تاریخ ملت جلد سوم

1 1 1 1 1 1 1 1 1 1
قاضی زین العابدین سجاد میرٹھی
مفتی انتظام اللہ شہابی اکبر آبادی
ادارہ اسلامیات لاہور۔کراچی
859
21475.00 (PKR)
title-pages-tareekh-e-millat-3-copy

تاریخ  ایک  ضروری اور مفید علم  ہے  اس  سے ہم کو دنیا کی تمام نئی اور پرانی قوموں کےحالات معلوم ہوتے ہیں او رہم ان کی ترقی اورتنزلی کےاسباب سے واقف ہوجاتے ہیں ہم جان  جاتے ہیں کہ کس طرح ایک قوم عزت کےآسمان کا ستارہ  بن کر چکمی اور دوسری قوم ذلت کے میدان کی گرد بن کر منتشر ہوگئی۔اور مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ  دنیا میں مذہب اسلام کی ابتداء انسان کی پیدائش کے ساتھ  ہوئی ۔ دنیا میں جس قدر پیغمبر آئے ان  سب نے  اپنی  امت کو اسلام ہی کاپیغام سنایا۔یہ ضرور ہے کہ خدا  کایہ پیغام دنیا کے ابتدائی زمانہ میں اس وقت کی ضرورتوں ہی کے  مطابق تھا جب دنیا نے ترقی کی منزل میں قدم رکھا  اور اس کی ضرورتوں میں اضافہ ہوا تو اللہ تعالیٰ کے آخری نبی محمد عربی ﷺ اس پیغام  کو مکمل صورت میں لے کر آئے۔ عام طور پر اللہ تعالیٰ کے اس مکمل پیغام کو ہی اسلام کہا جاتاہے ۔ اس لیے  تاریخ ِاسلام سے اس گروہ کی تاریخ مراد لی جاتی ہے جس نے اللہ  تعالیٰ کے آخری پیغمبر  حضرت  محمد مصطفیٰﷺ  کے ذریعے اللہ تعالیٰ کے اس  مکمل اسلام کو قبول کیا ۔دنیا  کی اکثر قوموں کی تاریخ ، کہانیوں اور قصوں کی صورت میں  ملتی ہے  ۔ مگر اسلام کی تاریخ  میں یہ بات نہیں ہے ۔ اور مسلمانوں  نے شروع ہی سے اپنی تاریخ کو مستند طور پر لکھا  ہے اور ہر بات کا حوالہ دےدیا ہے  ۔یہی وجہ  ہے کہ دنیا کی تاریخ میں ’’ تاریخ اسلام‘‘ ایک خاص امتیاز رکھتی ہے ۔اسلام کا ماضی اس قدر شاندار ہے کہ دنیا کی کوئی ملت اس کی نظیر پیش نہیں کرسکتی ۔ تاریخ اسلام کے ایک ایک باب میں   حق پرستی، صداقت شعاری ، عدل گستری او رمعارف پروری کی ہزاروں داستانیں پنہاں ہیں ۔ مسلمان بچوں کواگر پچپن ہی سے اپنے اسلاف کےان زریں کارناموں سےواقف کرادیا جائے تووہ  اپنے لیے اور ملک وملت کےلیے  بہت  مفید ثابت ہوسکتے ہیں ۔ زیر نظر کتاب ’’تاریخ ملت ‘‘ تین جلدوں پر مشتمل  جناب مفتی  زین  العابدین سجاد میرٹھی اور مفتی انتظام اللہ شہابی اکبر آبادی  کی تصنیف ہے ۔اس کتاب میں تاریخ عالم  قبل اسلام سے لے کر مغلیہ سنطنت کے آخری تاجدار اور بہادر شاہ ظفر تک ملت اسلامیہ کی تیرہ سوسالہ مکمل تاریخ  ہے ۔ افراد او راقوام کےنشیب  وفراز اور عروج وزوال کی دستانوں پر مشتمل  مفید عام کتاب ہے  جو تاریخ  اسلام کی  بے شمار کتب  سے بے نیاز کردیتی ہے ۔ سلیس زبان عام فہم اور آسان طرزِ بیان، مدارس،سکولوں ، کالجوں اور جامعات کے استاتذہ وطلباء کےلیے یکساں فائدہ مند ہے ۔ہر اچھی لائبریری اور  پڑھے لکھے گھرانے میں رکھنے لائق ہے ۔(م۔ا)

عناوین

 

صفحہ نمبر

(8)خلافت عثمانیہ

 

19

تاریخ اتراک

 

21

ترک اور عرب

 

21

ارطغرل مورث آل عثمان

 

26

خطاب

 

27

اوصاف

 

29

وفات

 

30

امیر عثمان خان غازی بانی دولت عثمانیہ

 

30

نام

 

30

تعلیم و تربیت

 

30

وقائع

 

30

تکفور

 

31

بادشاہی

 

31

آزاد حکمرانی

 

32

انتظام حکومت

 

32

فتوحات

 

32

فتح بروصہ

 

33

وصیت

 

33

وفات

 

34

اوصاف

 

34

سادہ زندگی

 

35

آثار خیر

 

35

وسعت سلطنت

 

35

اشاعت اسلام

 

35

سلطان اور خان

 

36

نام ونسب

 

36

تعلیم وتربیت

 

36

تخت عثمانیہ

 

36

صدارت عظمیٰ

 

37

مملکت کا نظام

 

37

لباس

 

37

فوجی تنظیم

 

37

انکشاریہ

 

38

فن جنگ

 

39

پاشا

 

39

فتوحات

 

39

مسجد و مدرسہ

 

40

لنگر خانہ

 

40

قراسی

 

40

نظم مملکت

 

40

رفاہ عام

 

40

علمی ترقی

 

41

زبان ترکی

 

41

یورپ کاداخلہ

 

41

یورپ میں پہلا قدم

 

43

سلیمان پاشا

 

44

وفات

 

44

اوصاف

 

44

وسعت سلطنت

 

45

علمائے عصر

 

45

سلطان مراد اول

 

46

نام ونسب

 

46

پیدائش

 

46

تعلیم وتربیت

 

46

وزارت عظمیٰ

 

46

فتوحات تھریس

 

47

جنگ مارٹیزا

 

47

دار الحکومت

 

47

شہنشاہ بایزید کی شادی

 

48

شہر آق کی خرید

 

49

فتوحات

 

49

شاہ سرویہ کی خودسری

 

50

وفات

 

50

وسعت سلطنت

 

50

کارنامے

 

51

اصلاحات

 

51

نصرانی غدار

 

52

اوصاف

 

52

علمائے عصر

 

52

سلطان بایزید اول یلدرم

 

53

نام ونسب

 

53

امیر العسکر ۔ ولادت

 

53

وقائع ۔ تعلیم وتربیت

 

53

اناطولیہ کی بقیہ ریاستیں

 

54

محاصرہ قسطنطنیہ

 

55

فتح بلغاریہ

 

55

صلیبی جنگ

 

56

فرمان خلیفہ عباسی

 

58

فتح یونان

 

58

مغلوں کی یلغار

 

59

صاحب قرن امیر تیمور

 

60

معرکہ تیمور و بایزید

 

61

معرکہ انگورہ

 

62

بایزید کا انجام

 

64

بایزید کی موت

 

65

اوصاف بایزید

 

66

عیش وعشرت

 

66

سلطنت عثمانیہ

 

67

گیتی ستاں

 

67

تاریخ وفات

 

68

علمائے عصر

 

68

سلطان محمداول چلپی

 

69

نزاع تخت

 

69

بھائیوں کی باہمی آویزش

 

70

تخت نشینی

 

71

فتنہ پیر قلیچہ

 

72

دعویدار سلطنت

 

73

دور سلطنت

 

73

اوصاف

 

73

علمی ترقی

 

74

وفات

 

74

آثار خیر

 

74

علمائے عصر

 

74

سلطان مراد ثانی

 

75

نام و نسب

 

76

مراد اور مصطفیٰ ۔ تعلیم و تربیت

 

76

قسطنطنیہ کا محاصرہ

 

76

سالونیکا اور سرویا

 

78

واقعات ہونیا ڈسفاک

 

78

شہزادہ علاء الدین کا انتقال

 

80

شاہ ہنگری ۔ خلوت نشینی

 

80

بغاوت انکشاریہ

 

81

وفات مراد

 

81

اوصاف

 

81

معاصر علماء

 

82

سلطان محمد ثانی فاتح قسطنطنیہ

 

83

تخت نشینی ۔ نام ونسب ۔ تعلیم وتربیت

 

83

معصوم بھائی کا قتل

 

83

قلعہ کی تعمیر

 

84

فتح قسطنطنیہ

 

84

محاصرہ

 

85

فتوحات

 

87

بحری بیڑہ

 

87

وقائع

 

87

جزائر بحر روم

 

88

روڈس

 

88

وفات

 

88

وفات

 

88

اوصاف

 

88

فنون جنگ

 

89

راز داری

 

89

علمی ترقی

 

90

مدارس

 

90

نظم مملکت

 

91

آئین سلطنت

 

91

قاضی عسکر

 

92

خواجہ

 

92

مفتی

 

92

نشانچی

 

92

رئیس آفندی

 

92

دیوان

 

92

ہمصعر علماء

 

93

سلطان بایزید ثانی

 

94

تخت سلطنت

 

94

امیر پرچم کی بغاوت

 

94

فتوحات

 

95

مصر

 

95

ایران

 

95

یورپ میں فتوحات

 

96

وقائع

 

96

گوشہ نشینی

 

96

وفات

 

97

علمائے عصر

 

97

سلطان سلیم اول

 

98

بھائیوں کی نزاع

 

98

فتح مصر

 

99

یونس پاشا کا حشر

 

100

خلافت پر فائز ہونا

 

100

وفات

 

101

اوصاف

 

101

علمی ترقی

 

101

سلطان سلیمان اعظم قانونی

 

102

تخت نشینی

 

102

شام میں بغاوت

 

102

فتوحات

 

102

ہنگری کےوقائع

 

103

ویانہ پرحملہ

 

104

الجزائر

 

104

ہندوستان

 

105

جزائر بحر روم

 

106

تجارتی عہد نامہ

 

107

شارلکان

 

107

شاہ طہماسپ

 

107

وفات

 

108

اوصاف

 

108

شعراء و علمائے عصر

 

108

سلطان سلیم ثانی

 

109

خلافت

 

109

صدر اعظم

 

109

معاہدات

 

109

یمن

 

110

قبرص

 

110

ترکی بیڑا

 

110

انتقال

 

111

سلطان مراد خاں ثالث

 

112

تخت نشینی

 

112

صدر اعظم

 

112

معاہدات

 

113

مراقش

 

113

دیگر فتوحات

 

113

یورپ سےجنگ

 

114

وفات

 

114

اوصاف

 

114

اولاد

 

114

سلطان محمد ثالث

 

115

تخت نشینی

 

115

انتظام مملکت

 

115

وفات

 

116

سلطان احمد اول

 

116

تخت نشینی

 

116

صدر اعظم

 

116

شاہ عباس صفوی

 

117

ممالک مغرب

 

117

وفات

 

118

سلطان مصطفےٰ اول

 

119

سلطان عثمان خاں ثانی

 

119

فتنہ و فساد

 

120

سلطان مراد رابع

 

121

وقائع بغداد

 

121

علمائے عصر

 

122

سلطان ابراہیم خاں

 

123

فتح کریٹ

 

123

سلطان محمد رابع

 

124

کوپریلی

 

125

مقدس عہد

 

126

سلطان سلیمان ثانی

 

126

وقائع

 

127

آسٹریا

 

127

وفات

 

127

اوصاف

 

127

سلطان احمد ثانی

 

128

تخت نشینی

 

128

وقائع

 

128

وفات

 

128

سلطان مصطفیٰ ثانی

 

128

محاربات

 

128

مسئلہ شرقیہ

 

129

حسین پاشا

 

130

سلطان احمد ثالث

 

131

علمی ترقی

 

131

پیٹر اعظم

 

131

بغاوت

 

132

وقائع ایران

 

133

پہلا مطبع

 

133

سلطان محمود اول

 

134

صدر اعظم

 

134

روس اور آسٹریا

 

135

محاربات عجم

 

135

انتظا سلطنت

 

135

وقائع فرانس

 

136

سلطان عثمان ثالث

 

137

سلطان مصطفیٰ ثالث

 

138

وقائع راغب پاشا

 

138

ترکی بیڑے کی تباہی

 

138

امیر سلیم کرائی خاں کی غداری

 

139

مصر میں بغاوت

 

140

سلطان عبد الحمید اول

 

141

صلح

 

141

وقائع

 

141

فتنہ روس

 

142

روس اور آسٹریا

 

142

سلطان سلیم ثالث

 

143

اصلاحات

 

144

فوجی تنظیم

 

144

سلطان کی معزولی

 

147

سلطان مصطفیٰ رابع

 

147

زار اور نپولین کا معاہدہ

 

148

سلطان محمود ثانی

 

154

خانہ جنگی

 

154

محمد بن عبدالوہاب نجدی

 

155

حملہ مکہ معظمہ

 

156

مصری ونجدی آویزش

 

157

یونان

 

158

یونان کی آزادی

 

158

الجزائر پر فرانس کا قبضہ

 

159

سربیا

 

159

مصر کی آزادی

 

160

رفاہ عام

 

161

تعلیم کی ترقی

 

161

سلطان عبدالمجید اول

 

162

اصلاحات

 

162

وفات

 

163

آثار اعظم

 

163

صدر

 

163

سلطان عبدالعزیز

 

164

معزولی سلطان

 

166

سلطان مراد خامس

 

167

سلطان عبدالحمید ثانی

 

168

ملک کی حالت

 

168

دستور کا اعلان

 

168

جنگ پلونا

 

169

کوائف مصر

 

170

ثرقی رومیلی کی بغاوت

 

172

کریٹ

 

172

ترکوں میں سیاسی بیداری

 

173

بطل حریت مدحت پاشا

 

174

عبدالقادر الجزائری

 

177

مصطفیٰ کمال پاشا

 

177

جمعیت حریت

 

182

عثمانیہ انجمن اتحاد ترقی

 

183

دستور

 

185

دستور کی طلبی

 

186

قیام حکومت دستوریہ

 

187

اشتہار

 

187

قیام جمہوریت

 

189

معزولی سلطان

 

191

شخصیت وجمہوریت کی کشمکش

 

191

سلطان محمد خامس

 

195

کوائف طرابلس

 

195

مجاہد طرابلس امیر علی پاشا

 

196

پندرہ سالہ مجاہد طرابلس

 

197

فاطمہ بنت عبداللہ

 

198

بلقائی شورش

 

199

بلقانی باہم لڑ پڑے

 

200

جنگ عمومی

 

202

شریف مکہ کی بغاوت

 

203

سلطان عبدالوحید خاں

 

205

مصطفیٰ کمال کا کارنامہ

 

205

حزب وطنی

 

207

صدارت

 

207

خلاف مآب

 

207

بالشریکوں سے معاہدہ

 

208

مصطفیٰ کمال کابڑا کارنامہ

 

208

لوازن کانفرنس

 

209

انخلائے قسطنطنیہ

 

210

قیام جمہوریت ترکیہ

 

210

سلطان عبدالمجید خاں

 

210

خاتمہ خلافت

 

210

عہد اتاترک

 

211

صنعت وحرفت

 

211

تعلیمی ترقی

 

211

جمہوریہ ترکیہ پر نظر

 

211

عصمت پاشا

 

212

جلال بائر صدر جمہوریہ

 

213

دولت عثمانیہ کاپس منظر

 

214

دور تنزل

 

216

سیاسی بیداری

 

218

نظام مملکت

 

219

مذہب

 

223

ترکوں کا علمی عہد

 

224

ترکی خواتین

 

232

ترکوں کا نظریہ خلافت

 

232

(9)تاریخ صقلیہ

 

243

جغرافیہ صقلیہ

 

244

تقسیم ملکی اور رقبہ سطح و طول و عرض

 

244

صقلیہ کی وجہ تسمیہ

 

245

صقلیہ کی قدیم تاریخ

 

245

سیکل یعنی سکائی قوم

 

246

ایتروسکی قوم

 

247

فنیقین

 

249

یونانی

 

250

سرقوسہ کی ریاست

 

251

قرطاجنہ

 

253

جیکو کے جانشین

 

254

صقلیہ کےحالت رومیوں کے زمانے میں

 

256

رومن قوم کی ابتدائی حالت

 

256

رومیوں اور قرطاجنوں کےمحاربات

 

258

صقلیہ پر رومن قوم کا قبضہ

 

260

رومیوں کا اقوام مفتوحہ سے سلوک

 

261

صقلیہ کی حالت رومن قوم کےزمانہ میں

 

263

رومن قوم کےحلام او ران کی حالت

 

263

غلاموں کی پہلی بغاوت صقلیہ میں

 

265

غلاموں کی دوسری بغاوت

 

266

رومن سلطنت کی بربادی

 

267

عربوں کی یلغار صقلیہ پر

 

270

قاضی اسد بن فرات فاتح صقلیہ

 

279

میدان جنگ

 

280

محمد بن ابی الجواری

 

282

محمدبن عبد اللہ الاغلب

 

284

ابو الاغلب ابراہیم بن عبد اللہ

 

286

اٹلی میں خلفوں اور مفرج کی سرگرمیاں

 

288

عباس بن فضل

 

289

خفاجہ بن سفیان

 

291

محمد بن خواجہ والی صقلیہ

 

293

حسین بن رباح

 

294

جعفر بن محمد والی صقلیہ

 

295

اغلب بن محمد متغلب صقلیہ

 

296

ابو العباس بن ابراہیم اغلبی

 

299

محمد بن سرقوسی

 

303

آفری اغلبی تاجدار کا انجام

 

304

دولت اغالبہ

 

305

دولت اغالبہ افریقہ

 

307

ولاۃ صقلیہ

 

308

حسن بن احمد بن ابی الخنزیر

 

309

احمد بن زیادۃ اللہ بن قرہب

 

310

ابوسعید موسیٰ بن احمد

 

311

ابو عطاف محمد بن اشعث الازدی

 

315

ابو الغنائم حسن بن علی بن ابی الحسن کلبی

 

316

ابوالقاسم بن حسن کلبی فرماں روائے معقلیہ

 

319

جعفر بن محمد کلبی

 

321

ثقۃ الدولہ ابو الفتوح یوسف بن عبد اللہ کلبی

 

322

تائید الدولہ احمد الاکحل کلبی

 

324

صقلیہ میں طوائف الملوک

 

327

صوبوں کے حکمران

 

327

صقلیہ سےاسلامی حکومت کا خاتمہ

 

329

تاریخ نارمن

 

329

ابن العباع آخری تاجدار صقلیہ

 

331

دولت فاطمیہ پرایک نظر

 

340

خلفائے فاطمیہ

 

343

عہد کلبیہ

 

344

دار الحکومت

 

345

علماء صقلیہ

 

347

صقلیہ کادور

 

347

 

(10)سلاطین ہند

 

365

تاریخ ہند

 

366

عربوں کی آمد کے برکات

 

369

عہد فاروقی میں سندھ پر پہلی مہم

 

371

عہد علی ؓ میں سند ھ پر مہم

 

372

عہد امیر معاویہ ؓ میں سندھ پر مہم

 

372

عہد عبد الملک

 

376

عہد ولید بن عبد الملک

 

377

فاتح سندھ کی رواداری

 

385

عہد بنی عباس

 

391

حکومت ہباریہ

 

396

سومرہ قوم کی اصلیت

 

399

پایہ تخت

 

402

کاشتکاری اورباغبانی

 

405

سلاطین لنگا ملتان میں

 

406

لنگا بادشاہوں کے کارنامے

 

408

سلطان محمود غزنوی

 

411

شجرہ خاندان غزنویہ

 

412

سبکتگین

 

413

سلطان محمود

 

414

محمود کی ترکتازیاں

 

414

سلطان محمود کےحملےہندوستان پر

 

414

نظم صوبہ پنجاب

 

417

محمود کی علمی دربار

 

417

کتب خانہ

 

419

فکر سخن

 

420

سلطان محمد

 

420

سلطان مسعود

 

420

سلطان مودود

 

422

سلطان عبد الرشید

 

423

سلطان فرخ زاد

 

424

سلطان ابراہیم

 

424

سلطان ارسلان

 

424

بہرام شاہ

 

425

قلعہ ناگور پرقبضہ

 

425

غزنی کی بربادی

 

426

خسرو شاہ

 

426

ملک خسرو

 

426

آل سبکتگین کا زوال

 

427

غزنوی سلاطین کےدور میں ہندوستان میں علوم و فنون کی ترقی شعراء

 

427

علماء و محدثین و قضاۃ

 

429

مشائخ

 

430

ممتاز اعیان

 

432

قرامطہ کااستیصال

 

433

وفات

 

435

جانشین

 

432

سیرت و کردار

 

436

علماء و مشائخ

 

437

سلطان قطب الدین ایبک المعزی

 

738

اوصاف

 

439

آرام شاہ

 

441

مقبرہ سلطان

 

442

سلطان شمس الدین التمش شہنشاہ ہند

 

444

خاندانی حالات

 

444

التمش کا واقعہ زندگی

 

444

شادی

 

446

تخت و جلوس

 

446

بیعت

 

447

واقعہ سخاوت

 

450

ابتدائی زندگی کا خاتمہ

 

451

حمد ملحدین

 

451

جنگیں

 

452

خلعت عباسیہ

 

453

روحانی مدارس اور اشاعت اسلام

 

454

آداب الحرب و الشجاعت

 

455

فتوحات

 

456

پہلا دربار

 

456

نامور فضلاء و علماء

 

457

التمش کےاوصاف حمیدہ

 

457

اولاد

 

458

التمش کے پیرو مرشد

 

458

آثار التمش

 

459

قطب صاحب کی لاٹ یا مینارہ یا ماذنہ

 

460

التمش کی عبادت گزاری

 

464

خلافت

 

465

حوض شمسی

 

465

رضیہ سلطانہ

 

466

تخت نشینی

 

467

سیاست

 

468

ابن بطوطہ کا بیان

 

470

واقعہ شہادت

 

470

رضیہ کاچین

 

471

رضیہ سلطان کی معزولی کا سبب

 

472

مزار

 

473

رضیہ کا خلق

 

473

علمی مناظرے

 

474

مذہب

 

474

ملحد قرامطہ کا استیصال

 

474

احوال قرامطہ

 

475

علماء کی منزلت

 

475

مجلس قضاۃ

 

476

علمی ترقی

 

477

محکمہ احتساب

 

477

عدل و انصاف

 

478

رواداری

 

478

علمی ترقی

 

479

مجلس علماء

 

479

مقبرہ التمش

 

480

سلطان معز الدین بہرام بن التمش

 

481

علاؤ الدین مسعود شاہ

 

481

ناصر الدین محمود شاہ

 

483

مذہبیت

 

484

ناصر الدین محمود شاہ کے خاص خاص واقعات

 

485

غیاث الدین بلبن

 

487

بلبن کی ترقی

 

488

انتظام سلطنت

 

489

قیاضی و دریا دلی

 

489

عدل و پروری

 

490

محکمہ جاسوسی

 

491

فوج کی تہذیب

 

491

رحم و کرم

 

491

باغیوں کی سرکوبی

 

492

شکار کا شوق

 

492

خودداری

 

493

محمدسلطان کی تہذیب

 

494

محمد سلطان کی بیاض

 

494

بزرگوں کا احترام

 

494

علماء ومشائخ ۔ شہادت

 

495

فراست و دانائی

 

496

مغلوں کےحملہ کادفاع

 

497

باغیوں کی سرکوبی

 

497

قلعوں اور سڑکوں کی تعمیر

 

498

بنگال کی مہم

 

499

بلبن کاانتقال

 

501

معز الدین کیقباد

 

501

وزیر نظام الدین کا قتل

 

502

خاندان خلجی

 

503

جلال الدین فیروز شاہ

 

503

حلم و کرم

 

504

علم پروری

 

505

جلال کی شاعری

 

505

خونریزی سے احتراز

 

506

نرمی و آشتی پسندی

 

507

عفووکرم کی مثال

 

508

امن پسندی

 

509

سید مولا کا قتل

 

510

صفات

 

511

علاؤ الدین کی سرکشی

 

512

جلال الدین کا قتل

 

513

علاؤ الدین کی بیداری مغزی

 

514

سلطنت کی رونق

 

515

دادود ہش

 

515

تخت نشینی

 

515

عزم و ثبات

 

516

مغلوں کی شکست

 

517

مشاورت فی الامر

 

517

علاؤ الدین کی حق پسندی

 

518

محکمہ جاسوسی کا قیام

 

520

سڑکوں کی حفاظت

 

520

میخواری کا سدباب

 

520

مالگزاری کےاصول

 

521

مغلوں کا حملہ روکنے کی کے لیے تدابیر

 

521

چیزوں کا نرخ

 

523

تحقیق حالات کی کیفیت

 

526

فوج کی تنخواہ

 

526

علماء کی قدردانی

 

527

عہد علائی کی خصوصیات

 

529

افسانوں کی حقیقت

 

530

سلطان قطب الدین مبارک شاہ

 

532

علاؤ الدین خلجی

 

532

ناصر الدین خسروشاہ

 

532

تغلقیہ خاندان

 

532

غیاث الدین تغلق

 

536

سلطان محمد بن تغلق شاہ

 

541

کارخانہ جات

 

544

نائب و ارکان سلطنت

 

545

ارکان عدالت عالیہ

 

545

معمولات

 

546

اخلاقی زندگی

 

546

انتظام برید

 

547

سکہ اور اوزان

 

548

دربار

 

548

جلوس عید

 

549

فتوحات

 

549

طعام

 

550

بغاوت

 

552

نیا دار الحکومت

 

554

وفات

 

555

سلطان فیروز شاہ

 

556

اخلاقی زندگی

 

557

ترقی زراعت

 

561

آمدنی

 

561

کارخانہ جات

 

562

سکہ

 

563

انتظام آب پاشی

 

564

نئے شہروں کی بنا

 

565

نہریں

 

566

مدارس

 

567

لاٹین

 

570

دیوان خیرات

 

571

فنون کی ترویج

 

572

علماء و فضلاء

 

572

فتوحات

 

575

رحم دلی

 

576

وفات

 

577

تغلق شاہ ثانی

 

579

سید خاندان

 

585

سکہ

 

586

لودھی خاندان

 

593

سلطان سکندر بن سلطان سکندر

 

598

سلطان ابراہیم

 

612

عہد سکندر لودھی کا دور علمی

 

613

علمائے عصر

 

615

 

(11) سلاطین ہند

 

617

سلاطین کشمیر ، گجرات و دکن

 

618

بنگالہ

 

619

بنگال کادار الحکومت

 

620

گورنران بنگال

 

620

مغلوں کا اثر بنگال میں

 

622

کشمیر

 

623

سلاطین کشمیر

 

664

گجرات

 

624

شاہان گجرات

 

628

دکن کے بہمنی

 

628

عمادشاہی

 

636

برید شاہی

 

637

قطب شاہیہ

 

638

سلاطین برید شاہیہ

 

637

قطب شاہیہ

 

638

عادل شاہیہ

 

639

بابر اعظم

 

640

شجرہ خاندان مغلیہ

 

640

شاہان مغلیہ

 

641

مغلیہ خاندان

 

642

پیدائش بابر

 

643

تعلیم و تربیت

 

643

قیام آگرہ

 

656

وفات

 

659

سیرت

 

659

حلیہ

 

660

مذہب

 

660

تصانیف

 

662

بابر کے عہد کے علماء

 

663

نصیر الدین محمد ہمایوں شاہ

 

664

شیر شاہ سوری

 

665

شیر شاہ کا نظام حکومت اور اصلاحات

 

667

معمولات

 

667

ہماریوں کی دوسری تخت نشینی

 

668

ہمایوں کےعہد کی تعلیمی ترقیاں

 

669

اکبر اعظم

 

670

اکبر نام ولقب

 

670

پیدائش

 

670

تعلیم وتربیت

 

670

ابتدائی سوانحات

 

670

تخت نشینی

 

670

خود مختاری

 

671

اکبری نورتن

 

672

ابو الفیض فیضی

 

672

علامی ابو الفضل

 

672

حکیم ہمام

 

672

راجہ ٹوڈرمل

 

673

فتوحات اکبری

 

674

تسخیر دکن

 

674

وسعت سلطنت

 

675

صیغہ مال

 

675

امور سلطنت

 

676

سیرت

 

676

سیاسی تدبیر

 

677

دین الہٰی

 

677

شہزادہ سلیم کی بغاوت

 

678

اکبر کی شادی بیاہ

 

679

اولاد

 

679

اکبر کی آخری زندگی

 

679

وفات

 

680

عہد اکبر میں علمی ترقی

 

680

کتب خانہ

 

682

مکتب خانہ

 

682

ہندی کی ترقی

 

683

ابو المظفر نور الدین جہانگیر

 

684

ولادت

 

684

تعلیم وتربیت

 

684

شہزادہ سلیم کی بغاوت

 

684

تخت نشینی

 

685

کابل کی سیر

 

686

نورجہاں

 

686

کانگڑھ کی فتح

 

687

شاہ جہاں کی بغاوت

 

688

مہابت خاں کی گستاخی اور آصف خاں کے ساتھ قید ہونے کا ذکر

 

691

بیگمات

 

693

اولاد

 

693

وفات

 

693

نظام سلطنت

 

396

ابو المظفر شہاب الدین محمد شاہ جہاں

 

695

صاحبقراں ثانی

 

695

ولادت

 

695

تعلیم و تربیت

 

695

تخت نشینی

 

696

پہلا حکم

 

697

مشاغل ذاتی

 

697

مشاغل ملکی

 

697

سال دوم

 

698

تیسرے سال کے حالات

 

699

چوتھے سال کے حالات

 

700

دکن میں قحط

 

701

سفیر ایران کی آمد

 

701

دیگر فتح

 

702

ممتازمحل کی وفات

 

702

پانچویں سال کے حالات

 

702

چھٹے سال کے حالات

 

703

ساتویں سال کےحالات

 

703

آٹھویں سال کے حالات

 

704

نویں سال کے حالات

 

705

دسویں سال کے حالات

 

705

گیارہواں سال

 

705

بارہویں سال کے حالات

 

706

تیرہویں سال کےحالات

 

706

چودھویں سال کے حالات

 

706

پندرھویں سال کے حالات

 

706

سولہویں سال کے حالات

 

707

سترھویں سال کےحالات

 

707

اٹھارھویں سال کے احوال

 

708

اکیسویں سال کے واقعات

 

709

بائیسویں سال کے حالات

 

709

تئیسواں سال تا چھبیسواں سال کےحالات

 

710

ستائیسواں سال تا تیسواں سال کےحالات

 

711

اکتیسواں سال

 

713

شجرہ شاہ جہاں

 

715

تعلیمی ترقی

 

716

نومسلموں کی تعلیم کاانتظام

 

718

شہنشاہ ابو مظفر محی الدین محمد اورنگ زیب عالمگیر

 

719

عہد شہزادگی

 

720

قدر دانی علماء

 

721

مزارات پر حاضری

 

721

جنگ میں شرکت

 

722

سوانحات

 

722

اصلاحات ملکی

 

724

فرمان

 

724

معافی

 

726

وسعت سلطنت

 

726

صنعت و حرفت

 

726

معافی محصول

 

727

پیمائش

 

727

ٹیکس

 

727

مذہبی رواداری

 

727

بے تعصبی

 

727

صرف اوقات

 

728

صبح

 

728

خلوت گاہ

 

728

عدل

 

729

جھروکہ درشن

 

730

معائنہ فوج

 

730

جنگ پیلاں

 

731

دیوان عام

 

731

دیوان خاص

 

731

مراحم خسروانہ

 

732

فرمان

 

732

حرم سرا

 

732

نماز ظہر

 

732

کسب معاش

 

733

غسل خانہ

 

733

نماز مغرب

 

733

خواب گاہ

 

733

منشور عالمگیر

 

734

مؤلفین فتاویٰ

 

735

موزوں طبع

 

735

سیرت

 

736

وفات

 

737

علماء و شعراء عہد عالمگیری

 

737

مفسرین

 

737

محدثین

 

737

فقہاء

 

737

قاضی

 

737

مفتی

 

737

حکماء

 

737

مؤرخین

 

738

شعراء

 

738

علمی ترقیاں

 

738

ملا زاہدبن اسلم ہروی کا درس آگرہ میں

 

740

شیخ احمد معروف بہ ملا جیون امنیٹھوی

 

741

سید قطب الدین

 

741

سید مبارک بلگرامی

 

741

شیخ محمد افضل آلہ آبادی

 

741

شاہ عالم بہادر شاہ

 

742

تعلیم و تربیت

 

742

سیرت

 

745

بہادر شاہ

 

746

ملا نظام الدین سہالوی

 

747

تلامذہ

 

748

جہاندار شاہ

 

749

فرخ سیر

 

750

نام ونسب

 

750

تعلیم و تربیت

 

750

سوانح

 

750

بغاوت

 

752

فرخ سیر کا قتل

 

753

درس کلیم اللہ

 

754

ناصر الدین محمد شاہ

 

756

نادر شاہ

 

758

محمد شاہ کاعلمی دور

 

760

شاہ ولی اللہ کا درس و تدریس

 

762

فرنگی محل

 

763

مدرسہ شہابیہ

 

764

تلامذہ

 

766

مدرسہ قاضی مبارک دہلی

 

767

احمد شاہ بادشاہ

 

768

عالمگیر ثانی

 

772

کوائف سلطنت

 

772

مال غنیمت

 

778

مرہٹہ سردار جو بچ رہے

 

778

ابوالمظفر جلال الدین محمد شاہ عالم ثانی

 

780

نام

 

780

تعلیم وتربیت

 

780

ولی عہد

 

780

بنگالہ کا قضیہ

 

781

انگریزی اقتدار

 

782

الہ آباد کا قیام

 

785

بکسر کی جنگ

 

785

شجاع الدولہ اورانگریز

 

786

نواب ضابطہ خاں

 

787

ذوالفقار الدولہ نجف خاں ایرانی

 

789

نجف خاں کی موت

 

791

مادھو جی سندھیا

 

791

روہیلوں میں بے چینی

 

792

امراء کی کشیدگی

 

794

شاہ عالم کے اعمال کا ثمرہ

 

794

بادشاہ شاہ عالم کا نابینا ہونا

 

795

مرہٹوں کےمظالم

 

795

لارڈ ولزلی

 

796

انگریزی قبضہ

 

798

بادشاہ کی سخاوت

 

798

ریزیڈنٹ کاتقرر

 

799

مغلیہ حکومت کا آخری دور

 

800

وفات

 

801

ولی عہد

 

801

شاعری اور شاہ عالم

 

802

شاہ عالم کےعہد میں شاعری کی ترقی

 

802

تصانیف

 

802

علماء عہد اور شاہ عالم

 

804

دہلی کی شعرو شاعری کی سبھا کا اجاڑ

 

805

علمی دور

 

806

علمائے کرام

 

807

شادی

 

812

جلوس

 

813

پالیسی کی تبدیلی

 

814

وفات

 

816

اکبر شاہ کے عہد کے انگریزی عہدہ دار

 

816

مرشد اکبر ثانی

 

817

بیعت

 

817

سخاوت

 

817

مذہبی حالت

 

817

علمی دور دورہ

 

820

علمائے عہد

 

821

مشائخ

 

822

ابو ظفر بہادر شاہ

 

823

سپر شمشیر

 

824

فن شہسواری

 

824

مبصری

 

825

فیل سواری خاص

 

826

شاعری ذوق

 

828

سیاسی حالات

 

829

عالم شہزادگی

 

833

شریعت کی پابندی

 

834

پیری مریدی

 

835

اخلاقی زندگی

 

835

لطیفہ

 

836

معمولات

 

837

دربار

 

841

شاہی اعلان

 

842

وفود مجاہدین کی آمد

 

742

پہلی جنگ

 

744

فتویٰ جہاد

 

845

مورچہ بندی

 

845

ناکامیابی

 

848

بہادر شاہ کی قید

 

849

مقدمہ بغاوت

 

850

خاتم جلد سوم

 

851

 

مصنف کی مزید تصانیف

title-pages-tareekh-e-millat-1-copy
title-pages-tareekh-e-millat-2-copy
title-pages-tareekh-e-millat-3-copy

ای میل سبسکرپشن

محدث لائبریری کی اپ ڈیٹس بذریعہ ای میل وصول کرنے کے لئے ای میل درج کر کے سبسکرائب کے بٹن پر کلک کیجئے۔

 

ایڈوانس سرچ

موضوعاتی فہرست

رجسٹرڈ اراکین

آن لائن مہمان

محدث لائبریری پر اس وقت الحمدللہ 1509 مہمان آن لائن ہیں ، لیکن کوئی رکن آن لائن نہیں ہے۔

ایڈریس

       99-جے ماڈل ٹاؤن،
     نزد کلمہ چوک،
     لاہور، 54700 پاکستان

       0092-42-35866396، 35866476، 35839404

       0092-423-5836016، 5837311

      KitaboSunnat@gmail.com

      بنک تفصیلات کے لیے یہاں کلک کریں