حصول پر اظہار تشکر اور پھر ما بعد کی تمام منزلوں یعنی تسمیہ، گھٹی، عقیقہ، رضاعت، تعلیم وتربیت اور اخلاق و کردار کی آبیاری تک کے تمام مراحل کو صحیح احادیث کی روشنی میں اجاگرکیا گیا ہے۔ ہمارے معاشرے میں یتیم بچوں کو وہ حق نہیں دیا جاتا جس کے مستحق ہیں اس سلسلہ میں فاضل مصنف نے قرآن و سنت کی اہم ہدایات کو رقم کر دیا ہے۔ محترم عمران صاحب نے کتاب کو مستند حوالوں سے مزین فرمایا ہے۔ مختلف مسائل سے متعلقہ عرب و عجم کے قدیم و جدید مفتیان کے فتاوی جات بھی رقم کر دئیے گئے ہیں۔ یہ کتاب ہر شخص کے لیے لائق مطالعہ اور ہر گھر کی ضرورت ہے۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    pages-from-tijarat-ki-kitab
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    ہرمسلمان کے لیے اپنے دنیوی واخروی تمام معاملات میں شرعی احکام اور دینی تعلیمات کی پابندی از بس ضروری ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے :َیا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا ادْخُلُوا فِي السِّلْمِ كَافَّةً وَلَا تَتَّبِعُوا خُطُوَاتِ الشَّيْطَانِ إِنَّهُ لَكُمْ عَدُوٌّ مُبِينٌ(سورۃ البقرۃ:208)’’اے اہل ایمان اسلام میں پورے پورے داخل ہوجاؤ اور شیطان کے قدموں کے پیچھے مت چلو ،یقیناً وہ تمہارا کھلا دشمن ہے ‘‘۔کسی مسلمان کے لیے یہ جائز نہیں کہ وہ عبادات میں تو کتاب وسنت پر عمل پیرا ہو او رمعاملات او رمعاشرتی مسائل میں اپنی من مانی کرے او راپنے آپ کوشرعی پابندیوں سے آزاد تصور کرے۔ ہمارے دین کی وسعت وجامعیت   ہےکہ اس میں ہر طرح کے تعبدی امور اور کاروباری معاملات ومسائل کا مکمل بیان موجود ہے۔ ان میں معاشی زندگی کے مسائل او ران کے حل کو خصوصی اہمیت کے ساتھ بیان کیاگیا ہے ہر مسلمان بہ آسانی انہیں سمجھ کر ان پر عمل پیرا ہوسکتاہے ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’ تجارت کی کتاب ‘‘عصر ِحاصرکے نوجوان محقق مصنف کتب کثیرہ جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی تصنیف ہے اس کتا ب میں حلال و حرام کی پہچان کے طریقے ، خرید وفروخت کے اسلامی اصول، حلال کاروبار کے طریقے ،قرض، گروی ، دیوالیہ ، وقف ، ادھار ، امانت، ضمانت وغیرہ اس کتاب کے اہم مضامین ہیں ۔ قدیم مسائل کے ساتھ ساتھ جدید اور عصری مسائل کوبھی مناسب انداز میں بیان کیا گیا ہے ۔ اس کتاب کی اہم خوبی یہ بھی ہے کہ اس میں پہلی بار کتاب وسنت اور علماء وفقہاء کے فتاویٰ کی روشنی میں 17 ایسے اصول مقرر کردئیے ہیں گئے ہیں ۔جن کو پیش نظر رکھ کر حلال وحرام کاروبار کی بآسانی پہچان کی جاسکتی ہے۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعوام الناس کے لیے فائدہ مند بنائے اورمصنف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرماکرانہیں مزید توفیق سے نوازے (آمین) (م۔ا)

    title-pages-tajheez-w-takfeen-ka-masnoon-tarika-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    زندگی ایک سفر ہے اور انسان عالم بقا کی طرف رواں دواں ہے ۔ ہر سانس عمر کو کم اور ہر قدم انسان کی منزل کو قریب تر کر رہا ہے ۔ عقل مند مسافر اپنے کام سے فراغت کے بعد اپنے گھر کی طرف واپسی کی فکر کرتے ہیں ، وہ نہ پردیس میں دل لگاتے اور نہ ہی اپنے فرائض سے بے خبر شہر کی رنگینیوں اور بھول بھلیوں میں الجھ کر رہ جاتے ہیں ہماری اصل منزل اور ہمارا اپنا گھر جنت ہے ۔ ہمیں اللہ تعالیٰ نے ایک ذمہ داری سونپ کر ایک محدود وقت کیلئے اس سفر پر روانہ کیا ہے ۔ عقل مندی کا تقاضا تو یہی ہے کہ ہم اپنے ہی گھر واپس جائیں کیونکہ دوسروں کے گھروں میں جانے والوں کو کوئی بھی دانا نہیں کہتا۔انسان کوسونپی گئی  ذمہ داری اورانسانی زندگی کا مقصد اللہ تعالیٰ کی عبادت کرکے اللہ تعالیٰ کو راضی کرنا ہے ۔اگر آج ہی موت آجائے تو اللہ کے دربار میں پیش کرنے کیلئےہمارے پاس تو کچھ بھی نہیں درپیش سفر دراز ہے اور سامان کچھ بھی نہیں۔کیا ہم شب و روز مشاہدہ نہیں کرتے کہ موت کس طرح دوست و احباب آل و اولاد اور عزیز و اقارب کو چھین کر لے جاتی ہے ۔ جب مقررہ وقت آ جاتا ہے تو پھر موت نہ بچوں کی کم عمری ، نہ والدین کا بڑھاپا ، نہ بیوی کی جوانی اور نہ ہی کسی کی خانہ ویرانی دیکھتی ہے۔کیا ہم نہیں جانتے کہ موت سے کسی کو مفر نہیں ۔حتیٰ کہ نہ موت بچے گی نہ ملک الموت۔ارشاد باری تعالیٰ ہے: كُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْتِ وَإِنَّمَا تُوَفَّوْنَ أُجُورَكُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ فَمَنْ زُحْزِحَ عَنِ النَّارِ وَأُدْخِلَ الْجَنَّةَ فَقَدْ فَازَ وَمَا الْحَيَاةُ الدُّنْيَا إِلَّا مَتَاعُ الْغُرُور ( آل عمران : 185) ” ہر جان نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے اور تم لوگ قیامت کے دن اپنے کئے کا پورا پورا اجر پاؤ گے ۔ پس جو شخص جہنم سے بچا لیا گیا اور جنت میں پہنچا دیا گیا وہی کامیاب ہوا اور دنیا کی چند روزہ زندگی تو دھوکے کا سامان ہے‘‘۔دنیا میں انسان کو دنیا کی نسبت  موت کی زیادہ فکر کرنی چاہیے کیونکہ موت کے بعد کے مراحل تو اس سے زیادہ سخت اور آنے والے مناظر تو اس سے زیادہ ہولناک ہیں ۔ہماری زندگیوں میں   موت ایک ایسی مسلمہ حقیقت ہے  جس سے کوئی بھی انکار نہیں کر سکتا خواہ وہ مسلمان ہے یا کافر ۔ اس دنیا میں ابدی حیات محال ہے اس حقیقت کی شاہد ہر گوشۂ ارض پر موجود وہ مٹی ہے جو ہر مرنے والے کو اپنی گود میں چھپا لیتی ہے۔مسلمانوں کی اکثریت ایسی ہے کہ وہ زندگی بھررسم ورواج میں گھیرے رہتے ہیں ۔حتی کہ موت کے وقت  بھی کئی رسومات ادا کی جاتی ہیں ۔آج ہمارے معاشرے میں کسی مسلمان کی موت کے موقع پر رسوم ورواج اور بدعات کا ایک خوفناک طوفان کھڑا کردیا جاتا ہے  اور سنت رسول ﷺ کے مطابق تجہیز وتکفین کی بجائے خرافات کو ترجیح دی جاتی ہے ۔ حقیقت یہ ہےکہ بدعات کی اوٹ میں  رسول اللہ ﷺ کی سنتیں غائب ہوگئی ہیں۔ کچھ لوگ وہ ہیں کہ جن کو علم ہی نہیں جبکہ بہت سے وہ ہیں کہ جن کو آگاہ کیا جائے کہ تجہیز وتکفین کا مروجہ طریقہ رسول اللہ ﷺ سے ثابت نہیں تو وہ لڑ مرنےکو تیار ہوجاتے ہیں ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’ تجہیز وتکفین کا مسنون طریقہ ‘‘  حافظ عمران ایوب کی کاوش ہے  جس میں انہوں نے  مرض الموت سے لےکر تدفین تک کے تمام مراحل پر شریعت کی راہنمائی پیش کی ہے ۔اس پر عمل کرتے ہوئے اگر ہم اپنے مرحومین کوالوداع کریں گے توہمارا یہ  عمل اجر عظیم کا ذریعہ بن جائے گا۔(ان شاء اللہ )(م۔ا)

    title-pages-tafheem-ul-furqan
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    قرآن کریم ہی وہ واحد کتاب ہے جو تاقیامت انسانیت کے لیے ذریعہ ہدایت ہے ۔ اسی پر عمل پیرا ہو کر دنیا میں سربلند ی او ر آخرت میں نجات کا حصول ممکن ہے لہذا ضروری ہے اس کے معانی ومفاہیم کوسمجھا جائے ،اس تفہیم کے لیے درس وتدریس کا اہتمام کیا جائے او راس کی تعلیم کے مراکز قائم کئے جائیں۔ قرٖآن فہمی کے لیے ترجمہ قرآن اساس کی حیثیت رکھتا ہے ۔آج دنیاکی کم وبیش 103 زبانوں میں قرآن کریم کے مکمل تراجم شائع ہوچکے ہیں۔جن میں سے ایک اہم زبان اردو بھی ہے ۔اردو زبان میں اولین ترجمہ کرنے والے شاہ ولی اللہ محدث دہلوی ﷫ کے دو فرزند شاہ رفیع الدین ﷫اور شاہ عبد القادر﷫ ہیں اور یہ سلسلہ تاحال جاری وساری ہے ۔زیر نظر ترجمہ قرآن ''تفہیم القرآن ''حافظ عمران ایو ب لاہور ی﷾ کا ہے جوکہ اردو تراجم قرآن کے سلسلے میں ایک مفید اضافہ ہے جو مترجم کی محنت شاقہ اور علمی رسوخ کا نمونہ ہے ۔اس کی زبان سادہ اور اسلوب دل نشیں ہر عمر کے قاری کےلیے نافع اورمفید ہے ۔یہ جدید ترجمہ نہ صرف عربی متن کے قریب تر ہے بلکہ اس میں قرآن فہمی کے جملہ مصادر پیش نظر رکھتے ہوئے اسے جدید اسلوب سے ہم آہنگ کر نے کی بھر پور کوشش کی گئی ہے۔ا س میں ہر ہر لفظ کا الگ الگ ترجمہ او رپھر پور ی عبارت کا رواں ترجمہ پیش کیا گیا ہے۔اس ترجمہ سے دینی مدارس اور ترجمہ قرآن کی کلاسز کے طلباء واساتذہ بھی بھر پور استفادہ کرسکتے ہیں ۔اللہ مترجم موصوف کی تمام مساعی جمیلہ کو قبول فرمائے اور اسے تمام مسلانوں کے لیے نافع بنائے (آمین)(م۔ا)

     

    نوٹ:

    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-page-taoheed-i-shirk-k-ahkam-o-masail
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    امت مسلمہ کو شرک سے بچانےکےلیے نہ صر ف نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے شرک  کی مذمت بیان کی بلکہ ان اسباب وذرائع کابھی انسداد فرمایا جو کسی بھی طرح سے شرک کا ذریعہ بن سکتے تھے توحید کی اس قدر اہمیت اور شرک کی مذمت وروک تھام کے باوجود ہم دیکھتے ہیں کہ امت کی اکثریت شرک میں مبتلا  ہے ایک اللہ کو چھوڑ کر مصائب ومشکلات میں یارسول اللہ ،یاعلی مدد،یاغوث اعظم،امداد کن یا شیخ عبدالقادر کے نعرے ورد زبان ہیں اصحاب القبور اور فوت شدگان کو مدد کےلیے پکارا جارہا ہے مزاروں پر عرسوں او رمیلوں کا انعقاد او روہاں چراغاں کرنا ،کھانا تقسیم کرنا ،عبادت کرنا،دعائیں کرنا او رسرکاری سطح پر ان کاموں کی پذیرائی ،سب اسباب وذرائع شرک ہیں۔شرک کی درج بالا اور دیگر مروجہ صورتوں کی بنیادی سبب دین سے جہالت ہے اس کتاب میں قرآن وسنت کو مد نظر رکھتے ہوئے  توحید وشرک کی معرفت ،اقسام ،احکام او ردیگر تفصیلات کو بیان کیا گیا ہے تاکہ جس سے انسان آگاہی حاصل کرکے اللہ کا سچا موحد بندہ بن کر روز قیامت فلاح پاسکے

    title-pages-jadu-jinnat-se-bachao-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    جادو کرنا او رکالے علم کےذریعے جنات کاتعاون حاصل کر کے لوگوں کو تکالیف پہنچانا شریعتِ اسلامیہ کی رو سےمحض کبیرہ گناہ ہی نہیں بلکہ ایسا مذموم فعل ہےجو انسان کو دائرۂ اسلام سے ہی خارح کردیتا ہے اور اسے واجب القتل بنادیتا ہے ۔جادو اور جنات سے تعلق رکھنے والی بیماریوں کے علاج کےلیے کتاب وسنت کے بیان کردہ طریقوں سے ہٹ کر بے شمار لوگ شیطانی اور طلسماتی کرشموں کے ذریعے ایسے مریضوں کاعلاج کرتے نظر آتے ہیں جن کی اکثریت تو محض وہم وخیال کے زیر اثر خود کو مریض سمجھتی ہے ۔جادوکا موضوع ان اہم موضوعات میں سے ہے جن کا بحث وتحقیق اور تصنیف وتالیف کے ذریعے تعاقب کرنا علماء کےلیے ضروری ہے کیونکہ جادو عملی طور پر ہمارے معاشروں میں بھر پور انداز سے موجود ہے اور جادوگرچند روپوں کے بدلے دن رات فساد پھیلانے پر تلے ہوئے ہیں جنہیں وہ کمزور ایمان والے اور ان کینہ پرور لوگوں سے وصو ل کرتے ہیں جو اپنے مسلمان بھائیوں سے بغض رکھتے ہیں او رانہیں جادو کے عذاب میں مبتلا دیکھ کر خوشی محسوس کرتےہیں لہذا علماء کے لیے ضروری ہے کہ جادو کے خطرے او راس کے نقصانات کے متعلق لوگوں کوخبر دارکریں اور جادو کا شرعی طریقے سے علاج کریں تاکہ لوگ اس کے توڑ اور علاج کے لیے نام نہادجادوگروں عاملوں کی طرف رخ نہ کریں۔ زیر تبصرہ کتاب ’’جادو جنات سے بچاؤ کی کی کتاب‘‘ محترم ڈاکٹر حافظ عمرا ن ایوب لاہوری ﷾کی کتاب ہے ۔اس کتاب میں انہوں نے کتاب وسنت کی روشنی میں جادو جنات کی حقیقت کوثابت کرنے کے ساتھ ساتھ جادو ،آسیب زدگی اور نظر بد وغیرہ کا شرعی علاج بھی تجویز کیا ہے نیز ان مصائب سے بچاؤ کی پیشگی حفاظتی تدابیر بھی ذکر کی ہیں۔اس کتاب کی اہم خوبی یہ ہے کہ اس میں کتاب وسنت کی تعلیمات اور ائمہ سلف کے فہم سے کہیں بھی انحراف نہیں کیاگیا ۔بطور خاص امام ابن تیمیہ اور امام ابن قیم رحمہما اللہ کے تجربات سے بھی استفادہ کیا گیا ہے ۔ تمام حوالہ جات کی تخریج وتحقیق کی گئی ہے اور عام فہم اسلوب اپنایا گیا ہے تاکہ عوام وخواص یکساں استفادہ کرسکیں۔بلا شبہ یہ کتاب ہر فرد کی ضرورت ہے اور جادو جنات اور نظر بد کے علاج اور ان سے بچاؤ کےلیے بہترین ہتھیار ہے ۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعامۃ الناس کے لیے نافع اور مصنف کےلیے باعث اجر بنائے (آمین) (م۔ا) 

    pages-from-janazey-ki-kitab
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    شرعی احکام کا ایک بڑا حصہ ایسا ہے جواہل بدعت کی فتنہ انگیزموشگافیوں کی نذر ہوچکا ہے۔ لوگ ایک عمل نیکی سمجھ کر کرتے ہیں ۔ لیکن حقیقت میں وہ انہیں جہنم کی طرف لے جارہا ہوتا ہے ۔ کیونکہ وہ عمل دین کا حصہ نہیں ہوتا بلکہ دین میں خود ساختہ ایجاد کا مظہر ہوتا ہے اور فرمان نبویﷺ ہے کہ دین میں ہرنئی ایجاد کی جانے والی چیز بدعت ہے ہر بدعت گمراہی ہےاور ہر گمراہی جہنم کی آگ میں لے جائے گی۔جن مسائل میں بکثرت بدعات ایجاد کرنے کی مذموم کوشش کی گئی ہے ان میں وفات سےپہلے اور وفات کےبعد کے مسائل نہایت اہمیت کے حامل ہیں اس لیے کہ ان سے ہر درجہ کے انسان کاواسطہ پڑتا رہتا ہے خواہ امیر ہو یا غریب ،بادشاہ ہو یافقیر اور نیک ہو یا بد۔ زیر تبصرہ کتاب’’ جنازے کی کتاب ‘‘ مدارسِ اسلامیہ میں شامل نصاب معروف کتاب ’’فقہ الحدیث ‘‘کے مصنف محترم جنا ب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کے سلسلہ فقہ الحدیث کا ایک حصہ ہےاس کتاب میں انہوں نے ان تمام مسائل کو مکمل تحقیق کے ساتھ عام فہم انداز میں یو ں قلم بند کردیا کہ ہرطبقہ کےافراد اس سے مستفید ہوسکیں اور بدعات سے اپنا دامن بچاکر صحیح احادیث کی روشنی میں سنت نبوی اپنا سکیں۔ صاحب کتاب نے اس کتاب میں تقریبا وہ تمام مسائل جمع کردیئے ہیں جو وفات سےمتعلقہ ہیں ۔ مثلاً مرض، علاج، آزمائشوں پر صبر حسن خاتمہ کی علامات، غسل،کفن ،نماز جنازہ،تدفین، ایصال ثواب، زیارتِ قبور، عذاب قبر اور سماع موتیٰ وغیرہ ۔اور یہ کتاب اس حوالے سے انفرادی اہمیت کی حامل ہے کہ اس میں جنازے کی تمام بدعات کو شرعی مسائل سے جدا کر کے ذکرکیا گیا ہے۔ تمام احادیث کی تخریج وتحقیق کی گئی ہے ،ہر حدیث پر شیخ البانی ﷫ کی تحقیق درج ہے اور دلائل میں کتاب وسنت کی نصوص کےعلاوہ کبار مفتیان کے افادات بھی نقل کیے گئے ہیں۔اللہ تعالیٰ مصنف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرمائے اوراس کتاب کو عوام الناس میں میں پھیلے ہوئے رسم ورواج اور بدعات کے خاتمہ کا ذریعہ بنائے ۔ آمین(م۔ا)

    title-pages-hajj-w-umra-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    حج بیت  اللہ ارکانِ اسلام میں ایک اہم رکن  ہے بیت  اللہ کی زیارت او رفریضۂ حج کی ادائیگی  ہر صاحب ایمان کی تمنا اور آرزو ہے  ہر  صاحب استطاعت اہل ایمان کے لیے زندگی میں  ایک دفعہ فریضہ حج کی ادائیگی  فرض ہے  اور  اس  کے انکار ی  کا ایمان کامل نہیں ہے اور وہ دائرہ اسلام   سےخارج ہے  اجر وثواب کے لحاظ     سے یہ رکن  بہت زیادہ اہمیت کاحامل ہے تمام كتب حديث وفقہ  میں  اس کی  فضیلت  اور  احکام ومسائل  کے متعلق  ابو اب  قائم کیے گئے ہیں  اور  تفصیلی  مباحث موجود ہیں  ۔حدیث نبویﷺ کہ آپ  نےفرمایا  الحج المبرور لیس له جزاء إلا الجنة ’’حج مبرور کا ثواب جنت سوا کچھ اور نہیں ۔اس موضوع پر اب تک اردو و عربی  زبان میں   چھوٹی بڑی بیسیوں کتب لکھی  جاچکی ہیں ۔ زیر نظر کتاب ’’حج وعمرہ کی کتاب‘‘ محترم جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایو ب لاہوری ﷾ کی کاوش ہے۔ یہ کتاب  تفہیم کتاب وسنت سیریز کی ہی ایک کڑی ہے  جس میں صحیح احادیث کی روشنی میں حج اورعمرہ کےتمام مسائل کو انتہائی خوبصورت انداز میں با دلائل پیش کر کے  زائرین حرم کی رہنمائی کی گئی ہے۔حج وعمرہ کے فضائل ومسائل  اور حج کامسنون طریقہ کار بیان کرنے کےعلاوہ اس میں  مکہ ومدینہ کی حرمت اور  چند بدعات  حج کوبھی بیان کیا گیا  ہے۔یہ کتاب مذاہب ائمہ ، متقدمین ومتاخرین اہل علم  کےفتاویٰ اور تحقیق وتخریج پر مشتمل ہونے کی بنا پر حج کے موضوع پر لکھی گئی کتابوں میں ایک  اہم اضافہ  اور حج  وعمرہ کے مسائل  سےواقفیت حاص کرنے  والوں کے لیےیہ کتاب  بلاشبہ ایک گراں قدر علمی تحفہ ہے ۔اللہ تعالیٰ مصنف موصوف کی  تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو  قبول فرمائے اور اس کتاب کو عوام الناس کے لیے نفع بخش بنائے (آمین)  (م۔ا)

    title-pages-dajjal-aur-alamat-e-qiyamat-ki-kitab
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    کتاب وسنت میں یہ امر پوری  طرح واضح کر دیاگیا ہے کہ دنیا کی یہ موجودہ زندگی عارضی اور فانی ہے اصل اور حقیقی زندگی آخرت کی ہے،لہذا اس کی فکر کرنی چاہیے۔لیکن اس کے باوجود آج ہم دنیوی آسائشوں کی طلب میں مگن ہیں اور اپنی اخروی زندگی کو فراموش کر چکے ہیں۔زیر نظر کتاب میں بتایا گیا ہے کہ ایک دن اب آنے والا ہے جب ہمیں اسے ہر عمل کا جواب دہ ہونا پڑے گااس دن کے آنے سے پہلے تو بہ کر لینی چاہیے ۔کتاب کے مباحث تین حصوں میں منقسم ہیں:پہلے حصے میں قیامت کی چھوٹی علامات  بیان کی گئی ہیں،دوسرےحصے میں قیامت خروج دجال پر تفصیلی بحث کی گئی ہے اور تیسرے حصے میں قیامت کی بڑی بڑی اور فیصلہ کن علامات کا ذکر کیا گیا ہے ۔اس کتاب کی خصوصیت یہ ہے کہ بحث و نظر کی بنیاد  قرآن مجید اور احادیث صحیحہ پر رکھی گئی ہے۔دلائل کو مکمل حوالہ جات کے ساتھ مزین کیا گیا ہے اور احادیث کی مکمل تخریج و تحقیق کی گئی ہے۔(ط۔ا)
    pages-from-duaon-ki-kitab-mustanad-azkaar-o-wazaef-aur-duaon-ka-majmooah
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    شریعتِ اسلامیہ میں دعا کو اایک خاص مقام حاصل ہے ۔او رتمام شرائع ومذاہب میں بھی دعا کا تصور موجود رہا ہے مگر موجود شریعت میں اسے مستقل عبادت کادرجہ حاصل ہے ۔صرف دعا ہی میں ایسی قوت ہے کہ جو تقدیر کو بدل سکتی ہے ۔دعا ایک ایسی عبادت ہے جو انسا ن ہر لمحہ کرسکتا ہے اور اپنے خالق ومالق اللہ رب العزت سے اپنی حاجات پوری کرواسکتا ہے۔مگر یہ یاد رہے   انسان کی دعا اسے تب ہی فائدہ دیتی ہے جب وہ دعا کرتے وقت دعا کےآداب وشرائط کوبھی ملحوظ رکھے۔ زیر نظر کتاب فاضل نوجوان حافظ عمران ایوب لاہور ی ﷾(پی ایچ ڈی سکالر پنجاب یونیورسٹی) کی تصنیف ہے جس میں انہوں نے مختلف اوقات (صبح وشام ، طہارت ، عبادات ،معاملات ، خوشی غمی او رتنگئ حالات وغیرہ) کی دعاؤں کو نہایت عمدہ انداز میں ترتیب دیتے ہوئے دعا کے اصول وضوابط اور آداب وشرائط کو قرآن واحادیث کی روشنی میں بیان کردیا ہے ۔اور فاضل مصنف نے اس کتاب میں ایسی دعاؤں کی بھی نشاندہی کردی ہے جو معاشرے میں مشہور تو چکی ہیں مگر وہ ضعیف اور غیر ثابت روایات پر مبنی ہیں۔ محترم حافظ صاحب ماشا ء اللہ کم عمری میں کئی کتب کے مصنف مترجم ہیں اور قرآن مجید کا لفظی ومحاورہ ترجمہ بھی کرچکے ہیں دونوں ترجمے الگ الگ شائع چکے ہیں۔اللہ ان کے علم وعمل میں اضافہ فرمائے اور ان کی اس کوشش کو قبول عام عطا فرمائے اور اسے جمیع مسلمانوں کے لیے نفع بحش بنائے (آمین)(م۔ا)

    title-pages-rozon-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    اللہ تعالیٰ نے  اپنے بندوں پر رمضان المبارک کے روزے اس لیے فرض کیے ہیں کہ انہیں تقویٰ کی نعمت ودولت حاصل ہو ۔ تقویٰ یہ ہے کہ انسان اس دنیا میں اپنے رب کا بندہ اور اس کا فرماں بردار بن کررہے ۔روزے کی حقیقت سامنے رکھنے سےیہ بات ہماری محدود عقل بھی سمجھ لیتی  ہے کہ تقویٰ کے حصول کے لیے  یہ عبادت مؤثرترین تدبیر ہے ۔رمضان المبارک اسلامی سال کا  نواں مہینہ ہے  یہ مہینہ  اللہ تعالیٰ کی رحمتوں،برکتوں، کامیابیوں اور کامرانیوں کا مہینہ ہے ۔اپنی عظمتوں اور برکتوں کے  لحاظ سے  دیگر مہینوں سے   ممتاز  ہے  ۔رمضان المبارک وہی مہینہ  ہےکہ جس میں اللہ تعالیٰ کی آخری آسمانی  کتاب قرآن مجید کا نزول لوح محفوظ سے آسمان دنیا پر ہوا۔ ماہ رمضان میں  اللہ تعالی  جنت  کے دروازے کھول  دیتا ہے  او رجہنم   کے دروازے  بند کردیتا ہے  اور شیطان  کوجکڑ دیتا ہے تاکہ  وہ  اللہ کے بندے کو اس طر ح  گمراہ  نہ کرسکے  جس  طرح عام دنوں میں کرتا  ہے اور یہ ایک ایسا  مہینہ ہے  جس میں اللہ تعالی خصوصی طور پر اپنے  بندوں کی مغفرت کرتا ہے اور  سب  سے زیاد ہ  اپنے بندوں کو  جہنم  سے آزادی کا انعام  عطا کرتا ہے۔رمضان المبارک کے  روضے رکھنا اسلام کےبنیادی ارکان میں سے ہے  نبی کریم ﷺ نے ماہ رمضان اور اس میں کی  جانے والی عبادات  ( روزہ ،قیام  ، تلاوت قرآن ،صدقہ خیرات ،اعتکاف ،عبادت  لیلۃ القدر وغیرہ )کی  بڑی فضیلت بیان کی   ہے ۔روزہ کی دوسرے فرائض سے  یک گونہ فضیلت کا ندازہ اللہ تعالٰی کےاس فرمان ہوتا ہے’’ الصوم لی وانا اجزء بہ‘‘ یعنی روزہ خالص میرے  لیے  ہےاور میں خود ہی اس بدلہ دوں گا۔تاہم یہ بات یاد رہے  کہ فضائل وبرکاتِ روزہ کےحصول کےلیےمحض بھوک پیاس برداشت کرلینا ہی کافی نہیں  بلکہ شرائط ومسائل ِ روزہ کو ملحوظ رکھنا بھی ضروری ہے ۔روزہ  کے  احکام ومسائل  سے   ا گاہی  ہر روزہ دار کے لیے  ضروری ہے  ۔لیکن افسوس روزہ رکھنے والے بیشتر لوگ ان احکام ومسائل سےلا علم ہوتے ہیں،بلکہ بہت سے افراد تو ایسے بھی ہیں جو بدعات وخرافات کی آمیزش سے  یہ عظیم عمل برباد کرلینے تک پہنچ جاتے ہیں ۔   کتبِ احادیث میں ائمہ محدثین نے   کتاب الصیام  کے نام سے باقاعدہ عنوان قائم کیے  ۔ اور کئی  علماء اور اہل علم نے    رمضان المبارک  کے احکام ومسائل وفضائل کے  حوالے  سے مستقل  کتب تصنیف کی  ہیں ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’ روزو کی  کتاب‘‘  محترم جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایو ب لاہوری ﷾ کی تصنیف ہے انہوں نے محنت شاقہ سے  تقریبا وہ تمام مسائل جمع کرنے کی سعی جمیل کی ہے  حو روزے سے متعلقہ ہیں اور موصوف نے اس کتاب  میں صحیح احادیث کا انتخاب  کیا ہے او رہر حدیث کو علامہ ناصر الدین البانی  ﷫ کی تحقیق سے مزین کیا  ہے۔اور شیخ البانی کے علاوہ دیگر کبار محققین کی  تحقیق سے بھی استفادہ کیا   ہے۔ احادیث کی مکمل تخریج وتحقیق  کی گئی ہے ۔ مسائل میں ائمہ اربعہ کے  علاوہ عرب وعجم کے قدیم وجدید علماء ومفتیان اور فقہائے عظام کے فتاویٰ بھی نقل کیے گئے ہیں۔اللہ تعالیٰ مصنف موصوف کی  تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو  قبول فرمائے اور اس کتاب کو عوام الناس کے لیے نفع بخش بنائے(آمین ) (م۔ا)

    title-page-zakat-ki-kitab-2
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    زکوۃ اسلام کاایک اہم ترین رکن ہے اس کی اہمیت کا اندازہ اس امر سے لگایا جاسکتا ہے کہ نماز کے ساتھ اس کاذکر ہے 82 مرتبہ قرآن شریف میں موجود ہے اس اہمیت کے پیش نظر صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین  نے ان لوگوں کے خلاف جہاکیا تھاجنہوں نےزکوۃ دینے سے انکار کیاتھا فی زمانہ بھی بے شمار مسلمان زکوۃ نہیں دیتے یہی وجہ ہے کہ امت مسلمہ غربت سے نجات نہیں پاسکتی مزیدبرآں جولوگ زکوۃ اداکرتے ہیں وہ بھی مسائل زکوۃ سے آشنا نہیں ہونے زیرنظر کتاب میں زکوۃ کی اہمیت اور اس سے متعلقہ شرعی مسائل کوکتاب وسنت اور علماء سلف کی تشریحات کی روشنی میں اجاگر کیا گیا ہے زکوۃ سے متعلقہ جدید مسائل کا حل بھی  اس کتاب مین موجود ہے جو کہ ایک منفرد خصوصیت ہے


    title-pages-sunnat-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    سنت مراد الٰہی تک پہنچنے کا اولین ماخذ ہے اور سنت کی موافقت کسی بھی عمل کی قبولیت کے لیے بنیادی شرط ہے ۔اگر سنت کو ترک کردیاجائے تو نہ قرآن کی تفہیم ممکن ہے اور نہ ہی کسی عمل کی قبولیت ۔اسی وجہ سے کتاب اللہ میں جابجا اتباع سنت کی ترغیب دکھائی دیتی ہے ۔ سنت نبویہ کوقبول کرنےکی تاکید وتوثیق کے لیے قرآن مجید میں بے شمار قطعی دلائل موجود ہیں۔اہل سنت الجماعت کا روزِ اول سے یہ عقیدہ رہا ہے کہ رسول اللہ ﷺ کی سنت کی ایک مستقل شرعی حیثت ہے ۔اتباعِ سنت جزو ایمان ہے ۔حدیث سے انکا ر واعراض قرآن کریم سے انحراف وبُعد کازینہ اور سنت سے اغماض ولاپرواہی اور فہم قرآن سے دوری ہے ۔سنت رسول ﷺکے بغیر قرآنی احکام وتعلیمات کی تفہیم کا دعو یٰ نادانی ہے ۔ اطاعت رسول ﷺ کے بارے میں یہ بات پیش نظر رہنی چاہیے کہ رسو ل اکرم ﷺ کی اطاعت صرف آپﷺ کی زندگی تک محدود نہیں بلکہ آپﷺ کی وفات کے بعد بھی قیامت تک آنے والے تمام مسلمانوں کے لیے فرض قرار دی گئی ہے ۔گویا اطاعتِ رسول ﷺ اورایمان لازم وملزوم ہیں اطاعت ہے تو ایمان بھی ہے اطاعت نہیں تو ایمان بھی نہیں ۔ اطاعت ِ رسول ﷺ کے بارے میں قرآنی آیات واحادیث شریفہ کے مطالعہ کے بعد یہ فیصلہ کرنا مشکل نہیں کہ دین میں اتباعِ سنت کی حیثیت کسی فروعی مسئلہ کی سی نہیں بلکہ بنیادی تقاضوں میں سے ایک تقاضا ہے ۔اتباع سنت کی دعوت کو چند عبادات کے مسائل تک محدود نہیں رکھنا چاہیے بلکہ یہ دعوت ساری زندگی پر محیط ہونی چاہیے۔جس طر ح عبادات(نماز ،روزہ، حج وغیرہ) میں اتباع سنت مطلوب ہے اسی طرح اخلاق وکردار ،کاروبار، حقوق العباد اور دیگر معاملات میں بھی اتباع سنت مطلوب ہے۔اللہ تعالیٰ نے ’’ مَنْ يُطِعِ الرَّسُولَ فَقَدْ أَطَاعَ اللَّه (سورہ نساء:80) کا فرمان جاری فرماکر دونوں مصادر پر مہر حقانیت ثبت کردی ۔ لیکن پھر بھی بہت سارے لوگوں نے ان فرامین کو سمجھنے اور ان کی فرضیت کے بارے میں ابہام پیدا کرکے کو تاہ بینی کا ثبوت دیا ۔مستشرقین اور حدیث وسنت کے مخالفین نے سنت کی شرعی حیثیت کو مجروح کر کے دینِ اسلام میں جس طرح بگاڑ کی نامسعود کوشش کی گئی اسے دینِ حق کے خلاف ایک سازش ہی کہا جاسکتا ہے ۔ لیکن الحمد للہ ہر دو ر میں محدثین اور علماءکرام کی ایک جماعت اس سازش اور فتنہ کا سدباب کرنے میں کوشاں رہی اور اسلام کے مذکورہ ماخذوں کے دفاع میں ہمیشہ سینہ سپر رہی ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’سنت کی کتاب ‘‘محترم جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایو ب لاہوری ﷾ کی تصنیف ہے ۔اس کتاب میں انہوں نے سنت اور بدعت سے متعلقہ ابحاث سنت کا مفہوم، اہمیت ، تدوین ، ، رد اکارِ حدیث بدعت کی حقیقت، مروجہ بدعات کی تردید او ر دیگر متفرق مسائل تحقیقی انداز میں میں پیش کیا ہے ۔مکمل کتاب دلائل وحوالہ جات اور تخریج وتحقیق سےمزین ہے۔امید یہ کتاب سنت اور بدعت کےموضوع پر تشنگان علم کی تشفی کا بہترین ذریعہ ثابت ہوگی ۔ اللہ تعالیٰ مصنف موصوف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرمائے اور اسے سب کےلیے ذریعہ ہدایت بنائے (آمین)(م۔ا)

    100mashhoorzaeefahadees-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    اس کتاب میں ان سو (۱۰۰) مشہور ضعیف اور من گھڑت احادیث کو یکجا کرنے کی سعی کی گئی ہے، جنہیں ہمارے معاشرے کے جاہل خطباء اور واعظین اپنی تقریروں میں پُرزور انداز میں بیان کرتے ہیں اور پھر عوام جس طرح سنتے ہیں اسی طرح ان پر عمل شروع کر دیتے ہیں، جس سے بدعات کا ظہور ہوتا ہے۔ مقدمہ میں ان ضروری معلومات کو بھی جمع کر دیا گیا ہے جو ضعیف اور من گھڑت احادیث سے متعلقہ تھیں۔ یہ مقدمہ ضعیف حدیث کی تعریف،ضعیف حدیث کی اقسام، احادیث گھڑنے کے اسباب، ضعیف حدیث کو ذکر کرنے کا حکم، ضعیف حدیث کو بیان کرنے کا طریقہ، ضعیف حدیث پر عمل کا حکم، ضعیف حدیث کی بنیاد پر دورِ حاضر میں مروّج بدعات، ضعیف و موضوع احادیث سے بچنے کے متعلق رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تنبیہ، ضعیف احادیث اور بدعات پر عمل سے ہم کیسے بچیں؟: وہ کتب جن میں ضعیف اور موضوع احادیث جمع کی گڑی ہیں اور دیگر مفید معلومات پر مشتمل ہے۔

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-shaitan-se-bachao-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    قرآن مجید جو انسان کے لیے  ایک  مکمل دستور حیات ہے ۔اس میں بار بار توجہ دلائی  گئی ہے  کہ  شیطان مردود سےبچ کر رہنا ۔ یہ   تمہارا کھلا دشمن ہے  ۔ارشاد باری تعالی ’’ إِنَّ الشَّيْطَانَ لَكُمْ عَدُوٌّ فَاتَّخِذُوهُ عَدُوًّا ‘‘( یقیناًشیطان تمہارا دشمن ہے  تم اسے دشمن ہی سمجھو)لیکن شیطان انسان کو  کہیں خواہشِ نفس کو ثواب کہہ کر ادھر لگا دیتا ہے ۔کبھی  زیادہ اجر کالالچ دے کر او ر اللہ او راس کے رسول ﷺ کے احکامات کے  منافی خود ساختہ نیکیوں میں لگا دیتاہے  اور اکثر کو آخرت کی جوابدہی  سے  بے نیاز کر کے  دنیا کی رونق میں مدہوش کردیتا ہے۔شیطان سے انسان کی دشمنی آدم  کی تخلیق کےوقت سے چلی آرہی  ہے  اللہ کریم نے شیطان کوقیامت تک  کے لیے  زندگی دے کر انسانوں کے دل میں وسوسہ ڈالنے کی قوت دی ہے  اس عطا شدہ قوت  کے بل بوتے پر شیطان نے اللہ تعالی  کوچیلنج کردیا کہ وہ آدم   کے بیٹوں کو اللہ کا باغی ونافرمان  بناکر جہنم کا ایدھن بنادے گا ۔لیکن اللہ کریم  نے شیطان کو جواب دیا کہ  تو لاکھ  کوشش کر کے دیکھ لینا حو میرے مخلص بندے ہوں گے  وہ تیری پیروی نہیں کریں گے   او رتیرے دھوکے میں  نہیں آئیں گے۔ابلیس کے وار سے   محفوظ  رہنے کےلیے  علمائے اسلام اور صلحائے ملت نے کئی کتب تالیف کیں او ردعوت وتبلیغ او روعظ وارشاد کےذریعے  بھی راہنمائی فرمائی۔جیسے  مکاید الشیطان از امام ابن ابی الدنیا، تلبیس ابلیس از امام ابن جوزی،اغاثۃ  اللہفان من  مصاید الشیطان از امام ابن  قیم الجوزیہ  ﷭ اور اسی طرح اردو زبان میں مولانا مبشر حسین  لاہوری اور حافظ عمران ایوب لاہوری کی کتب بھی قابل ذکر اور لائق مطالعہ ہیں۔ زیر تبصرہ کتاب ’’ شیطان سے  بچاؤ کی کتاب‘‘عصر ِحاصرکے نوجوان محقق  مصنف کتب کثیرہ  جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی  کاوش ہے ۔ اس کتاب میں انہوں نے  نہایت تفصیل سے  شیطان کی حقیقت کوواضح کرتے ہوئے  لفظ شیطان شیطان کامادہ کیا ہے؟ ، جنات اور شیطان کے درمیان کیافرق ہے ؟ شیطان کو کیوں تخلیق کیا گیا ہے ؟اس کوقیامت تک کیوں مہلت دی گئی؟ شیطان کس طرح انسان پر حملہ آور ہوتا ہے اورکس طریقے سے وساوس میں مبتلاکرتاہے ؟ مصنف نے نہایت مدلل انداز میں سوالات کے جوابات دئیے ہیں۔ مزید برآں شیطان سے بچاؤ کےطریقوں کوبھی کتاب وسنت کی روشنی میں واضح کیا ہے ۔موجودہ گمراہی  کے دور میں شیطان کے جدید ہتھکنڈوں، ہتھیاروں اورنت نئے حملوں سےبچاؤ کے لیے  کتاب ہذا  کامطالعہ انتہائی مفید ہے۔ اللہ تعالیٰ مصنف موصوف کی  تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو  قبول فرمائےاور ان کی اس کاوش کو امت مسلمہ کےلیے نافع بنائے (آمین) (م۔ا)

    title-pages-talaak-ki-kitab
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    انسانی معاشرے  کی بنیاد اور اکائی خاندان ہے اور یہ مرد و زن کے ملاپ یعنی نکاح کے ذریعے ہی وجود میں آتا ہے۔نسل انسانی کی بقاء ،بچوں کی تربیت اور قومی تحفظ کے لیے ضروری ہے کہ میاں بیوی کا تعلق مستحکم و پائیدار ہو۔اسی لیے اسلام نے زن و شوہر کے تعلق کو ٹوٹنے سے بچانے کی ہر ممکن  کوشش کی ہے اور حتی الامکان صلح صفائی،تحمل اور عفو و درگزر کا حکم دیا ہے۔لیکن بسا اوقات حالات ایسے کشیدہ ہو جاتے ہیں کہ دونوں میں مفارقت کرائے بغیر کوئی چارہ ہی نہیں رہتا تو ان حالات میں طلاق کا ضابطہ نہایت ضروری ہو جاتا ہے ۔اسی لیے اسلام نے ،جو دین فطرت ہے،مرد کے لیے طلاق کا حق رکھا ہے۔یہاں یہ بات لائق ذکر ہے کہ اس وقت دنیا میں عیسائیوں کے مذہبی مرکز ویٹی کن سٹی کے علاوہ مالٹا اور فلپائن دوہی ملک ایسے ہیں جہاں طلاق کا حق حاصل نہیں ہے لیکن اب ایک ریفرنڈم میں مالٹا کے 72فیصد عوام نے بھی طلاق کے حق میں رائے دی ہے ۔یہ اس امر کی دلیل ہے کہ اسلامی تعلیمات واقعتاً خدا وند کریم کی جانب سے ہیں۔زیر نظر کتاب میں طلاق سے متعلقہ جملہ مسائل و احکام کو جمع کرنے کی سعی کی گئی ہے۔بطور خاص اصلاح بین الزوجین ،طلاق کی شرائط،طلاق کا مسنون طریقہ،طلاق کی اقسام،رجوع،خلع،لعان اور ظہار وغیرہ پر تفصیلی بحث کی گئی ہے۔موجودہ دور میں جب کہ اکثر لوگ طلاق کے احکام سے بالکل بے خبر ہیں،یہ کتاب انتہائی مفید ہے۔
    title-pages-taharat-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    اسلامی نظام حیات میں طہارت وپاکیزگی کے عنصر کوجس شدو مد سے اُجاگر کر نے کی کوشش کی گئی ہے اس طرح سے کسی اور مذہب میں نہیں کی گئی ۔پلیدگی ،گندگی ا ور نجاست سے حاصل کی جانے والی ایسی صفائی وستھرائی جو شرعی اصولوں کے مطابق ہو، اسے طہارت کہتے ہیں۔نجاست خواہ حقیقی ہو، جیسے پیشاب اور پاخانہ، اسے خبث کہتے ہیں یا حکمی اور معنوی ہو، جیسے دبر سے ریح (ہوا) کا خارج ہونا، اسے حدث کہتے ہیں۔ دینِ اسلام ایک پاکیزہ دین ہے اور اسلام نے اپنے ماننے والوں کو بھی طہارت اور پاکیزگی اختیار کرنے کو کہا ہے اور اس کی فضیلت و اہمیت اور وعدووعید کا خوب تذکرہ کیا ہے۔نبی ﷺنے طہارت کی فضیلت بیان کرتے ہوءے فرمایا:الطّھور شطر الایمان (صحیح مسلم 223) طہارت نصف ایمان ہے۔ایک اور حدیث میں طہارت کی فضیلت کے متعلق ہے کہ آپ ﷺنے فرمایا:’’وضو کرنے سے ہاتھ، منہ،اورپاؤں کے تمام (صغیرہ) گناہ معاف ہوجاتے ہیں‘‘۔(سنن النسائی،:103)طہارت سے غفلت برتنے کی بابت نبیﷺ سے مروی ہے: ’’ قبر میں زیادہ عذاب طہارت سے غفلت برتنے پر ہوتا ہے‘‘۔ (صحیح الترغیب و الترھیب: 152)۔مذکورہ احایث کی روشنی میں ایک مسلمان کے لیے واجب ہے کہ وہ اپنے بدن، کپڑے اور مکان کو نجاست سے پاک رکھے- اللہ تعالی نے اپنے نبی کو سب سے پہلے اسی بات کا حکم دیا تھا : ’’ اپنے لباس کو پاکیزہ رکھیے اور گندکی سے دور رہیے‘‘ (المدثر:5،4) مکان اور بالخصوص مقام عبادت کے سلسلہ میں سیدنا ابراھیم اور اسماعیل علیہما السلام کو حکم دیا گیا: " میرے گھر کو طواف کرنے والوں، اعتکاف کرنے والوں اور رکوع و سجود کرنے والوں کے لیے پاک صاف رکھیں-" (البقرۃ:125)۔اللہ تعالی اپنے طاہر اور پاکیزہ بندوں ہی سے محبت کرتا ہے۔ ارشاد باری تعالی ہے کہ: ’’بلاشبہ اللہ توبہ کرنے والوں اور پاک رہنے والوں سے محبت کرتا ہے۔‘‘ (البقرۃ: 222)، نیز اہل قباء کے متعلق فرمایا: "اس میں ایسے آدمی ہیں جو خوب پاک ہونے کو پسند کرتے ہیں اور اللہ تعالی پاک صاف رہنے والوں سے محبت فرماتا ہے‘‘۔ (التوبہ:108)۔لہذا روح کی طہارت کے لیے تزکیہ نفس کے وہ تمام طریقے جن کی تفصیل قرآن وحدیث میں ملتی ہے ان کا اپنے نفس کو پابند بنانا ضروری ہے ۔جب کہ طہارتِ جسمانی کے لیے بھی ان تمام تفصیلات سے اگاہی ضروری ہے جو ہمیں کتاب وسنت مہیا کر تی ہے۔ زیر نظر کتا ب ’’طہارت کی کتا ب ‘‘ عصر ِحاصرکے نوجوان محقق مصنف کتب کثیرہ جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی کاوش ہے۔اس کتاب میں انہوں نے پلیدگی کی تفصیل،پاکیزگی حاصل کرنے کے طریقے او ر خواتین کے مخصوص مسائل کوبیان کرنے کے علاوہ طہارت کےتقریبا وہ تمام اصول وقوانین یکجا کردئیے ہیں جو قرآن کریم اور صحیح احادیث کے میں ملتے ہیں اور جن کی آج امتِ اسلامیہ کو اشد ضرورت بھی ہے۔یہ کتاب جامعیت، عام فہم اسلوبِ تحریر او رہر مسئلے میں قدیم وجدید ائمہ ومفتیان کےفتاویٰ کےساتھ ساتھ اس کتاب کا ایک خاصہ یہ بھی ہےکہ اس میں ہر بات مدلل ہر موقف باحوالہ اور ہر آیت وحدیث مکمل تخریج وتحقیق کے ساتھ نقل کی گئی ہے۔اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعوام الناس کے لیے فائدہ مند بنائے اورمصنف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرماکرانہیں مزید توفیق سے نوازے (آمین) (م۔ا)

    pages-from-fatawa-nikaah-o-talaaq
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    اسلامی نظامِ زندگی کےامتیازات اور اس کی خصوصیات میں سے سب بڑی خصوصیت اور امتیاز اس کا خاندانی نظام ہے جس کی برکات روزِ روشن کی طرح واضح ہیں ۔ اسلامی تمدن میں نکاح کا تصور ایمان کی حفاظت کا سب سےمؤثر ذریعہ ہے جس سےصالح تمدن کی بنا استوار ہوتی ہے ۔اور نکاح دراصل میاں بیوی کے درمیان وفاداری او رمحبت کے ساتھ زندگی گزرانے کا ایک عہدو پیمان ہوتا ہے ۔ نیز نسل نو کی تربیت کی ذمہ داری بھی نکاح کے ذریعہ میاں بیوی دونوں پر عائد ہوتی ہے ۔ کتاب وسنت میں حقوق الزوجین کے مسئلے کوبڑی کاملیت اور جامعیت کے ساتھ پیش کیا گیا ہے ، میاں بیوی کے درمیان تعلقات کے تمام ضروری اور نازک معاملات کوجس شرح وبسط کے ساتھ ادلیہ شرعیہ میں واضح کیا گیا ہے اس کا مقابلہ دنیاکی کوئی تہذیب یا مذہب نہیں کرسکتا۔انسانی فطرت میں جہاں محبت اوریگانگت کے پہلو ہیں وہیں پر مغایرت اور مخاصمت کے اسباب پائے جاتے ہیں ۔ بسا اوقات ہنستےکھیلتے خاندانوں میں زوجین کے درمیان بوجوہ ناچاقی اور اختلاف کے ایسے پہلواُبھرآتے ہیں کہ بالآخر طلاق جیسے نتیجے پر منتج ہوتے ہیں اور طلاق اللہ تعالیٰ کی حلال کردہ اجازتوں میں سے سب سے مبغوض اجازت تصور ہے۔زوجین کے باہمی اختلاف کی صورت میں میاں بیوی دونوں میں سے کوئی ایک یا دونوں ہی یہ محسوس کریں کہ ان کی ازدواجی زندگی سکون وا طمینان کے ساتھ بسر نہیں ہوسکتی او رایک دوسرے سے جدائی کے بغیر کوئی چارہ نہیں تو اسلام انہیں ایسی بے سکونی وبے اطمینانی او رنفرت کی زندگی گزارنے پر مجبور نہیں کرتا بلکہ مرد کو طلاق او ر عورت کو خلع کاحق دے کرایک دوسرے سے جدائی اختیار کر لینے کی اجازت دیتا ہے ۔لیکن اس کے لیے بھی اسلام کی حدود قیود اور واضح تعلیمات موجود ہیں۔طلاق چونکہ ایک نہایت اہم اور نازک معاملہ ہے اس لیے ضروری ہے کہ پوری طرح غور وفکر کے بعد اس کا فیصلہ کیا جائے ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’فتاویٰ نکاح وطلاق‘‘ان سوالات وجوابات کا فقہی انداز میں مرتب شدہ مجموعہ ہے کہ جودنیا کےمختلف ممالک سےاہل اسلام نےازدواجی مسائل سےمتعلقہ اپنےپیش آمدہ مسائل بغرض استفسار عرب علماء کی خدمت میں خطوط کی صورت میں ارسال کیے پھر انہوں نے کتاب وسنت کی روشنی میں شفقت ومحبت بھرے اسلوب کےساتھ شرم وحیاء کی حدود میں رہتے ہوئےاورغیر جانبدارانہ موقف کی نشاندہی کرتے ہوئے ان سوالات کے جوابات دئیے۔ محترم حافظ عمران ایوب لاہوری نے ان فتاوی ٰ جات کو مختلف کتب فتاوی سے اخذ کر کے ترجمہ کیا اور اانہیں فقہی انداز میں مرتب کے اردودا ن طبقہ کے لیے شائع کیاہے۔انہوں نے اس کتاب میں ہر آیت اور حدیث کی مکمل تخریج کردی ہے تاکہ کسی بھی مسئلے کی تحقیق کے لیے اصل ماخذ تک پہنچنے میں آسانی رہے ۔تحقیق کے لیے علامہ ناصرالدین البانی ﷫ کی مؤلفات وکتب کوپیش نظر رکھا گیاہے۔ اوراردو عبارت نہایت سلیس اورعام فہم رکھنے کی کوشش کی ہے تاکہ ہرفرد بآسانی اس کتاب سے مستفید ہوسکے ۔یہ کتاب اپنے موضوع کے اعتبار سے طلبائے علومِ دینیہ اور علمائے اسلام کے ساتھ ساتھ ہر مسلمان میاں بیوی کی اہم ضرورت ہے۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعامۃ الناس کے لیے نفع بخش بنائے (آمین) (م۔ا)

    title-pages-fazail-e-quran-ki-kitab
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    قرآن کریم کےنزول کا مقصد یہ تھا کہ لوگ اس کو پڑھیں، اسے سیکھیں، اس میں غور و فکر کریں، اسے سمجھنے کی کوشش کریں اور پھر اس پر عمل کر کے دنیا و آخرت کی کامیابی حاصل کریں۔ لیکن اس کے برعکس آج کے مسلمان قرآن کے ساتھ جو سلوک کر رہے ہیں وہ محتاج وضاحت نہیں۔ زیر نظر کتاب میں محترم عمران ایوب لاہوری حفظہ اللہ نے فضائل قرآن کےساتھ ساتھ اسی فکر کو اجاگر کرنے کی کوشش کی ہے کہ قرآن صرف حصول برکت یا محض تلاوت کی کتاب نہیں بلکہ یہ کتاب ہدایت بھی ہے جس سے زندگیوں میں انقلابی تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں۔ مصنف نے کتاب میں تفصیلی مقدمہ رقم کرنے کے بعد قرآن کریم کے عمومی فضائل کا تذکرہ کیا ہے پھر صحیح احادیث کی روشنی میں قرآنی سورتوں کی فضیلت پر روشنی ڈالی ہے۔ کتاب کے دو ابواب قرآنی آیات اور کلمات کی فضیلت پر مشتمل ہیں۔ اخیر میں قرآن کریم کی تعلیم حاصل کرنے کی فضیلت اور قرآن کریم کی تعلیم دینے کی فضیلت کو بھی کتاب کا حصہ بنایا گیاہے۔ (عین۔ م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-fiqhul-islam-sharah-baloogh-ul-maram-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    کتاب اللہ اور سنت رسول ﷺدینِ اسلامی کے بنیادی مآخذ ہیں۔ احادیث رسول ﷺ کو محفوظ کرنے کے لیے کئی پہلوؤں اور اعتبارات سے اہل علم نے خدمات انجام دیں۔ تدوینِ حدیث کا آغاز عہد نبوی سے ہوا صحابہ وتابعین کے دور میں پروان چڑھا او ر ائمہ محدثین کےدور میں خوب پھلا پھولا ۔مختلف ائمہ محدثین نے احادیث کے کئی مجموعے مرتب کئے او رپھر بعدمیں اہل علم نے ان مجموعات کے اختصار اور شروح ،تحقیق وتخریج او رحواشی کا کام کیا۔او ربعض محدثین نے احوال ظروف کے مطابق مختلف عناوین کےتحت احادیث کوجمع کیا۔انہی عناوین میں سے ایک موضوع ’’احادیثِ احکام‘‘ کوجمع کرنا ہے۔اس سلسلے میں امام عبد الحق اشبیلی کی کتاب ’’احکام الکبریٰ‘‘امام عبد الغنی المقدسی کی ’’عمدۃ الاحکام ‘‘علامہ ابن دقیق العید  کی ’’الالمام فی احادیث الاحکام ‘‘او رحافظ ابن احجر عسقلانی کی ’’بلوغ المرام من الاحادیث الاحکام ‘‘ قابل ذکر ہیں۔ آخر الذکر کتاب مختصر اور ایک جامع مجموعۂ احادیث ہے۔ جس میں طہارت، نماز، روزہ، حج، زکاۃ، خرید و فروخت، جہاد و قتال غرض تمام ضروری احکام و مسائل پر احادیث کو فقہی انداز پر جمع کر دیا گیا ہے کتاب کی اہمیت وافادیت اور جامعیت کے پیش نظر کئی اہل علم نے اس کی شروحات لکھیں اور ترجمے بھی کیے ۔ شروحات میں بدر التمام،سبل السلام ،فتح العلام وغیرہ قابل ذکر ہیں۔ اردو زبان میں علامہ عبد التواب ملتانی  ،مولانا محمد سلیمان کیلانی کا ترجمہ وحاشیہ بھی اہل علم کے ہاں متعارف ہیں اور اسی طرح عصرکے معروف سیرت نگار اور نامور عالم دین مولانا صفی الرحمن مبارکپوری﷫ نے بھی نے اس کی عربی میں ا’تحاف الکرام ‘‘کے نام سے مختصر شرح لکھی اور پھر خود اس کا ترجمہ بھی کیا۔دارالسلام نےاسے طباعت کےعمدہ معیار پر شائع کیا ہے اور اسے بڑا قبول عام حاصل ہے ۔ اور شیخ الحدیث حافظ عبدالسلام بھٹوی ﷾ کی کتاب الجامع کی شرح بھی بڑی اہم ہے یہ تینوں کتب کتاب وسنت ویب سائٹ پر بھی موجود ہے۔ زیرتبصرہ کتاب ’’ فقہ الاسلام شرح بلوغ المرام ‘‘ عصر ِحاصرکے نوجوان محقق مصنف کتب کثیرہ جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی انتہائی اہم کاوش ہے ۔ موصوف نے متعددشروحاتِ بلوغ المرام سے استفادہ کرتے ہوئے بلوغ المرام کی ایک جدید اور مفید شرع تیار کی ہے ۔ اپنے اسلوب اور منہج کے لحاظ سے بلوغ المرام کی یہ شرح ایک ایسے معیار کو پیش کرتی ہے جس سے اہل علم اور مدارس کےشیوخ کے علاوہ عامۃ المسلمین بھی بخوبی استفادہ کرسکتے ہیں ۔یہ کتاب شروحاتِ بلوغ المرام میں اس لحاظ سے ایک نہایت مفید اضافہ ہے کہ اسے سلفی علماء کی تحقیقات کی روشنی میں مرتب کیا گیا ہے ۔ہر حدیث کےتحت پہلے اس کے مشکل الفاظ کی وضاحت کی گئی ہے اور پھر اس کے مسائل وفوائد پر بحث کی گئی ہے ۔ بلاشبہ یہ کتاب اپنی جامعیت ، تحقیق وتخریج کے اعلیٰ معیار اور عام فہم اسلوب کی وجہ سے جہا ں علماء و طلباء کے لیے مفید ہےوہاں عوام الناس کےلیے بھی مشعل راہ کی حثیت رکھتی ہے ۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعوام الناس کے لیے فائدہ مند بنائے اورمصنف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرماکرانہیں مزید توفیق سے نوازے (آمین) (م۔ا)

    title-page-fiqhul-hadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    ’الدرر البھیۃ‘امام شوکانی رحمہ اللہ کی فقہی مسائل پر ایک بہت ہی جامع اور درسی کتاب ہے۔ امام شوکانی متاخرین سلفیہ کے ائمہ میں شمار ہوتے ہیں اور ۲۷۸ کے قریب علمی تحقیقات اور تالیفات کے مصنف ہیں۔ امام شوکانی رحمہ اللہ کی ا س کتاب کی عربی زبان میں تو کئی ایک شروحات موجو دہیں لیکن اردو میں کوئی جامع شرح موجود نہ تھی ۔ محترم جناب حافظ عمران ایوب لاہوری صاحب نے امام شوکانی رحمہ اللہ کی اس کتاب کا ترجمہ اور ایک تفصیلی شرح ’فقہ الحدیث‘ کے نام سے دو جلدوں میں مرتب کی ہے جس میں ایک ہی مسئلہ کے بارے متفر ق فقہائ، فقہی مذاہب اور مسالک کی آراء اور ان کے دلائل کے احصاء کی کوشش کی گئی ہے۔ کتاب اس قدر جامع اور معلومات افزا ہے کہ تقابلی فقہ کے ابتدائی طالب علم اور استاذ دونوں کے لیے مفید ہے۔مصنف نے مختلف فقہی آراء کے بیان میں فقہ کی امہات الکتب سے استفادہ کرتے ہوئے موقف کو براہ راست ان کتابوں سے نقل کیا ہے جس سے اس شرحکی اہمیت اور بھی بڑھ جاتی ہے۔فقہی آراء کے دلائل میں احادیث کے بیان میں ان کی صحت وضعف کی طرف بھی اشارہ کیا گیا ہے اور اس بارے زیادہ تر علامہ البانی رحمہ اللہ کی تحقیقات پر اعتماد کیا گیا ہے۔ کتاب میں معاصر علماء اور جدید مسائل کا ٹچ بھی موجود ہے جس سے کتاب کی کشش میں کئی گنا اضافہ ہو گیا ہے۔ شیخ عاصم الحداد کی ’فقہ السنہ‘ کے بعد تقابلی فقہ(Comparitive Fiqh) پر لکھی جانے والی یہ واحد کتاب ہے جس نے بعض پہلوؤں سے ’فقہ السنہ‘ کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔کتاب کے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے کہ مولف نے اس کتاب کی تالیف میں بہت محنت اور جدوجہد کی ہے۔ اللہ تعالیٰ ان کی اس مساعی جمیلہ کو قبول فرمائے۔تقابلی فقہ کا ذوق رکھنے والوں کے لیے یہ کتاب ایک لاجواب تحفہ ہے۔حافظ عمران ایوب لاہوری صاحب کئی ایک کتابوں کے مصنف ہیں لیکن ان کی اس کتاب کے بارے واقعتا یہ کہا جا سکتا ہے کہ اگر انہوں نے اس کے علاوہ کوئی کتاب تصنیف نہ بھی کی ہوتی ہے توپھر بھی ان کے تعارف کے لیے صرف یہی کتاب کافی تھی۔

     

    title-pages-fiqhul-hadees-2
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    ’الدرر البھیۃ‘امام شوکانی رحمہ اللہ کی فقہی مسائل پر ایک بہت ہی جامع اور درسی کتاب ہے۔ امام شوکانی متاخرین سلفیہ کے ائمہ میں شمار ہوتے ہیں اور ۲۷۸ کے قریب علمی تحقیقات اور تالیفات کے مصنف ہیں۔ امام شوکانی رحمہ اللہ کی ا س کتاب کی عربی زبان میں تو کئی ایک شروحات موجو دہیں لیکن اردو میں کوئی جامع شرح موجود نہ تھی ۔ محترم جناب حافظ عمران ایوب لاہوری صاحب نے امام شوکانی رحمہ اللہ کی اس کتاب کا ترجمہ اور ایک تفصیلی شرح ’فقہ الحدیث‘ کے نام سے دو جلدوں میں مرتب کی ہے جس میں ایک ہی مسئلہ کے بارے متفر ق فقہائ، فقہی مذاہب اور مسالک کی آراء اور ان کے دلائل کے احصاء کی کوشش کی گئی ہے۔ کتاب اس قدر جامع اور معلومات افزا ہے کہ تقابلی فقہ کے ابتدائی طالب علم اور استاذ دونوں کے لیے مفید ہے۔مصنف نے مختلف فقہی آراء کے بیان میں فقہ کی امہات الکتب سے استفادہ کرتے ہوئے موقف کو براہ راست ان کتابوں سے نقل کیا ہے جس سے اس شرحکی اہمیت اور بھی بڑھ جاتی ہے۔فقہی آراء کے دلائل میں احادیث کے بیان میں ان کی صحت وضعف کی طرف بھی اشارہ کیا گیا ہے اور اس بارے زیادہ تر علامہ البانی رحمہ اللہ کی تحقیقات پر اعتماد کیا گیا ہے۔ کتاب میں معاصر علماء اور جدید مسائل کا ٹچ بھی موجود ہے جس سے کتاب کی کشش میں کئی گنا اضافہ ہو گیا ہے۔ شیخ عاصم الحداد کی ’فقہ السنہ‘ کے بعد تقابلی فقہ(Comparitive Fiqh) پر لکھی جانے والی یہ واحد کتاب ہے جس نے بعض پہلوؤں سے ’فقہ السنہ‘ کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔کتاب کے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے کہ مولف نے اس کتاب کی تالیف میں بہت محنت اور جدوجہد کی ہے۔ اللہ تعالیٰ ان کی اس مساعی جمیلہ کو قبول فرمائے۔تقابلی فقہ کا ذوق رکھنے والوں کے لیے یہ کتاب ایک لاجواب تحفہ ہے۔حافظ عمران ایوب لاہوری صاحب کئی ایک کتابوں کے مصنف ہیں لیکن ان کی اس کتاب کے بارے واقعتا یہ کہا جا سکتا ہے کہ اگر انہوں نے اس کے علاوہ کوئی کتاب تصنیف نہ بھی کی ہوتی ہے توپھر بھی ان کے تعارف کے لیے صرف یہی کتاب کافی تھی۔

     

    title-pages-libas-w-hijab-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    اسلام کا ایک اعزاز اورامتیاز یہ ہے کہ یہ ایک مکمل دین ہے ،اس میں دین ودنیا کی جامعیت بھی ہے اورزمانے اور زندگی کےہرشعبے کےلیے مکمل رہنمائی بھی۔اس کا جس طرح ایک نظام ِعبادت ہے اسی طرح ایک نظام زندگی اور دستور العمل بھی ہے ۔اس نظامِ زندگی میں سیاست ومعیشت سے لے کر تہذیب وتمدن اور معاشرت تک سارے ہی معاملات کے لیے ہدایات اور تعلیمات دی گئی ہیں لیکن المیہ یہ ہےکہ مسلمان صرف نام کےمسلمان رہ گئے ہیں ۔ اور انہوں نے اپنے تمام شعبہ ہائے زندگی سے اسلام کو نکال باہر کیا ہے اور غیروں کی نقالی اوران کی دریوزہ گری ہی کو اپنا شعار بنالیا ہےحالانکہ اسلام نے غیروں کی مشابہت اور نقالی سے سختی کےساتھ منع فرمایا ہے ۔ مگر اب نقالی کی یہ عادت اتنی پختہ ہوگئی ہے کہ اسے غلط اور گناہ سمجھنا بھی چھوڑ دیا گیا ہے۔آج جن اُمور مین اغیار کی مشابہت اختیار کی جاررہی ہے ان میں ایک مسئلہ لباس اورزیب وزینت کابھی ہے۔حالانکہ انسانی معاشرت میں لباس کی بڑی اہمیت ہے ۔ اسی سے کسی قوم یا کسی مذہب کے ماننے والوں کا تشخص قائم ہوتا ہے اور برقرار رہتاہے ۔ لیکن آج مسلمان اسلامی لباس کے بجائے کفار کے لباس کوترجیح دیتے ہیں ۔بظاہر نام مسلمانوں کا ہے لیکن وضع قطع او ررہن سہن یہود وہنودکاہے ۔حجاب ونقاب کی جگہ تنگ اور عریاں لباس نے لے لی ہے ۔ حسن وجمال اور خوبصورتی میں اضافے کےلیے ہر جائز وناجائز طریقہ اختیار کیا جارہا ہے ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’ لباس وحجاب کی کتاب ‘‘عصر ِحاصرکے نوجوان محقق مصنف کتب کثیرہ جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی کاوش ہے۔یہ کتاب لباس کے آداب واحکام پر مشتمل مختصر اور جامع ہے ۔ جس میں اسلامی لباس کی اہمیت اُجاگر کرتے ہوئے لباس اور زینت کی اشیاء میں کفار کی تقلید کی مذمت گئی ہے جائز وناجائز لباس کی تفصیل، ستروحجاب او رزینت کے مسائل بھی پیش کے گئے ہیں ۔مزید برآں آج کل جو فیشن او رخوبصورتی کے نت نئے انداز اور طریقے ایجاد ہوچکے ہیں ان کی شرعی حیثیت بھی اس کتاب کا حصہ ہے۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعوام الناس کے لیے فائدہ مند بنائے اورمصنف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرماکرانہیں مزید توفیق سے نوازے (آمین) (م۔ا)

    title-pages-namaz-ki-kitab-copy
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    نماز دین ِ اسلام کا دوسرا رکن ِ عظیم ہے جوکہ بہت زیادہ اہمیت کا حامل ہے قرآن وحدیث میں نماز کو بر وقت اور باجماعت اداکرنے کی بہت زیاد ہ تلقین کی گئی ہے نماز کی ادائیگی اور اس کی اہمیت اور فضلیت اس قد ر اہم ہے کہ سفر وحضر اور میدان ِجنگ اور بیماری میں بھی نماز ادا کرنا ضروری ہے نماز کی اہمیت وفضیلت کے متعلق بے شمار احادیث ذخیرۂ حدیث میں موجود ہیں او ر بیسیوں اہل علم نے مختلف انداز میں اس پر کتب تالیف کی ہیں نماز کی ادائیگی کا طریقہ جاننا ہر مسلمان مرد وزن کےلیے ازحد ضروری ہے کیونکہ اللہ عزوجل کے ہاں وہی نماز قابل قبول ہوگی جو رسول اللہ ﷺ کے طریقے کے مطابق ادا کی جائے گی اسی لیے آپ ﷺ نے فرمایا صلو كما رأيتموني اصلي ۔لہذا ہر مسلمان کےلیے رسول للہ ﷺ کے طریقۂ نماز کو جاننا بہت ضروری ہے ۔
    زیر تبصرہ کتاب ’’ نماز کی کتاب ‘‘عصر ِحاصرکے نوجوان محقق مصنف کتب کثیرہ جناب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی تصنیف ہے۔اس کتاب میں انہوں نے نماز کے ہرمسئلے پر بہت سےدلائل وفتاویٰ مکمل حوالہ جات کےساتھ یکجا کردئیے ہیں ۔دلائل کے لیے صحیح احادیث کاانتخاب کیا گیا ہے ۔کتاب وسنت کی نصوص کے علاوہ ائمہ اربعہ، امام امام تیمیہ، اامام ابن قیم ، حافظ ابن حجر ﷭ اور دیگر کبار فقہاء ومفتیان کے فتاویٰ بھی نقل کیے گئے ہیں۔اوراختلافی مسائل میں برحق موقف کی نشاندہی بھی کی ہے ۔نیز اس کتاب کی اہم خوبی یہ ہے کہ اس میں تمام احادیث کو علامہ ناصر الدین البانی ﷫ کی تحقیق سے مزین کرنےکےعلاوہ دیگر قدیم وجدید محققین کی تحقیقات سے بھی خوب استفادہ کی کوشش کی ہے ۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کوعوام الناس کے لیے فائدہ مند بنائے اورمصنف کی تمام تصنیفی وتحقیقی خدمات کو قبول فرماکرانہیں مزید توفیق سے نوازے (آمین) (م۔ا)

    title-page-nikah-ki-kitab
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    کتاب و سنت اور صحیح احادیث کی روشنی میں نکاح سے متعلق تقریباً تمام اسلامی معلومات اور بیشتر قدیم و جدید مسائل کو  اس کتاب میں جمع کر دیا گیا ہے۔تخریج و تحقیق اور جامعیت کا معیار اس کتاب میں بھی وہی ہے جو اسی سلسلہ سے متعلق فاضل مصنف کی دیگر کتب میں ہے۔ نیز اس نازک موضوع پر قلم اٹھاتے ہوئے بطور خاص اس بات کا اہتمام کیا گیا ہے کہ سوائے اشد ضرورت کے کسی بھی قسم کی بے حجابانہ اور بے باکانہ گفتگو سے گریز کیا جائے تاکہ ہر باپ اپنی بیٹی کو اور ہر بھائی اپنی بہن کو بلاجھجک یہ کتاب تحفتہً پیش کر سکے۔ یہ کتاب واقعی ہر لائبریری کی زینت، شادی بیاہ کے موقع کا حسین تحفہ اور ہر مسلمان گھرانے کی اہم ضرورت ہے۔

    pages-from-paanch-aham-deeni-masael
    حافظ عمران ایوب لاہوری

    اسلام مکمل ضابطہ حیات ہونے کی وجہ سےہر گوشۂ زندگی میں ہماری کامیاب رہنمائی کرتا ہے ۔ یقیناً اسلام کی صورت میں خالق کائنات نے اپنی تمام تر مخلوق کے لیےایسے سنہری اصول مرتب فرماکر نازل کیے ہیں جن پر عمل پیرا ہونے میں اللہ تعالیٰ کی خوشنودی کا حصول توہے ہی لیکن اس کے ساتھ ساتھ خود انسان کا بھی نہ صرف اخروی فائدہ ہے بلکہ دنیاوی کا کامیابی کاراز بھی پنہاں ہے ۔ یہ سب جاننے کے لیے باوجود ہر چند کہ ہمیں اسلامی تعلیمات سیکھنے کے ہزار ہا مواقع بھی میسر ہوتے ہیں لیکن ہم دوراندیشی سے کام نہیں لیتے بلکہ جزوقتی آسائش وسکون کےلیے ایسے تمام مواقع مسترد کردیتے ہیں اور جہالت وکم علمی کے باعث محض رسمی ورواجی مسلمان بن کر زمانےکی غلط روش کے مطابق ہی چلتے ہیں رہتے ہیں۔ہم دنیاوی معاملات کا تو بہت علم ہے لیکن عام دینی مسائل سے ناواقف ہیں۔ زیر تبصرہ کتاب ’’پانچ اہم دینی مسائل‘‘مدارسِ اسلامیہ میں شامل نصاب معروف کتاب ’’فقہ الحدیث‘‘ کے مصنف محترم جنا ب ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری﷾ کی تصنیف ہےجس میں انہوں نے عشرہ ذوالحجہ، عیدین ،قربانی، عقیقہ اور نومولود بچے سےمتعلقہ مسائل کا کتاب وسنت میں روشنی میں احادیث کی تحقیق وتخریج کے ساتھ تحقیقی جائزہ پیش کیا ہے۔ اللہ تعالیٰ موصوف کی اس کاوش کوقبول فرمائے اوران کےعلم وعمل میں اضافہ فرمائے (آمین)

    pages-from-jannat-ki-kunjiyaan
    عبد الہادی بن حسن وہبی

    جنت اللہ کےمحبوب بندوں کا   آخری مقام ہے اور اطاعت گزروں کےلیے   اللہ تعالیٰ کا عظیم انعام ہے ۔ یہ ایسا حسین اور خوبصورت باغ ہے جس کی مثال کوئی نہیں ۔یہ مقام مرنے کے بعد قیامت کے دن ان لوگوں کو ملے گا جنہوں نے دنیا میں ایمان لا کر نیک اور اچھے کام کیے ہیں۔ قرآن مجید نے جنت کی یہ تعریف کی ہے کہ اس میں نہریں بہتی ہوں گی، عالیشان عمارتیں ہوں گی،خدمت کے لیے حورو غلمانملیں گے، انسان کی تمام جائز خواہشیں پوری ہوں گی، اور لوگ امن اور چین سے ابدی زندگی بسر کریں گے۔نبی کریم ﷺنے فرمایا ہے کہ:’’جنت میں ایسی ایسی نعمتیں ہیں جنھیں کسی آنکھ نے دیکھا نہیں نہ کسی کان نے ان کی تعریف سنی ہے نہ ہی ان کا تصور کسی آدمی کے دل میں پیدا ہوا ہے۔‘‘(صحیح مسلم: 2825) اور ارشاد باری تعالیٰ ہے’’ابدی جنتوں میں جتنی لوگ خود بھی داخل ہوں گے اور ان کے آباؤاجداد، ان کی بیویوں اور اولادوں میں سے جو نیک ہوں گے وہ بھی ان کے ساتھ جنت میں جائیں گے، جنت کے ہر دروازے سے فرشتے اہل جنت کے پاس آئیں گے اور کہیں گے تم پر سلامتی ہو یہ جنت تمھارے صبر کا نتیجہ ہے آخرت کا گھر تمھیں مبارک ہو‘‘۔(سورۂ الرعدآیت نمبر: 23،24) حصول جنت کےلیے انسان کو کوئی بھی قیمت ادا کرنی پڑے تو اسے ادا کرکے اس کامالک ضرور بنے۔جنت کاحصول بہت آسان ہے یہ ہر اس شخص کومل سکتی ہے جو صدق نیت سے اس کےحصول کے لیے کوشش کرے ۔ اللہ تعالیٰ نے اسے اپنے بندوں کے لیے ہی بنایا ہے اور یقیناً اس نے اپنے بندوں کوہی عطا کرنی ہے۔ لیکن ضرورت صرف اس امر کی ہے کہ ہمیں کماحقہ اس کا بندہ بننا پڑےگا۔ زیر تبصرہ کتاب’’ جنت واجب کرنے والے اعمال‘‘ شیخ عبد الہادی بن حسن وھبی کی عربی کتاب کا ترجمہ ہےانہوں نے اس کتاب میں صحیح احادیث کی روشنی میں ان اعمال کا حسین انتخاب پیش کیا ہے۔جن کا التزام ہر مسلمان کےلیے جنت میں داخلہ یقینی بنا سکتاہے۔ محترم حافظ عمران ایو ب لاہوری ﷾ نے اس کتاب کو اردوقالب میں ڈھالنے کے ساتھ ساتھ اس کی تخریج اور مختصر فوائد کا   کا م بھی کیا ہے۔نیز ہرحوالہ کو علامہ ناصر الدین البانی ﷫ کی تحقیق سے مزین کیا ہے۔ اللہ تعالیٰ مصنف ومترجم کی اس کاوش کو قبول فرمائے اوراسے عامۃ المسلمین کے لیے نفع بخش بنائے۔ (آمین)

    pages-from-qisas-ul-anbiyaa
    حافظ عماد الدین ابن کثیر

    ساری امت اس بات پر متفق ہے کہ کائنات کی افضل اور بزرگ ترین ہستیاں انبیاء ﷩ ہیں ۔جن کا مقام انسانوں میں سے بلند ہے ۔اور اس کا سبب یہ ہے کہ انہیں اپنے دین کی تبلیغ کے لیے منتخب فرمایا لوگوں کی ہدایت ورہنمائی کےلیے انہیں مختلف علاقوں اورقوموں کی طرف مبعوث فرمایا۔اور انہوں نے بھی تبلیغ دین اوراشاعتِ توحید کےلیے اپنی زندگیاں وقف کردیں۔ اشاعت ِ حق کے لیے شب رروز انتھک محنت و کوشش کی اور عظیم قربانیاں پیش   کر کے پرچمِ اسلام بلند کیا ۔قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ نے جابجا ان پاکیزہ نفوس کا واقعاتی انداز میں ذکر فرمایا ہے ۔ جس کا مقصد محمد ﷺ کو سابقہ انبیاء واقوام کے حالات سے باخبر کرنا، آپ کو تسلی دینا اور لوگوں کو عبرت ونصیحت پکڑنے کی دعوت دینا ہے بہت سی احادیث میں بھی انبیاء ﷺ کےقصص وواقعات بیان کیے گئے ہیں۔انبیاء کے واقعات وقصص پر مشتمل مستقل کتب بھی موجود ہیں۔ زیر تبصرہ کتاب’’قصص الانبیاء‘‘ از امام ابن کثیر الدمشقی ﷫ انبیاء کے ایمان افروز حالات وواقعات پر مشتمل کتاب ہے ۔امام موصوف کی مایہ ناظ کتابوں میں سےایک ہے اور اپنے موضوع پر لکھی جانے والی اہم ترین کتابوں میں سے ہے۔ یہ کتاب عربی زبان میں ہے جسے اردو قالب میں ڈھالنے کی سعادت ڈاکٹر حافظ عمران ایوب لاہوری ﷾ نے کی ہے ۔موصوف نے اس کتاب کا نہایت ہی سلیس اور رواں ترجمہ پیش کیا ہے۔ اسلوب عام فہم ہے، آیات واحادیث کی مکمل تخریج وتحقیق اوراکثر مقامات سے ضعیف اورموضوع روایات کو خارج کیاہے ۔مترجم موصوف نے اس کتاب کی اصل ترتیب کوبھی درست کیا ہے ،ایک ہی واقعہ میں روایات کے تکرار کو ختم کیا ہے، قارئین کی سہولت کے لیے بہت سے مقامات پر نئے عنوانات بھی قائم کیے ہیں جو کہ امام ابن کثیر نے قائم نہیں کیے تھے ۔ او رکتاب کے آخر میں انبیاء﷩ کے واقعات سےجو نتائج وفوائد فوائد سامنے آتے ہیں ان کابھی اضافہ کردیا ہے۔مذکورہ خوبیاں کے باعث یہ کتاب اپنے موضوع پر ایک منفرد کتاب بن گئی ہے۔ اللہ تعالیٰ عوام کواس کتاب سے مستفید فرمائے (آمین) (م۔ا)

    title-pages-200-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    ایک واعظ اور خطیب کی ذمہ داری ہے کہ وہ احادیث صحیحہ کا التزام کرے اور ضعیف احادیث سےاستدلال نہ کرے۔ لیکن ہمارے ہاں تو بہت سے فرقوں کا مدار ہی ضعیف اور موضوع روایات پر ہے۔ حافظ عمران ایوب لاہوری نے مشہور ضعیف احادیث کو عوام و خواس کے سامنے کتابی شکل میں پیش کرنے کا جو سلسلہ شروع کیا ہے، یہ کتابچہ اس سلسلہ کا دوسرا حصہ ہے جس میں 200 مشہور ضعیف احادیث کی نشاندہی کی گئی ہے۔ کتاب کو مرتب کرتے ہوئے محض متن حدیث اور حوالہ نقل کرنے پر ہی اکتفا کیا گیا ہے تاکہ ضعیف احادیث کو ذہن نشین کرنا آسان رہے۔ البتہ حوالہ جات رقم کرتے ہوئے متقدم ائمہ محدثین کی مختلف کتب سے استفادہ کر کے ان کے تحقیقی اقوال بھی نقل کر دئیے ہیں تاکہ کوئی یہ نہ کہے کہ روایات کو ضعیف قرار دینا کوئی نیا کام ہے بلکہ درحقیقت یہ کام پہلے ائمہ سلف کر چکے ہیں۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-300-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    ایک واعظ اور خطیب کی ذمہ داری ہے کہ وہ احادیث صحیحہ کا التزام کرے اور ضعیف احادیث سےاستدلال نہ کرے۔ لیکن ہمارے ہاں تو بہت سے فرقوں کا مدار ہی ضعیف اور موضوع روایات پر ہے۔ حافظ عمران ایوب لاہوری نے مشہور ضعیف احادیث کو عوام و خواس کے سامنے کتابی شکل میں پیش کرنے کا جو سلسلہ شروع کیا ہے، یہ کتابچہ اس سلسلہ کا تیسرا حصہ ہے جس میں 300 مشہور ضعیف احادیث کی نشاندہی کی گئی ہے۔ کتاب کو مرتب کرتے ہوئے محض متن حدیث اور حوالہ نقل کرنے پر ہی اکتفا کیا گیا ہے تاکہ ضعیف احادیث کو ذہن نشین کرنا آسان رہے۔ البتہ حوالہ جات رقم کرتے ہوئے متقدم ائمہ محدثین کی مختلف کتب سے استفادہ کر کے ان کے تحقیقی اقوال بھی نقل کر دئیے ہیں تاکہ کوئی یہ نہ کہے کہ روایات کو ضعیف قرار دینا کوئی نیا کام ہے بلکہ درحقیقت یہ کام پہلے ائمہ سلف کر چکے ہیں۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-400-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    ایک واعظ اور خطیب کی ذمہ داری ہے کہ وہ احادیث صحیحہ کا التزام کرے اور ضعیف احادیث سےاستدلال نہ کرے۔ لیکن ہمارے ہاں تو بہت سے فرقوں کا مدار ہی ضعیف اور موضوع روایات پر ہے۔ حافظ عمران ایوب لاہوری نے مشہور ضعیف احادیث کو عوام و خواس کے سامنے کتابی شکل میں پیش کرنے کا جو سلسلہ شروع کیا ہے، یہ کتابچہ اس سلسلہ کا چوتھا حصہ ہے جس میں 400 مشہور ضعیف احادیث کی نشاندہی کی گئی ہے۔ کتاب کو مرتب کرتے ہوئے محض متن حدیث اور حوالہ نقل کرنے پر ہی اکتفا کیا گیا ہے تاکہ ضعیف احادیث کو ذہن نشین کرنا آسان رہے۔ البتہ حوالہ جات رقم کرتے ہوئے متقدم ائمہ محدثین کی مختلف کتب سے استفادہ کر کے ان کے تحقیقی اقوال بھی نقل کر دئیے ہیں تاکہ کوئی یہ نہ کہے کہ روایات کو ضعیف قرار دینا کوئی نیا کام ہے بلکہ درحقیقت یہ کام پہلے ائمہ سلف کر چکے ہیں۔(ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-500-mashhoor-zaeef-ahaadees
    حافظ عمران ایوب لاہوری
    حافظ ابن الصلاح رحمۃ اللہ علیہ  کے نزدیک مجموعہ احادیث میں سے صرف ایک حدیث ایسی ہے جس کو قولی تواتر حاصل ہے جس حدیث کا مفہوم ہے کہ جس نے نبی کریمﷺ پر جان بوجھ کر جھوٹ باندھا وہ اپنا ٹھکانہ جہنم میں بنا لے۔ فلہٰذا خطبا اور واعظین حضرات کو چاہیئےکہ وہ اللہ کے رسولﷺ کی طرف کسی بات کی نسبت کرتے وقت حد درجہ حزم و احتیاط کا مظاہرہ کریں۔ لیکن بہت سے واعظین حضرات ضعیف اور موضوع احادیث سے استنباط و استدلال کرتے ہیں اور مزے لے لے کر ان کو بیان کرتے ہیں۔ اسی کے پیش نظر حافظ عمران ایوب لاہوری نے عام فہم انداز میں ضعیف احادیث کی نشاندہی کا سلسلہ شروع کیا ہے یہ اس سلسلے کی پانچویں کتاب ہے۔ جس میں 500 ضعیف احادیث کو جمع کیا گیا ہے۔ تاکہ عوام و خواص کو ان سے آگاہی حاصل ہو۔ احادیث پر حکم کے لیے امام ابن تیمیہ، ابن قیم، ابن حجر اور شیخ البانی رحمہم اللہ وغیرہ کے کام سے مدد لی گئی ہے۔ (ع۔م)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں


    jawahir-al-iman-sharha-lu-loo-wal-marjaan
    محمد فواد عبد الباقی
    ائمہ محدثین کے ہاں مسلم ہے کہ قرآن کریم کے بعد صحیح ترین احادیث وہ ہیں جو صحیح بخاری اور صحیح مسلم دونوں میں موجود ہیں۔ اللہ تعالیٰ رحمت فرمائے علامہ محمد فواد عبدالباقی پر جنہوں نے نہایت عرق ریزی سے بخاری ومسلم کی متفقہ احادیث کو اللؤلؤ والمرجان کی صورت میں یکجا کردیا۔بعد ازاں کتاب کی اسی اہمیت کے پیش نظر سینکڑوں مدارس کے نصاب میں اسے شامل کرلیا گیا۔ لیکن چونکہ اس کتاب کی کوئی مستقل شرح نہ تھی اس لیے مدرسین وطلبائے علوم دینیہ کو بعض مقامات پر اس کے حل وتفہیم میں مشکل پیش آتی۔ اسی مشکل کے پیش نظر عصر حاضر کے معروف ریسرچ سکالر اور مؤلف و مرتب کتب کثیرہ حافظ عمران ایوب لاہوری نے اس کی شرح کا بیڑہ اٹھایا جو آج بفضل اللہ زیور طباعت سے آراستہ ہو کر آپ کے ہاتھوں میں ہے ۔موصوف نے متن اور شرح کی تمام احادیث کی تخریج کی ہے ۔شرح میں جہاں صحیحین کے علاوہ دیگر کتب کی احادیث نقل کی ہیں وہاں ان پر صحت وضعف کا حکم بھی لگایا ہے ۔تشریح کے لیے زیادہ تر فتح الباری اور شرح النووی کو ہی پیش نظر رکھا ہے ۔شرح میں طوالت سے بچتے ہوئے اختصار اور جامعیت کو ملحوظ رکھا ہے ۔ ہرحدیث کے بعد مشکل الفاظ کے معنی وفوائد بھی قلم بند کیے ہیں۔ بطور خاص ہر مقام پر تعصب سے بالاتر ہوکر کسی خاص فقہی مکتبہ فکر کے بجائے محض دین اسلام کی ہر ترجمانی کی ہے ۔یوں سرور دو عالم کے سنہری فرامین پر مشتمل قیمتی ہیرے اور جواہرات کی چمک دو چند ہوگئی ہے ، جو طلبائے علوم دینیہ اور اساتذہ کرام کے علاوہ عام لوگوں کے دلوں کو بھی نور ایمان سے منور کرنے کے لیے نہایت اہمیت وافادیت کی حامل ہے ۔ دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ اس مفید شرح کو سب کے لیے ذریعہ ہدایت بنائے ۔آمین(ع۔ر)

    نوٹ:
    محدث فورم میں اس کتاب پر تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں

    title-pages-mouta-imam-malik-urdu--takhreej-shuda--copy
    امام مالک بن انس

    مؤطا امام مالک حدیث کی ایک ابتدائی کتاب ہے ۔ جسے امام مالک بن انس ﷫نے تصنیف کیا۔ انہی کی وجہ سے مسلمانوں کا ایک طبقہ فقہ مالکی کہلاتا ہے جو اہل سنت کے ان چار مسالک میں سے ایک ہے جس کے پیروکا ر آج بھی بڑی تعداد میں موجود ہیں۔امام مالک فقہ اورحدیث میں اہل حجاز بلکہ پوری ملت اسلامیہ کے امام ہیں۔ آپ کی کتاب "الموطا" حدیث کے متداول اور معروف مجموعوں میں سب سے قدیم ترین مجموعہ ہے۔مؤطاسے پہلے بھی احادیث کے کئی مجموعے تیار ہوئے اور ان میں سے کئی ایک آج موجود بھی ہیں لیکن وہ مقبول اورمتداول نہیں ہیں۔ مؤطاکے لفظی معنی ہے، وہ راستہ جس کو لوگوں نے پےدرپے چل کر اتناہموارکردیاہو کہ بعد میں آنے والوں کے لیےاسپرچلناآسان ہوگیاہو۔ جمہور علماء نے موطاکو طبقات کتب حدیث میں طبقہ اولیٰ میں شمار کیاہے امام شافعی ﷫فرماتے ہیں’’ماعلی ظہرالارض کتاب بعد کتاب اللہ اصح من کتاب مالک‘‘کہ میں نے روئے زمین پر موطاامام مالک سے زیادہ کوئی صحیح کتاب (کتاب اللہ کے بعد)نہیں دیکھی ۔مؤطاکا ایک خاصہ یہ بھی ہے کہ امام مالک ﷫ نے اس میں صرف صحیح احادیث کو ہی نقل کرنے کی سعی جمیل فرمائی ہے ۔جیسا کہ شاہ ولی اللہ محدث دہلوی﷫ نےاس پر محدثین کا اتفاق نقل فرمایا ہے ۔اس کی اسی اہمیت کے باعث ہر دور میں اکابر امت نے اپنے اپنے حلقہ ہائے تدریس میں اس سے استفادہ کیا اورمختلف ادوار میں مختلف دول ِ اسلامیہ میں اس کی شروحات وتعلیقات بھی لکھی ہیں ۔امام ابن عبد البر کی ’’الاستذکار‘‘ مؤطا امام مالک کی ضخیم شرح ہے ۔ اور اسی طر ح اردو زبان میں علامہ وحیدالزمان ﷫ نے صحاح ستہ کی طرح اس کا بھی ترجمہ کیا طویل عرصہ سے یہی ترجمہ متداول تھا ۔ لیکن چند سال قبل محدث عصر علامہ حافظ زبیر علی زئی ﷫ حافظ عمران ایوب لاہور ی﷾ نے بھی اس ترجمہ کی تسہیل کی اور اسے تخریج کےساتھ پیش کیا۔ زیرتبصرہ ’’ مؤطا‘‘ کا ترجمہ اگرچہ علامہ وحید الزماں کا ہے لیکن اس میں حافظ عمران ایوب لاہوری ﷾نے اس ترجمہ کی تسہیل کی ہےاور حسب امکان احادیث کی مکمل تخریج کردی ہے ۔تخریج کے سلسلہ میں معیاری نمبرنگ کوملحوظ رکھاگیا ہے۔اور جہاں کہیں ضرورت تھی وہاں اس کےترجمہ وحواشی کوبھی درست کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔اس کوشش کےباعث اردو زبان میں مؤطا کا یہ نسخہ عصر حاضر میں دیگر تمام مؤطا کے نسخوں میں ممتاز نظر آتاہے۔اللہ تعالیٰ اس نسخےکو اس عمد ہ معیار پر تیار کرکے شائع کرنے والےتمام احباب کی کاوش کوقبول فرمائے اور اسے امت مسلمہ کے لیے نافع بنائے (آمین)(م۔ا)

ان صاحب کی کوئی بھی کتاب نظرثانی کی گئی موجود نہیں۔

ای میل سبسکرپشن

محدث لائبریری کی اپ ڈیٹس بذریعہ ای میل وصول کرنے کے لئے ای میل درج کر کے سبسکرائب کے بٹن پر کلک کیجئے۔

 

ایڈوانس سرچ

رجسٹرڈ اراکین

آن لائن مہمان

محدث لائبریری پر اس وقت الحمدللہ 2081 مہمان آن لائن ہیں ، لیکن کوئی رکن آن لائن نہیں ہے۔

ایڈریس

       99-جے ماڈل ٹاؤن،
     نزد کلمہ چوک،
     لاہور، 54700 پاکستان

       0092-42-35866396، 35866476، 35839404

       0092-423-5836016، 5837311

      KitaboSunnat@gmail.com

      بنک تفصیلات کے لیے یہاں کلک کریں