بر صغیر میں اصول تفسیر کے مناہہج و اثرات تجزیاتی و تنقیدی مطالعہ

1 1 1 1 1 1 1 1 1 1
ڈاکٹر عبید الرحمن محسن
نشریات لاہور
634
15850.00 (PKR)
title-pages-barre-sagheer-me-usool-e-tafseer-k-manahij-w-asrat-copy

قرآن کریم اللہ کی آخری کتاب ہے،جسے اس نے دنیا کے لیےراہنما بنا کر بھیجا ہے۔اس کے کچھ الفاظ مجمل اور کچھ مطلق ہیں ،جن کی تشریح وتوضیح کے لیے نبی کریمﷺ کو منتخب فرمایا-قرآن کریم کی وضاحت وہی بیان کر سکتا ہے جس پر یہ نازل ہوا۔اس لیے صحابہ کرام کبھی بھی اپنی طرف سے قرآن کی تشریح نہ کرتے تھے،اور اگر کسی چیز کی سمجھ نہ آتی تو خاموشی اختیار کر لیتےتھے۔اللہ کے نبیﷺ نے جس طریقے اور صحابہ نے آپ کے طریقے کو اختیار کرتے ہوئے جس طریقے سے قرآن کی تشریح کی ہے اس کو علما نے تفسیر بالماثور ، اور جن لوگوں نے اپنی مرضی سے تفسیر کی اس کو تفسیر بالرائے کا نام دیا ہے۔ قرآن مجید کی تفسیر میں گمراہی کا اصلی سبب اس حقیقت کو بھول جانا ہے ۔ قرآن کے مطالب وہی درست ہیں ،جو اس کے مخاطب اول نے سمجھے اور سمجھائے ہیں۔قرآن محمدﷺ پر نازل ہوا ،اور قرآن بس وہی ہے جو محمد ﷺنے سمجھا اور سمجھایا ہے۔اس کے علاوہ جو کچھ ہے ،یا تو علمی ،روحانی نکتے ہیں ،جو قلب مومن پر القا ہوں اور یا پھر اقوال وآراء ہیں۔اٹکل پچو باتیں ہیں ،جن کے محتمل کبھی قرآنی لفظ ہوتے ہیں اور کبھی نہیں ہوتے ہیں۔ماضی قریب کے جدید مفسرین نے اپنی مرضی سےاپنے ہی اصول تفسیر قائم کر کے اپنی عقل وفکر سے اپنی تفاسیر میں بعض آیات وسور کی ایسی تفسیر پیش کی ہے جو صریحاً مفسر صحابہ کرام ، تابعین عظام ﷭ اور قرون اولیٰ کے مشہور مفسرین ائمہ کرام ﷭ کی تفاسیر مختلف ہے۔ان مفسرین میں سر سید ، حمید الدین فراہی ، امیں احسن اصلاحی ، غلام احمد پرویز ، جاوید احمد غامدی وغیرہ کے اسماء گرامی قابل ذکر ہیں ۔ زیر تبصرہ کتاب’’ برصغیر میں اصول تفسیر کے مناہج واثرات تجزیاتی وتنقیدی مطالعہ‘‘ معروف واعظ ومبلغ شیخ الحدیث مولانا یوسف راجووالوی﷫کے صاحبزادے پروفیسر ڈاکٹر عبید الرحمٰن محسن﷾(مدیر دار الحدیث ،راجووال) کا پنجاب یوینورسٹی میں ڈاکٹریٹ کے لیے پیش کیے جانے والے علمی وتحقیقی مقالہ کی کتابی صورت ہے ۔موصوف نے اس میں علم اصول تفسیر کامعنی ومفہوم ، آغاز وارتقاء ۔ منہج تفسیر بالماثور، ضرورت واہمیت، اثرات۔منہج تفسیر بالماثور کےاصول وقواعد ۔منہج تفسیر بالرائے المحمود۔ فراہی مکتب فکر کےاصول تفسیر،عقل پرست انحرافی مکتب فکر کے اصول تفسیر جیسے عنوانات قائم کر کے برصغیر کے جدید مفسرین کے قائم کردہ اصول تفسیر کا علمی وتحقیقی انداز میں خو ب تنقیدی وتجزیاتی مطالعہ پیش کیا ہے ۔اللہ تعالیٰ ڈاکٹر صاحب کی تدریسی ،دعوتی ، تحقیقی وتصنیفی خدمات کو شرف قبولیت سے نوازے ۔(آمین) (م۔ا)

عناوین

صفحہ نمبر

مقدمہ

12

مو ضوع  تحقیق کاتعارف

12

منہج  تفسیربالما ثو ر

12

منہج  تفسیربالرائی  المحمود

13

فر اہی مکتب  فکر

13

انحر ا فی نکتب  فکر (تفسیر با لر ائی المذمو م )

13

مو ضو ع تحقیق  پر   ہونے  ولا  سا بقہ  کام

14

ضر ورت  واہمیت

15

اہدا ف وز تحقیق

16

باب  اول :  علم  اصول : معنی  ومفہوم ’ آغاز وارتقا ء

17

تعارف

18

 فصل  اول : اصول تفسیر اوزر منا ہج  کا لغوی  وا صطلا  حی  مفہوم

19

اصول  کا لغوی  واصلاحی  مفہوم

20

تفسیری  کا  لغوی  واصلاحی مفہوم

24

تا ویل اور تفسیر

32

اصول تفسیر  ’ قواعد  تفسیر  اور علوم  القر آن

36

فصل ثانی : بر صغیر   میں  علم  تفسیر   کا تاریخی  جا ئزہ

41

بر صغیر میں  تفسیر  قر آ ن   کی ابتدائی  مساعی

42

لا ہور کے سب سے پہلے مفسر  قر آن

44

بر صغیر  میں اصول تفسیر کے منا ہج واثرات

 

آٹھویں صدی تا سو لہویں  صد ی کی اہم تفا سیر

45

عہد اکبری  میں علم  تفسیر

50

ستر ویں  صدی  کے  بر صغیر میں علم  تفسیر

53

شاہ  ولی اللہ  ﷭ کے بعد علم  تفسیر

53

فصل ثالث: بر صغیر کے  تفسیری  رجحانات

59

حضرت  شاہ ولی اللہ  کے نزدیک  تفسیری رجحانات

60

ڈاکٹر  محمد حسین  لالذہبی  کے نزدیک  تفسیری رجحانات  کی تقسیم

62

ڈاکٹر محمد لطفی  الصبا  غ کے  نزدیک  تفسیر ی رجحانات  کی تقسیم

64

ڈاکٹر فہد الرو می کے  نزدیک  تفسیر ی رجحانات  کی تقسیم  

65

بر صغیر  کے  تفسیر ی رجحانات  

65

اثر ی رجحان

65

کلامی  رجحان

67

منا ظراتی  رجحان

69

مسلکی رجحان

71

فقہی رجحان

76

تلا ش  نظم  کا ادبی رجحان

77

 تحر یکی  رجحان

77

مخصو ص  علمی  واصلاحی رجحان

79

لغوی رجحان

82

درسی  وفنی رجحان

82

اشا ری  رجحان

82

قر ا ءت  کا رجحان

82

جامع رجحان

83

ادبی جتماعی ر جحان

83

نعتی  رجحان

83

انحر افی نیچر  ی رجحان

84

بر صغیر  اصول  تفسیر کے مناہج وثرات

 

انحرا فی  اشتر ا کی  رجحانی

84

انحرانی  قادیانی  رجحانی

84

لا منہجی  رجحان

84

انحر افی  شیعی  ردجحان

85

اعجاز ی سا ئنسی رجحان

85

فصل رابع :بر صغیر میں  علم اصول تفسیر اور  اس کے مناہج عمومی  تعارف

86

بر صغیر  میں  علوم القرآن  اور اصول  تفسیر

87

لغات القرآن  اور بر صغیر

89

قواعد  لغتہ  القر آن

90

بر صغیر  میں علم  اصول  تفسیر

90

منا ہج  اصول  تفسیر  کی نما ئند ہ شخصیات

93

نتائج  تحقیق  باب اول

110

باب دوم : منہج  تفسیر با لماثو ر ’ ضر ور ت و اہمیت ’ اثرات

113

تعا رف

114

فصل  اول : تفسیر با لما ثور’ معنی  و مفہوم  ز ضرور  ت و اہمیت

115

تفسیر  با لما ثور  کا لغوی  مفہوم

116

اصطلا حی  تعریف

116

منہج  تفسیر  با لما ثور میں ضرو رت  و اہمیت

129

فصل ثانی  : منہج  تفسیر  با لما ثور میں حدیث کی اہمیت 

129

حدیث کے بغیر  قر آن  مجید  پر ایمان  لانا  ممکن نہیں

130

قر آن مجید  کی شر عی تشر یحات  حدیث  کے بغیر  ممکن ہی نہیں

131

غزوات  ودقا ئع پر مشتمل  آیات  کی تفسیر  حدیث  و سیرت   کے بغیر نا ممکن  ہے

132

تفسیر قر آن  نبی  ﷤  کا فر ض منصبی  ہے

134

تفسیر قرآن  نبی کے معا نی و مفاہم  بھی نبی اکرم ﷺ پر  بذریعہ  وحی نازل ہوتے ہیں

138

خو د رسو ل عر بی ﷺ  بھی  تفسیر  قر آ ن  میں  وحی خفی  کے مختا ج تھے

142

آیات  کی طرح  مفاہیم قر آن کی حفاظت  بھی اللہ  تعالی ٰ کے ذمے ہے 

143

بر صغیر  میں اصو ل  تفسیر کے منا ہج و اثرات

 

حدیث عمل  بالقرآن  کی بہتر ین  تطبیق پیش کر تی ہے

144

احادیث در حقیقت نبی ﷺ  کے  تد بر  قرآ ن  کا حاصل ہے

146

 فصل  ثالث :  تفسیر  القر آن  باقوال  الصجابتہ 

153

لفظ صحابہ  کی لغو ی  تحقیق

154

صحا بی کی اصطلاحی  تعریف

155

تفسیر  القر آن با قوال  الصحابہ  کی اہمیت  پر  با رہ  نکات

163

فصل را بع : منہج تفسیر  با لما ثور پر بعض اعترا ف  کا جا ئزہ

183

تفسیر  با لما ثور تد بر فی القر آن کے منافی ہے

184

منہج تفسیر  با لما ثور  عصر ی تقاضو ں  سے مطا بقت   نہیں  ر کھتا

185

تفسییر  القر آن  با لحدیث پر بعض  اشکالا ت  کا جا ئزہ

187

 فصل خا مس : منہج تفسیر  با لما ثور   کے  اثر ات 

196

منہج تفسیر  با لما ثور     میں ضعف کے اسباب

199

اسر ائیلی  روا یات  کے نقصانات

200

نتا ئج  تحقیق  با ب دوم

206

باب  سوم : منہج تفسیر  با لما ثور      کے اصو ل  و قو اعد  

209

تعارف

210

فصل ا ول : القر آن بالقر آ ن

211

حجیت  و عد م  حجیت  کے لحاظ سے تفسیر القرآن  با لقرآن کی اقسام

212

سے تفسیر القرآن  با لقرآن کی چند اہم صو رتیں

217

قر آنی استعمال  کے ذریعے  مفر دات  القرآن کی تشریح  کر نا

217

قر اءت  کے ذر یعے  تفسیر

219

بیا نات  قر ٖ آنیہ  کے ذریعے  مجملات  کی تو ضیح اور مبہمات  کی تعین

220

خود قر آن مجید  کی رو شنی  میں اطلا قات  قر آنیہ  کی تفسیر کر نا

223

آیات  قر آنیہ  کی روشنی  میں عمو مات  قر آنیہ  کی تخصیص

226

قر آن مجید  کی رو شنی   میں  قر آنی اصطلا حات  و مفاہم  کا تعین

227

قر آن مجید  یا  اپنے  واقعات  کی تفصیلات  پیش کرتا ہے

230

بر صغیر  میں اصو ل تفسیر  کے منا ہج  و اثرات

 

قر آن مجید اپنی  آیات  کا حوالہ  دیتا ہے

230

قرآن  مجید اپنے  اختصا رات و ایجا زات  کی تشریح  کر تا  ہے

231

فصل ثانی  : تفسیر  القرآن  با لحدیث کا با ہمی  تعلق

237

پہلی قسم  : متر ادف احادیث 

238

دو سری قسم  : شا رع قر آن  احادیث

240

تیسری قسم  : قر آن مجید  سے زائد  احکام  و مضامین  پر مشتمل  احادیث 

241

شارح قرآن  احاد یث  کی انو اع  و اقسام

242

فصل  ثالث  :  تفسیر  القر آن  با قوال  الصحابتہ  والتا بعین  کے اصو ل و قواعد

252

تفسیر  صحابہ  کی مختلف  انو اع اور ان کے احکام

253

تفسیر  القر آن  با  قو ال  ا لتا بعین

263

 فصل  را بع :  تفسیر  القر آ ن  با لغتہ  العربتہ  کے اصو ل  و قو اعد

268

کثیر الا ستعمال  افصح  معا نی  مر اد لینا 

269

لغوی  معانی  بنیادی  طو ر پر صحابہ  اور تا بعین  سے حا صل کیے جا ئیں  گے

270

تفسیر صحابہ و تابعین   کے مخا لف  لغو ی  تفسیر مر د ود ہو گی

272

تفسیر  قر آن  عر ب  امیین  کے ہاں معر وف معانی  و اسا لیب  کے مطا بق ہو گی

272

تفسیر   قرآ ن  میں شر عی  معنی  کو مقدم رکھا جائے  گا

275

فصل خا مس : دیگر  ما خذ  سے استفادہ  کے اصو ل  و قواعد

276

تفسیر با لقرآن  با لر ائی

277

فہم  قر آن  میں عقل و اجتہاد  کی ضرو رت  واہمیت

279

تفسیر  با لر ائے  کے  بارے  متضاد اقوال  اور ان کی تو جیہ

286

اسباب النزو ل

290

اسباب النزو ل کی معر فت کیوں ضروری  ہے

291

اسباب  النزول  کی تر بیتی  اہمیت

294

اسر ائیلیات

298

فصل سادس : بر صغیر  میں  تفسیر با لماثو ر کے اصو لوں  کی اتباع

301

شاہ ولی اللہ اور مسلمہ  اصو ل تفسیر 

302

بر صغیر میں اصول  تفسیر کے منا ہج  و اثرات

 

نو اب  صدیق حسن  خان  او رخیر  القر ون  کے اصول و تفسیر

306

حضرت مولنا اشر ف  علی تھانوی  اور خیر  القرون  کے اصول  تفسیر 

306

سید امیر علی  ملیح  آبادی  ور خیر  القرو ن   کے اصول  تفسیر

307

مو لنا  ادریس کا ند ھلوی  اور مو لنا محمد  کا ند ھلوی  کے نزدیک    مسلمہ  اصول  تفسیر 

301

حضرت  محد ث رو پڑ ی  اور مسلمہ  اصو ل تفسیر 

312

حضرت  محد ث  رو پڑ ی  اور مسلمہ اصو ل تفسیر

312

تفسیر صحابہ  کرام

316

نتا ئج  تحقیق  باب سو م

319

باب چہارم :  منہج تفیبر  با لرائی  المحمو د

323

تعا رف

324

فصل  اول : تعا ر ف

326

را ئے  کا لغوی  و اصطلاحی  مفہوم

326

تفسیر  بالر ائی کا جکم  شر عی  اور  اقسام

327

تفسیر  با لر ائی  المحمو د  کی ضرورت  و اہمیت

328

فصل  ثانی :  تعا رف

333

تفسیر با لر ائے  میں حزم  و احتیاط

334

تفسیر بالر  ائی کی شروط اور مفسر  کی اہلیت

336

فصل ثالث : تفسیر بالر  ائی  میں اخطاء و انحرافات کے  اسباب 

342

نا اہلیت

342

قر آن محید کۃ اپنے  نظریات  کے تا بع کر نا

342

معا صر افکار سے مر عو بیت

347

فصل را بع : تعا رف

350

تفسیر بالر ائی المحمود  کی  نما ئند ہ  تفا سیر

351

تفسیر  تر جمان  القر آن  ، مولنا  ابو اکلام  آزاد

353

تفسیر  تفہیم  القر آ ن مو لنا سید  ابو الاعلی مودودی 

363

نتا ئج تحقیق باب چہا رم

 

بر صغیر اصول  التفسیر کے منا ہج و ثرات

 

باب  پنجم  : فر اہی  مکتب  فکر  کے اصو ل تفسیر

397

تعارف

398

فصل اول نظم قر آن  ، تعارف وتا ریخی پس منظر

399

فصل  اول : نظم  قر آن  ، تعا رف و تا  ریخی پس منظر 

399

علم  المنا سبات  لغوی معنی  ، اصطلاحی تعر یف

400

ضر ورت  واہمیت  اور مختلف  نقطہ  ہا ئے  نظر

400

مخا لفین نظم کے دلا ئل 

405

قا ئلین  نظم قر آن

405

ابتد ائی  تین  صد یوں میں  نظم قر آن کا تصور 

407

چوتھی صد ی ہجری  میں تصور  نظم

409

پا نچویں  صدی  ہحری

410

چٹھی صد ی ہحری

411

ساتویں صد ی ہحری 

412

 آٹھو یں صد ی ہحری

414

نو یں صد ی ہحری 

415

دسویں صد ی ہحری 

417

نظم  قر آن  کے بارے میں علما ء بر صغیر  کا نقطہ نظر

419

فصل ثانی : فر اہمی  مکتب  فکر  کا  تصور  نظم  اور اصو ل  تفسیر

424

بنیادی  اصو ل

426

 ترجیح  کے اصو ل

427

اصو ل  کا ذبہ

428

علامہ  فر اہمی کے نزدیک  تفسیر  کے خبر ی  ما خذ

431

 مو لنا  امین احسن  اصلاحی  اور فر اہمی  اصو لوں  کی تنقیح

432

فر اہمی  مکتب  فکر  اور نظام   القر آن کی اہمیت

433

 فصل  ثا لث :  فراہمی  مکتب  فکر  کا تجزیاتی   مطا لعہ

440

 نظم  قر آن  ظن و تخمین  پر  مبنی  ہے

441

نظام  القرآن  تفسیر  با لر ائی کی ایک قسم ہے

443

بر صغیر  میں اصو ل  تفسیر  کے مناہج  و اثرات

 

نظام القر آن  کشفی  نو عیت  کا علم  ہے

443

قا ئلین  نظم  کے اختلا فات

443

فر اہمی  واصلاحی  کے تفسیر  ی اختلافات

444

فصل  رابع:فراہمی  مکتب  فکر  کے اثرات

459

فر  ا ہمی  مکتب  فکر کے تفسیری  تفر دات پر اثر ات

460

فر  ا ہمی  مکتب  فکر کے اسلامی  علو م و فنون  پر اثر ات

476

فر اہمی  مکتب  فکر  کے تحقیقی و تعلیمی  اثر ات

470

 نتا ئج تحقیق  باب  پنجم

486

باب ششم  پر ست  انحر افی  مکتب  فکر   کے اصو ل تفسیر ( تفیسر بالر ائی المذموم)

489

تعارف

490

فصل  اول : تعارف

491

انحرافی  مکتب  فکر ، معنی و مفہو م

492

انحرافی  مکتب  فکر  کا تا ریخی  پس منظر 

492

قدیم  فر قہ  معتزلہ

494

معتزلہ کے نزدیک  بنیادی  اصو ل تفسیر

496

جدید  معتزلہ   کے ظہو ر  اور اس کا تا ریخی  پس منظر

496

انحر افی  مکتب  کا پہلا  دور   سرسید  احمد  خان

504

انحرافی  مکتب  فکر کا دو سرا  ادوار  غلا م  احمد  پر ویز

505

فصل ثانی :  تعا رف

511

سر سید کا مقصد  تفسیر

512

سر سید کے اصول  تفسیر  اور ا ن کا جا ئزہ

515

انحرافی  مکتب  فکر  کے بنیادی  اصول

537

سا ئنس  او رتفسیر قر آن

537

مؤید ین

537

معا ر ضین

537

معتد ل را ئے

538

بر صفیر میں اصو ل تفسیر کے منا ہج  و ا ثرات

 

سا ئنسی  تفسیر  کی شروط

539

سر سید کی سا ئنسی تفسیرات پر مو لنا  تقی عثمانی  کا تبصرہ

541

عقل  اور اس کا د ا ئرہ کار

544

وجدان   حواس  عقل  وحی  ابو الکلام  آزاد کی ےر ائے

546

عقل اور تفسیر با لما ثور میں تعا رض کی اصل  حقیقت

549

 عقل اور ما ورائے  عقل

551

فصل  ثالث:  غلام  احمد پر ویز  کے اصول  تفسیر

552

پر ویز ی  اصو ل   تفسیر کا پس  منظر

553

عقل  کا تفو ق  اور بر تر ی

553

نظر یہ ار تقاء

553

نظام  ر بو بیت

554

مر کز ملت کا تصو ر

555

مغر بی  تہذیب  سے مر عو بیت

556

انکار  حدیث

556

پر ویز کے اصول  تفسیر  اور ان کا جا ئزہ

557

فصل رابع : انحرافی  مکتب  فکر  کے   اثرات 

570

علم تفسیر پر اثرات

571

حدیث  و سنت  کو تعیین  معنی  میں  نظر  اندا ز کر نا

582

عقا ئد  اسلام پر اثرات

587

ار کان اسلام  پر اثرات

605

نتا ئج  تحقیق  باب  ششم

609

خلاصہ  بحث  و نتا ئج  تحقیق

611

مصادر ومراجع

617

مصنف کی مزید تصانیف

title-pages-barre-sagheer-me-usool-e-tafseer-k-manahij-w-asrat-copy
title-pages-tafseer-quran-k-usool-w-qawaid-copy

ای میل سبسکرپشن

محدث لائبریری کی اپ ڈیٹس بذریعہ ای میل وصول کرنے کے لئے ای میل درج کر کے سبسکرائب کے بٹن پر کلک کیجئے۔

 

ایڈوانس سرچ

موضوعاتی فہرست

رجسٹرڈ اراکین

آن لائن مہمان

محدث لائبریری پر اس وقت الحمدللہ 1915 مہمان آن لائن ہیں ، لیکن کوئی رکن آن لائن نہیں ہے۔

ایڈریس

       99-جے ماڈل ٹاؤن،
     نزد کلمہ چوک،
     لاہور، 54700 پاکستان

       0092-42-35866396، 35866476، 35839404

       0092-423-5836016، 5837311

      KitaboSunnat@gmail.com

      بنک تفصیلات کے لیے یہاں کلک کریں